کل کی کھیتی

کل کی کھیتی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کھیت،
عریانی سے بوجھل، سربریدہ
دھوپ کی زردی میں اپنے
زخمِ خنداں چاٹتا ہے
بے شجر میدان کے چہرے پہ بکھری
ان گنت آنکھوں میں دیکھے بھالے منظر
کا تحیّر بولتا ہے،
سرسراہٹ میں ہوا کی
تھوڑی سے حجّت ملا کر پوچھتا ہے:
’’کیا سواری آ رہی ہے؟
فصل کب کی کٹ چکی ہے
اور گندم کی یہ نومولود بالیں
اپنی ماندہ ماں کے سینے سے لپٹ کر
سو چکی ہیں۔۔۔۔۔ کب اٹھیں گی؟‘‘
پر اسامی۔۔۔
اپنے گرد آلود سر کے سائباں میں دیر سے گم
سائل اور مسئول کے سنگم پہ اٹکا
دھوپ کی اس آخری یلغار میں آنکھیں سکوڑے
راستے کو تک رہا ہے
ڈھیر پہ گندم کے بیٹھا، ہاتھ سے دانے مسل کر
جانے کس سے پوچھتا ہے:
کیا یہ کھیتی آخری ہے؟
موسموں سے چھینا جھپٹی
چھوڑ کر اس کو ہی پونجی جان لے یا
ہل سنبھالے؟
کیا یونہی خود کو زمیں میں پھر سے بوئے
دائرے میں وقت کے جو ساعتیں آئی نہیں ہیں
پھر گنوا دے؟
دھوپ دن کی آخری گاڑی سے باہر جھانکتی ہے
ماتھے کی خود رو لکیروں
میں رواں افکار کا بہتا پسینہ
پاؤں کی مٹی میں ملتا دیکھتی ہے
آنکھوں میں کرنوں کے نشتر پھینکتی ہے
اور کہتی ہے کہ ’’اُٹھ جا ۔۔۔۔۔۔۔۔
جا سواری آگئی ہے !‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
(فیصل عظیم)

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *