• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • القسام بریگیڈز نے ہزاروں جنگجوؤں کی بھرتی کا اعلان کردیا

القسام بریگیڈز نے ہزاروں جنگجوؤں کی بھرتی کا اعلان کردیا

القسام بریگیڈز کے ترجمان ابو عبیدہ نےاپنی تنظیم میں ہزاروں نئے جنگجو بھرتی کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔

ابو عبیدہ نے تصدیق کی کہ نو ماہ سے، “24 بٹالین مزاحمتی گروپوں کے شانہ بشانہ لڑ رہی ہیں اور ہمارے پاس بیت حنون کے شمال اور رفح کے جنوب میں ہتھیار موجود ہیں۔”

ابو عبیدہ نے شجاعیہ، نطصارم محور اور رفح کے پڑوس میں جنگ کے بارے میں کہا: “یہ جنگ ہماری مزاحمت کی طاقت اور دشمن کی شکست کا منہ بولتا ثبوت ہے۔”

ابو عبیدہ نے غزہ میں اسرائیلی قیدیوں کے اہل خانہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا، “آپ کے بچوں کی قسمت بنجمن نیتن یاہو کے ہاتھ میں ہے، جو ذاتی فائدے کی تلاش میں ہیں۔”

ابو عبیدہ نے اسرائیلی فوج پر “شہریوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کرنے، انہیں محفوظ علاقوں کے طور پر دھوکا دینے اور شہریوں کے گھروں پر بمباری کرنے” کا الزام لگایا، اسے “انتہائی غیر اخلاقی فوج” قرار دیا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ الاقصیٰ طوفان “حملہ آوروں کی جارحیت کے خلاف ہماری مزاحمت کا آغاز نہیں ، بلکہ یہ دشمن کے جرائم کے خلاف ایک دھماکا تھا”۔ ہم اپنے مجاہدین، اپنے لوگوں کو یقین دلاتے ہیں۔ الاقصیٰ طوفان ان لڑائیوں میں سے ایک ہے جو صرف عظیم تبدیلی کا باعث بنتی ہے۔

ابو عبیدہ نے کہا کہ 7 اکتوبر کو اسرائیل کی ناکامی کے بارے میں سامنے آنے والی انٹیلی جنس دستاویزات “اس کے مقابلے میں ایک چھوٹی سی بات ہے جو ہم مناسب وقت پر ظاہر کریں گے”۔ انہوں نے نوٹ کیا کہ “یہ دستاویزات سخت ہوں گی اور یہ ظاہر کریں گی کہ مزاحمت کس طرح قابل تھی۔”

ابو عبیدہ نے مقبوضہ مغربی کنارے میں ہونے والی پیش رفت کے بارے میں بتایا اور کہا کہ مغربی کنارے، یروشلم اور 1948 ءکے مقبوضہ علاقوں میں تحریک ناگزیر ہے۔ مغربی کنارے میں مزاحمت کا تسلسل ہمارے عوام کا ردعمل ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ اسرائیل کو “اسٹریٹجک ناکامی کا سامنا کرنا پڑا ہے جسے جلد ہی محسوس کیا جائے گا، کیونکہ یہ ایک متحرک نسل پیدا کرے گا جو اپنے جرائم کے خلاف مزاحمت کرنے کے لیے پرعزم ہے۔”

خیال رہے کہ مئی کے آخر میں ابو عبیدہ پہلی بار نمودار ہوئے تھے۔خبر رساں ادارے روئٹرز نے اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کے حوالے سے کہا کہ کسی بھی تبادلے کے معاہدے کو “ہمیں اس وقت تک جنگ جاری رکھنے کی اجازت دی جائے جب تک کہ جنگ کے تمام مقاصد حاصل نہ ہو جائیں۔”

نیتن یاہو نے اس بات پر زور دیا کہ اسرائیل کی طرف سے منظور کردہ تجویز “جنگ کے مقاصد پر سمجھوتہ کیے بغیر یرغمالیوں کی واپسی کی اجازت دیتی ہے۔”

نیتن یاہو نے مزید کہا کہ معاہدے کے تحت “حماس کو مصر کے ساتھ سرحد پار سے ہتھیاروں کی اسمگلنگ کی اجازت نہیں ہونی چاہیے۔”

بینجمن نیتن یاہو نے معاہدے کے تحت “شمالی غزہ میں ہزاروں جنگجوؤں کی واپسی” کو مسترد کر دیا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors

جبکہ نیتن یاہو کے دفتر نے ایک بیان جاری کیا: “جس تجویز کو ہم نے منظور کیا اور بائیڈن کی حمایت حاصل کی وہ ہمیں جنگ کے بقیہ اہداف پر سمجھوتہ کیے بغیر یرغمالیوں کو واپس کرنے کی اجازت دیتی ہے۔”

Facebook Comments

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply