• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • انا ماری جاگوسا ,تانیثی، ہم جنسیت، کثیر الجہت جنسی مطالعوں کی ادبی نظریاتی عالمہ اور ادیبہ / احمد سہیل

انا ماری جاگوسا ,تانیثی، ہم جنسیت، کثیر الجہت جنسی مطالعوں کی ادبی نظریاتی عالمہ اور ادیبہ / احمد سہیل

کچٍھ دن قبل میں نے یونیورسٹی آف آسٹن، ٹیکساس ، امریکہ میں انا ماری جاگوس کو ایک سیمینار  میں سنا تھا۔ ان سے ملاقات کے دوران میں نے آزادی نسواں  ” کوئر تھیوری، ہم جنسیت اور گے ازم اور اس موضوع سے متعلقہ بہت سے سوالات کیے ۔ جن کے جوابات انھوں نے بڑے تحمل اور ذہانت سے دیئے۔ اور میں ان کے جوابات سے خاصا مطمئن بھی ہوا۔

اننامآری جاگوسا بین الاقوامی سطح پر ایک عالم نسوان مطالعے، ہم جنس پرست مطالعے اور کوئر نظریہ کے طور پر جانا جاتا ہے ۔ انھوں نے  4 کتابچوں ( مونو گرافز ) اور اپنی اصطلاح اوگاسمالوجی (Org asmology ) کے تصور کے نظریاتی مباحث نے ایک انقلاب ہی پیدا کردیا۔”عضویات”( Orgasmology) میں انھوں نے جنس کے حوالے سے ازدواجی اور نفسیاتی رشتوں میں  شہوانیت کے عنصر کا مطالعہ کیا۔ جس میں ” کوئر نظریہ” ایک معروض ہوتا ہے۔ جس سے ایک “مصنوعی عضویہ” تشکیل پاتا ہے۔

ان  مطالعوں میں جاگوسا نے 1920 سے 1930 میں شائع ہونے والے کھاتوں( میوویل ) کا جا ئزہ لیا۔ یہ نظریہ جنسیت اور جنسی شناخت کا نظریہ بھی ہے۔ جاگوسا پرمثل فوکو کے جنسی نظریات کا گہرا اثر دکھائی دیتا ہے۔ جاگوسا نے سب سے زیادہ حال ہی میں رونما ہونے والے فکری مسائل پرجیسے سیاست میں استبدادی عناصر کی  منفرد انداز میں تشریح کی ہے جو ان کی علمی معروضیت پر مشق اور جانبداری ، ایجنسی اور اخلاقیات کا ایک توانا نظریاتی متن بھی ہے۔ ۔ ۔ وہ ایک ایوارڈ یافتہ ناول نگار اور افسانہ نگار بھی ہیں ۔

اپنی کتاب  ” عضویات”/اوگاسومولوجی  ( Orgasmology )میں انا ماری جاگوسا کہتی ہیں کہ یہ سب جعلی جنسی تعلقات ایک ناکامی کا مثبت ردعمل ہے، جو آنے والی چیزوں کو بہتر بنانے کے امکانات   کے دروازے کھولتا ہے۔

سڈنی یونیورسٹی کی ادبیات آرٹ اور میڈیا کے سربراہانا ماری جاگوسا کہتی ہیں کہ جعلی orgasm کے سفر نے گزشتہ صدی کے آغاز سے شروع کیا تھا کہ ناول کا خیال ہے کہ عورتوں اور مردوں دونوں کے لئے جنسی زندگی خوشگوار ہوسکتی ہے۔

انامآری جاگوسا 1965 میں نیوزی لینڈ،کے شہراشبرٹن (Ashburton) میں پیدا ہوئیں۔ ان کی مطالعات کا محور لیزبین، گے، بایو سیکچول اور ٹرانس سیکچول (LGBT ) ہے۔ انھوں  نے 1992 ء میں اپنی پی ایچ ڈی (وکٹوریہ یونیورسٹی  ویلنگٹن) سے حاصل کی، وہ 2003 میں  ثقافتی تعلیم کے ساتھ انگریزی کے شعبہ میں میلبورن یونیورسٹی، نیوزی لینڈ تدریس اور تحقیق سے  منسلک  رہی۔  جہاں وہ 2008 سے 2010 تک شعبہ فلم، ٹیلی ویژن اور میڈیا  سٹڈیز یونیورسٹی آکلینڈ میں اس صیغے کی صدر نشین اور پروفیسر تھی۔

پھر وہ 2011 سے سڈنی کی یونیورسٹی میں میڈیا ، ادب اور فن کے شعبے کی سربراہ مقرر ہوئی۔
1990 کی دہائی کے اواخر سے اب تک سینما میں جنسی سرگرمی کی نمائندگی کرنے والوں کا ایک گروہ سامنے آیا۔ جس نے فلموں اور ابلاغ میں نیا سیٹ بنایا۔ خاص طور پر انساملیٹد جنسی مناظر کو شدت کے ساتھ فلموں میں دکھایا گیا ۔ جس پر جاگوسا نے برہمی کا اظیار کیا اور “حقیقی جنس” سینما، مظہر کے کچھ مشترک نکات پر نظریاتی اوراطلاقی بحث کرتے ہوئے ان فلموں کے اخراجات ، پروڈکشن، قومی سنسر شپ کے نظام پر سخت تنقید کی اور   50 فلموں کی فہرست کے ساتھ ان کا تجزیہ بھی کیا گیا۔ ۔

انھوں نے واضح طور پر بتایا کہ ان فلموں کا اسلوب اور مواد نہ ہی  شہوانی اور نہ ہی شہوت انگیز یا فحش ہے۔انا ماری جاگوسا نے 1996 میں ” قطار”( Queer )کا نظریہ پیش کیا تھا۔

تھیوری: انھوں  نے منفرد انداز اور نئی فکری رسائی  کے تحت ‘قطار” کی اصطلاح کو نئے معنوں کے قالب میں  بھی ڈھالا۔ اور کئی   نئی وضاحتیں اور تشریح نو کی۔ اس کے معروف نظریے کو” قاتل نظریہ” بھی کہا گیا۔ جوڈیت بٹلر اور ڈیوڈ ہالپرین کے نظریاتی حوالہ جات  سے متاثر ہے مگر اس فکریات  میں”کیریر” اصطلاح کی کوئی درست تعریف نہیں ہے  اور ابہام کا شکار ہے۔

انھوں نے نہایت احتیاط سے homophile تحریک کے حوالے سے ہم جنس پرستوں کی آزادی اور ہم جنس پرست کی  ثانیت سے خطاب  کیا ، جاگوسا کی ان مباحث سے یہ پتہ چلتا ہے کہ اس اصطلاح میں تاریخی اثرات اور ذرائع کی مصنوعات پر بھی بات کی گئی ہے۔ سب سے زیادہ اہم بات یہ ہے کہ جاگوسا کے  اس اصول کا مقصد یہ ہے کہ سوچنے کے نئے طریقوں اور مناجیات کو تشکیل اور خلق کیا جائے۔ نہ کہ  صرف مقررہ اور متعین جنسی شناخت کی وساطت سے بلکہ جنسیت اور صنف کے تصور کے بارے میں ہم فکر، مکالمہ و محاکمہ کریں۔

 لیکن وہ اس امر کی عکاسی کرتا ہے اور مابعد جدیدیت کی  کاروباری شرائط کے تحت جنس کے معنی کو اعتباطی طور متعارف اور اطلاق کروایا گیا ہے ۔ جو نئے امریکی حوالے سے تاریخی طور پر مخصوص جمالیاتی رجحان کی نمائندگی کرتا ہے۔ جو  پہلی والی سنیما کی روایات کا نتیجہ نہیں ہے ۔   اس تصوراتی فریم کاری میں نئے سینما میں کلیدی اور واضح طور پر جو جدید شناخت کے تجربے سے جڑے ہوئے ہیں۔ جس میں ہم جنسیت  اور جنس کاریت (sexualization ) کی معاصر بصری ثقافتوں میں اہم بصیرت افروز تصور کیا جاتا ہے۔
ان کی تصنیفات یہ ہیں:
Lesbian Utopics (New York: Routledge, 1994)
In Translation (Wellington: Victoria University Press and Sydney: Allen and Unwin, 1994)
Queer Theory (New York: New York University Press, 1996)
Lulu: A Romance (Wellington: Victoria University Press and Sydney: Allen and Unwin, 1998)
Inconsequence: Lesbian Representation and the Logic of Sexual Sequence (Ithaca: Cornell University Press, 2002)
Slow Water (Wellington: Victoria University Press and Sydney: Random House, 2003)
Orgasmology (Durham: Duke University Press, 2013
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
* تحقیقی پروجیکٹ میں معاونت :
Advisory Board Member, Feminist Theory (Sage and University of Leeds)
Editorial Board Member, Australian Feminist Studies (Routledge)
Advisory Board Member, antithesis: A Graduate Journal of Criticism, Theory and Creative Writing (University of Melbourne)
Advisory Board Member, Queer Asia series (Hong Kong University Press)
Advisory Board Member, Cultural Connections: Key Thinkers and Queer Theory series (University of Wales Press)
Advisory Board Member, Writing from Below: A Peer-Reviewed Interdisciplinary Gender, Sexuality and Diversity Studies Journal (La Trobe University)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
** اعزازات اور انعامات :
Fellow of the Australian Academy of the Humanities
Kreeger Wolf Distinguished Visiting Professor, Gender and Sexuality Studies Program, Northwestern University, Chicago, 7-10 May, 2012
John Edward Taylor Visiting Fellow, School of Arts, Histories and Cultures, University of Manchester, 17-20 May, 2011
John Hinkley Visiting Professor, English Department, Johns Hopkins University, 1 January-30 June 2007
Deutz Medal for Fiction for Slow Water, Montana New Zealand Book Awards, 2004
Vance Palmer Prize for Fiction for Slow Water, Victorian Premier’s Literary Awards, 2004
Slow Water shortlisted for the Miles Franklin Literary Award, 2004
Invited International Scholar, Center for Research on Gender and Sexuality, International Visitors’ Program, New York University, 1 January – 15 February 2003
Best First Fiction in 1994 for In Translation, PEN, New Zealand Society of Authors, 1995
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
*** تحقییقی گرانٹ اور وظائف :

The individual, the couple, the society: Rethinking relationality in queer social theory; Jagose A; DVC Research/Bridging Support Grant. 2017
2015
Sexuality, Film and the Evidential; Jagose A; DVC Research/Bridging Support Grant.
2012
Real sex in the cinema: revisiting indexicality, realism and temporality; Jagose A; School of Letters, Art and Media/ARC Assistance Scheme.
Completing the Circle: Creating an Inclusive and Community-Engaged Faculty; McDonnell M, Hardie M, Hickey-Moody A, Elder C, Jagose A; University of Sydney/Social Inclusion Unit Flagship Grant.
2011
Widening Participation in the Humanities: Expanding Partnerships with Low-SES and Rural Schools to Foster Aspiration and Achievement; McDonnell M, Hardie M, Probyn E, Jagose A, Caine B; University of Sydney/Social Inclusion Unit Widening Participation Grant.

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *