غدیرِ خم۔۔۔۔۔۔ محمد علی جعفری

غدیرِ خم
کہ
تیرے خم پہ،
جانِ
این و آں قُرباں!
یہ دل قُرباں,
مشام ِجاں,
ظروفِ  تشنہ لب قُرباں،
شبابِ خضر و
مُلکِ جم،
عجم کا ثم،
ابلتا دم،
متاعِ خسروی قُرباں،
فریدون و جم و یزداں،
تیرا مرہون ہے انساں،
دیا مجذوب کو نرواں،
تو گوتم ہے برائے ما،

غدیرِ خم،
تیرا پالان کا منبر
ز بہتر تخت نوشیرواں،
عطا،
بے زر کو نخلستاں،
فلک ہے شاداں و فرحاں،
ہوا   بَلِّغ سے بالا تر،
کُھلا تیری سخا کا در،
جگر پیدا ,نظر پیدا،
نظر میں سوز ِدل پنہاں،
غدیر ِ خم،
کہ تیرے خم پہ،
جانِ  این و آں،
قُرباں۔۔۔۔۔۔۔۔

محمد علی
محمد علی
علم کو خونِ رگِِِ جاں بنانا چاہتاہوں اور آسمان اوڑھ کے سوتا ہوں ماسٹرز کر رہا ہوں قانون میں اور خونچکاں خامہ فرسا ہوں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *