سو لفظوں کی کہانی ۔ درندے

تمھیں شوق تھا انسان دیکھنے کا ۔وہ آپس میں باتیں کرتے ہوئے بولے۔۔۔۔۔
یہ کس کو ما رہے ہیں۔۔۔۔؟
شاید کسی انسان کو۔۔۔۔۔
لیکن کیوں۔۔۔۔؟
معلوم نہیں۔۔۔۔۔
کیا یہ اسے کھانے والے ہیں۔۔۔؟
نہیں انسان انسان کو نہیں کھاتا۔۔۔۔۔
تو پھر مارتا کیوں ہے۔۔۔۔؟
پتہ نہیں۔۔۔۔۔۔
اچھا یہ ہمیں درندے کیوں کہتے ہیں۔۔۔۔؟
شاید ہم شکار کو چیرتے پھاڑتے ہیں۔۔۔۔۔۔
لیکن ہم تو بھوک مٹانے کے لیے شکار کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ یہ لوگوں کے ہاتھ میں کیا ہے جو اطرف میں کھڑے ہیں اسے بچا کیوں نہیں رہے۔۔۔۔۔؟
پتہ نہیں چلو چلیں کہیں ہم بھی اس انسان کی طرح نہ مارے جائیں۔۔۔۔

مدثر ظفر
مدثر ظفر
فلیش فکشن رائٹر ، بلاگر

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *