• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • کرونا ویکسین ایسٹرا زینیکا ہارٹ اٹیک کا باعث بن سکتی ہے٬ کمپنی کا اعتراف

کرونا ویکسین ایسٹرا زینیکا ہارٹ اٹیک کا باعث بن سکتی ہے٬ کمپنی کا اعتراف

ملٹی نیشنل فارماسیوٹیکل کمپنی ایسٹرازینیکا (Astrazeneca) نے حال ہی میں اعتراف کیا ہے کہ اس کی تیار کی گئی کووِڈ ویکسین سے اندرون جسم خون جمنے کی سنگین بیماری پیدا ہوسکتی ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق برطانوی اور سوئیڈن کے اشتراک سے قائم کی گئی فارماسیوٹیکل کمپنی ایسٹرازینیکا نے پہلی بار برطانوی عدالت میں ایک کیس کے دوران اعتراف کیا کہ اس کی کووِڈ ویکسین جو آکسفورڈ یونیورسٹی کے ساتھ مِل کر تیار کی گئی ہے، خون جمنے کی ایک نایاب بیماری کا باعث بن سکتی ہے۔

کمپنی کے خلاف برطانیہ کی ہائی کورٹ میں تقریباً 51 مقدمات درج کیے گئے تھے جن میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ اس کووِڈ ویکسین کی وجہ سے متعدد اموات اور کیسز سامنے آچکے ہیں۔

ایسٹرازینیکا ویکسین وسیع پیمانے پر استعمال ہونے والی کووِڈ ویکسینز میں شامل رہی ہے تاہم اب ڈاکٹروں نے خبردار کیا ہے کہ اس ویکسین کے فوائد سے زیادہ نقصانات ہیں جس سے عوام کو محتاط رہنا چاہیے۔ یہ تھرومبوسس تھرومبوسائٹوپینیا سنڈروم (ٹی ٹی ایس) کا سبب بن سکتا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors london

متعدی امراض کے ماہر ڈاکٹر ایشور گیلاڈا نے کہا کہ تھرومبوٹک تھرومبوسائٹوپینک سنڈروم (ٹی ٹی ایس) ایک نایاب لیکن ویکسین کے انتہائی سنگین منفی اثرات میں سے ایک ہے جو ویکسین لگوائے جانے کے بعد مدافعتی ردعمل کے نتیجے میں پیش آتا ہے۔ یہ علامت 50,000 میں سے کسی ایک کو ہوتی ہے یعنی (0.002 فیصد) تاہم آبادی کا حجم اگر زیادہ ہو تو یہ تعداد بہت زیادہ ہوجاتی ہے۔

Facebook Comments

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply