• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • سپریم کورٹ نےشاہد مسعود کےانکشافات پرنئی جےآئی ٹی تشکیل دے دی

سپریم کورٹ نےشاہد مسعود کےانکشافات پرنئی جےآئی ٹی تشکیل دے دی

لاہور: سپریم کورٹ آف پاکستان نے شاہد مسعود کے انکشافات پرنئی جے آئی ٹی تشکیل دے دی جس کے سربراہ ڈی جی ایف آئی اے بشیرمیمن ہوں گے۔

تفصیلات کے سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں خصوصی بینچ زینب قتل کیس کے ازخود نوٹس کی سماعت کی۔

عدالت عظمیٰ میں ڈاکٹرشاہدمسعود، زینب کے والد اور آئی جی پنجاب عارف نواز، جے آئی کے سربراہ محمد ادریس، ڈی جی پنجاب فرانزک لیب ڈاکٹراشرف طاہرعدالت میں پیش ہوئے۔

tripako tours pakistan

زینب قتل کیس کے ازخود نوٹس کی سماعت میں ملک کے ٹی وی چینلز سے منسلک سینئراینکرپرسنزاور اخباروں کے مالکان سمیت 12 سینئرصحافی پیش ہوئے۔

سپریم کورٹ نے شاہد مسعود کےانکشافات پرنئی جےآئی ٹی تشکیل دے دی جس کے سربراہ ڈی جی ایف آئی اے بشیرمیمن ہوں گے۔

Advertisements
merkit.pk

دوسری جانب چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے مقتولہ زینب کے والد اور وکیل کے میڈیا پربیان پرپابندی لگاتے ہوئے مقتولہ کے والد کو ہدایت کی ہے کہ وہ پولیس کے ساتھ مکمل تعاون کریں۔انہوں نے ہدایت کی کہ پولیس احترام کے ساتھ زینب کے والد کوتفتیش کے لیے بلائے۔

 

چیف جسٹس آف پاکستان نے ڈاکٹرشاہد مسعود کے 37 اکاؤنٹس کے بیانات پراظہاربرہمی کرتے ہوئے کہا کہ آپ کے 37 اکاؤنٹس کے بیان سے معاشرے میں بے چینی پھیلی۔

جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیے کہ ہم آپ کا نام ای سی ایل میں بھی ڈال سکتے ہیں، آپ نے بیان دیا ہے ثابت کرنا بھی آپ کی ذمہ داری ہے۔

ڈاکٹرشاہد مسعود نے عدالت میں کہا کہ پولیس افسران ملزمان کو تحفظ دے رہے ہیں، چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ جو جےآئی ٹی ہمارے حکم پر بنی آپ اس پراعتراض کررہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کیا آپ عدالتوں کو بتائیں گے تفتیش کیسے ہوتی ہے، آپ تفتیش کا معاملہ چھوڑیں، اکاؤنٹس کی بات کریں۔

شاہد مسعود نے کہا کہ افتخارچوہدری کے دورمیں بھی خبر دی تھی جس پررات 12 بجے نوٹس ہوا جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ آپ کی وہ خبربھی غلط نکلی، صبح پتہ چلا کہ ایسا کچھ نہیں ہوا تھا۔

چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ آپ نے جوبات کی وہ انتہائی سنجیدہ ہے، بتائیں آپ کے پاس کیا ثبوت ہیں؟ جس پر شاہد مسعود نے جواب دیا کہ میں آج بھی اپنے بیان پر قائم ہوں۔

ڈاکٹرشاہد مسعود نے کہا کہ اگرآپ کہتے ہیں تو میں یہاں سے چلا جاتا ہوں جس پرمعزز چیف جسٹس نے کہا کہ اب میں آپ کو یہاں سے ایسے نہیں جانے دوں گا۔

چیف جسٹس نے کہا کہ میرا نام ثاقب نثار ہے مجھے پتہ ہے کیا کرنا ہے اورکیا نہیں ہے، میرا مقصد مفادعامہ اوربنیادی حقوق کا تحفظ ہے۔

انہوں نے ریمارکس دیے کہ آج کے بعد کوئی وزیراعلیٰ یا وزیراعظم جوڈیشل کمیشن بنانے کا نہ کہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ یہ کام تفتیشی اداروں کا ہے اسے ہی کرنا چاہیے، ایسے کمیشن بنا کرکچھ حاصل نہیں ہوتا۔

کمرہ عدالت میں شاہد مسعود کی میڈیا سے گفتگوکی ویڈیو بھی دکھائی گئی ، چیف جسٹس نے کہا کہ اپنی نوعیت کا مختلف معاملہ ہے اس لیےسینئر صحافیوں کو بلایا۔

جسٹس میاں ثاقب نثار نے سینئر صحافیوں کی آمد پرشکریہ ادا کرتے یوئے کہا کہ آپ لوگ ہمارے مہمان ہیں۔

چیف جسٹس آف پاکستان نے سماعت کے دوران ریمارکس دیے کہ کیا واقعے کو مثال نہ بنایا جائے تاکہ مستقبل میں کوئی ایسا نہ سوچے۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں جو تصویر ڈاکٹر شاہد مسعود نے دکھائی انتہائی بھیانک تھی، ان کےمطابق ملزم کو قتل کردیا جائے گا اصل ملزمان بھاگ جائیں گے۔

شاہد مسعود کے باربارعدالتی کارروائی میں مداخلت پرچیف جسٹس نے اظہاربرہمی کرتے ہوئے کہا کہ میں نرمی سے بات کررہا ہوں آپ کارویہ مناسب نہیں ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ میں نہیں چاہتا کہ ماحول میں تناؤ پیدا ہو، مگر آپ ہرگز اونچی آواز میں نہ بولیں۔

ڈاکٹرشاہد مسعود نے کہا کہ جوسزا دی جائے قبول ہوگی مگراپنے دعوے پرقائم ہوں، اپنےمؤقف پرقائم ہوں کہ عمران کوقتل کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ عدالت ملزم عمران کو اپنی حراست میں لے، عدالت مجھے کوئی بھی سزا دیں مگر میں ان کونہیں چھوڑوں گا۔

عدالت عظمیٰ نے قصور کے متعلقہ ڈی ایس پی اور2 ایس ایچ اوز کا ریکارڈ طلب کرتے ہوئے پولیس کو جلد تفتیش مکمل کرکے چالان جمع کرانے کی ہدایت کی۔

سپریم کورٹ نے ملزم عمران علی کی سیکورٹی بھی سخت کرنے کا حکم دیا ہے۔

چیف جسٹس نے ڈاکٹرشاہد مسعود سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ کی بات غلط ثابت ہوئی توتوہین عدالت کی سزا ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ آپ کے خلاف انسداد دہشت گردی کی دفعات شامل ہوں اور آرٹیکل 79 کے تحت بھی کارروائی ہوگی۔

سینئرصحافیوں نے سپریم کورٹ نے استدعا کی کہ شاہد مسعود کی خبرغلط ثابت ہو تو معافی دی جائے، صحافیوں کے اسرارپرچیف جسٹس نے شاہد مسعود کو ایک اورموقع دے دیا۔

سپریم کورٹ نے زینب قتل ازخود نوٹس کی سماعت 2 ہفتے کے لیے ملتوی کرتے ہوئے مقتولہ زینب کے خاندان کو مکمل سیکورٹی دینے کا حکم دیا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ دنوں اینکر شاہد مسعود کی جانب سے زینب قتل کیس کے ملزم عمران علی کے 37 بینک اکاؤنٹس ہونے کا دعویٰ کیا تھا تاہم اسٹیٹ بینک آف پاکستان اورحکومت پنجاب اس کی تردید کرچکی ہے۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں نقیب اللہ کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیے کہ زینب قتل کیس میں ایک اینکرپرسن کے بیان پرنوٹس لیا تھا، ان کا کہنا تھا کہ ہم میڈیا کی مدد چاہتے ہیں اور سچ تک پہنچنا چاہتے ہیں۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply