دیوانے کی بڑ۔۔۔فیصل عظیم

 بھرے بازار کے پامال چہرے کی

اندھیری جھرّیوں پر دھوپ کی یلغار

tripako tours pakistan

کہیں مشتاق نظروں سے

مرصّع طاق میں اسباب

خود اپنے بوجھ سے لٹکی کہیں

تمثال خوابوں کی

کہیں جنسِ تجارت طوق گردن کا

دھواں سانسوں کا سدِّ راہ

اور سگرٹ کے مرغولے

کہیں چھڑکاؤ پھولوں پر کہیں رنگوں کی پچکاری

کہیں میلہ، کہیں ٹھیلا،

ہوا باندھے کوئی خوشبو کڑاہی کی

مسلسل گاڑیوں کے بے سُرے

سازوں کی آوازیں

بہت سے ہچکچاتے بدنما چھکڑوں کی ہاہاکار

مگر اک پیڑ کے نیچے

سڑک کے اک کنارے پر کھڑی گاڑی

اور اُس کی ساخت میں غلطاں

کئی اَوزار کا قیدی

ابھرتی اور الجھتی باہمی

تردید آوازوں سے بے پروا

پسینے میں نہایا ہے

سبھی اوزار بھیگے ہیں

مگر جانے، پسینا کس کو آیا ہے

! کبھی پہیّے سے محوِ راز ہوتا ہے

کبھی اک پیچ کستا ہے

کبھی اک چول سے بد ظن،

کوئی پرزہ بدلتا ہے

ٹھکا ٹھک ٹھک، مسلسل گم

بھلا ایسی سواری کی طرف ۔۔

کوئی سواری کیسے آئے گی

مگر وہ کب کسی کی راہ تکتا ہے

تھکن سے چُور، ہاتھوں سے لہو دھو کر

پسینا پونچھ کر

بازار سے اُکتا کے

اس گاڑی میں آخر بیٹھ جاتا ہے

اشارے کر کے آنکھوں کو

ہر اک منظر کا پس منظر دکھاتا ہے

مگر بازار تو بازار ہے

Advertisements
merkit.pk

ہر آگ سے لا علم اپنی راکھ کو سلگائے جاتا ہے !

  • merkit.pk
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply