سو لفظ: پکے گاہک

بیٹا یہ دیکھو! پھر خراب ہو گیا۔ بج نہیں رہا!
ایک بزرگ نے اپنا سمارٹ فون دکاندار کی جانب بڑھایا۔
انکل جی شام کو لے جائیں۔ وہی فالٹ نکل آیا ہے۔ میں آرام سے ٹھیک کر دیتا ہوں۔
اس نے کچھ فنکشنز چیک کرنے کے بعد کہا۔
بیٹا شام تک کر دینا۔ میری بیٹی باہر ہے۔ وہ پریشان ہورہی ہے۔
وہ بابا جی آرام سے چلتے ہوئے دکان سے باہر نکل گئے!
میرے تجسس کو دیکھ کر اس نے بتیسی نکالی اور بولا:
’’میرے پکے گاہک ہیں۔ سائیلنٹ موڈ پر لگ جاتا ہے ان سےاور میری دیہاڑی بن جاتی ہے۔‘‘

Avatar
ذیشان محمود
طالب علم اور ایک عام قاری

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *