عمران خان! میں معذرت چاہتا ہوں

SHOPPING

ایک جہاں کی رعونت اوڑھ کر نشریاتی فضلے سے آلودگی پھیلانے والے میڈیا کو تو حیا نہیں آنی، لیکن مجھ پر ایک معذرت واجب ہے. میں عمران خان اور تحریک انصاف کے کارکنان سے معافی چاہتا ہوں.

میرے جیسے لکھنے والے کا معاملہ یہ ہے کہ انہیں خبروں کے لیے اخبارات اور چینلز پر بھروسہ کرنا پڑتا ہے کہ فی الوقت یہی کسی خبر کے بنیادی ذرائع ہیں. ہم یہ کرتے ہیں کہ ان اخبارات اور ٹی وی چینلز سے جو تصویر ہمارے سامنے آتی ہے اس پر تنقید و تبصرہ کر دیتے ہیں یا اس کا کسی نئے زاویے سے تجزیہ کر دیتے ہیں. ہر خبر اپنی شہادت پر دینا ہماری استعداد میں نہیں ہے. یہ ممکن نہیں کہ ہم معمول کی کسی خبر پر تبصرہ کر رہے ہوں اس خبر کی صداقت کی شہادت بھی دے سکیں. یہ ایک اعتماد ہوتا ہے کہ ایک اخبار یا چینل ایک واقعے کو اپنے رپورٹر کے ذریعے جس طرح رپورٹ کر رہا ہے، کم و بیش یہ درست ہو گا. جب تک کوئی خبر انتہائی غیر معمولی نہ ہو یا اسے بادی النظر میں قبول کرنا مشکل امر نہ ہو تب تک خبر کے ان بنیادی ذرائع پر بھروسہ کیا جاتا ہے.

عمران خان جس روز سپریم کو رٹ گئے، ان کے حوا لے سے ایک خبر مختلف چینلز پر چلی. کہا گیا کہ انہیں سیکورٹی اہلکار نے پاس دینے کے لیے روکا تو انہوں نے اس کا بازو پکڑ کر ڈانٹتے ہوئے کہا کہ “تم جانتے نہیں میں کون ہوں؟”. اس خبر کے ساتھ ایک ویڈیو بھی چلائی گئی. بادی النظر میں چینلز کے رپورٹرز کی اس خبر پر شک کی کوئی گنجائش نہیں تھی کیونکہ رپورٹرز کا ایک لشکر جرار تھا جو اس موقع کی کوریج کے لیے سپریم کورٹ میں موجود تھا. چنانچہ جب خبر بار بار چلنا شروع ہوئی تو اعتماد کے اسی رشتے سے اسے درست سمجھا. اب ظاہر ہے کہ یہ ایک تکلیف دہ رویہ تھا اس لیے عمران کے اس رویے کے خلاف لکھا بھی اور بولا بھی.

بعد میں معلوم ہوا کہ یہ واقعہ انتہائ شرمناک اور غیر ذمہ دارانہ طریقے سے رپورٹ ہوا. حقیقت اس کے برعکس تھی.

میڈیا تو سر بازار می رقصم ہے. اس سے معذرت کی توقع ایک کار لاحاصل ہے. میں البتہ نادم ہوں اور معذرت چاہتا ہوں. ابوالکلام آزاد نے کہا تھا : سیاست کے سینے میں دل نہیں ہوتا. زندہ ہوتے تو جان پاتے صحافت کے تو تو نہ سینے میں دل رہا نہ آنکھ میں حیا.

SHOPPING

یہ سوچنا اب عام آدمی کا کام ہے کہ جو میڈیا رپورٹرز اور کیمروں کی یلغارانہ موجودگی میں بھی درست خبر نہ دے سکا اس کے بانکے جب ایران توران کی خبریں لاتے ہیں تو ان میں کتنی صداقت ہوتی ہو گی.

SHOPPING

Avatar
آصف محمود
حق کی تلاش میں سرگرداں صحافی

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *