چالاک۔۔۔۔مظہر حسین سید

SHOPPING
SHOPPING

ارشاد  خان  صغریٰ ہسپتال کے  برآمدے  میں بے صبری سے ٹہل رہا تھا ۔  بچے کی پیدائش کے بعد آج اس کی بیوی نے ڈسچارج ہونا تھا ۔ اور ضروری کاغذی  کاروائی ہو رہی تھی ۔  ہسپتال کا آخری بل ادا کرتے ہوئے اُسے اندازہ ہوا کہ  بیوی کے آپریشن پر اُس کے  50 ہزار  سے زائد اُٹھ گئے تھے ۔ یہ تو اس کی خوش قسمتی تھی کہ ان دنوں اُس کے پاس ایک پرائیویٹ اسکول بنانے کا ٹھیکہ تھا   اور اُس کا مالک تعمیراتی کام سے قطعاََ نابلد تھا۔

اسی کا فائدہ اُٹھاتے ہوئے  اُس نے انتہائی چالاکی سے  کافی ساری رقم اینٹھ لی تھی  ۔ اس کے  باوجود بھی وہ بمشکل ہی تمام اخراجات برداشت کر پایا تھا ۔ وہ انھیں سوچوں میں گم تھا کہ نرس نے اُسے چھٹی ہونے کی نوید سنا دی ۔

اُن کے جاتے ہی نرس ڈاکٹر نگہت کے کمرے میں داخل ہوئی  اور پوچھا ۔

ڈاکٹر صاحبہ  ! کیا اس  پیشنٹ کا آپریشن ضروری تھا  ؟

جب کہ اس سے پہلے اس کا ایک بچہ بغیر آپریشن کے ہو چکا ہے ۔

ڈاکٹر نگہت ہنس پڑیں   ، تم ابھی نئی آئی ہو  آہستہ آہستہ  سب سمجھ جاؤ گی ۔

بھئی آپریشن کے بغیر یہ لوگ  اتنے پیسے کہاں دیتے ہیں  اور پھر  مجھے ان دنوں پیسوں کی سخت ضرورت ہے ۔  آج بھی  مزمل  کے پرنسپل کا فون آیا تھا   ۔ وہ کہہ رہے تھے کہ  مزمل کی سال کی فیس  اکٹھی جمع کرا نی ہے   ۔ اصل میں اُن کے نئے سکول کی تعمیر جاری ہے اس کے لیے انھیں پیسے چاہییں ۔

SHOPPING

Save

SHOPPING
SALE OFFER

مظہر حسین سیّد
مظہر حسین سیّد
شاعر نثر نگار

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست ایک تبصرہ برائے تحریر ”چالاک۔۔۔۔مظہر حسین سید

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *