• صفحہ اول
  • /
  • ادب نامہ
  • /
  • کتاب تبصرہ
  • /
  • طارق فتح کی متنازع کتاب’ سراب کے تعاقب میں’ کی قرات اور اس کے متنی بیانیہ کا تجزیہ اور مصنّف کا احوالِ زیست /احمد سہیل

طارق فتح کی متنازع کتاب’ سراب کے تعاقب میں’ کی قرات اور اس کے متنی بیانیہ کا تجزیہ اور مصنّف کا احوالِ زیست /احمد سہیل

طارق فتح 20 نومبر 1949 کو کراچی، سندھ، پاکستان میں ایک پنجابی خاندان میں پیدا ہوئے۔ان کے والدین تقسیم ہند کے بعد ممبئی سے کراچی منتقل ہوئے۔ جن کے نام کسی کو نہیں معلوم۔ وہ اس بارے میں  کبھی کوئی بات نہیں کرتےتھے۔ گمان کیا جاتا ہے کہ  بہن بھائیوں کے ساتھ پلے بڑھے ہوں گے، کراچی میں ان کی ابتدائی عمر ناظم آباد میں بسر ہوئی ۔ ابتدائی تعلیم کراچی میں نشتر پارک کے  پاس بریٹو روڈ ایک کیتھولک اسکول میں ہوئی ۔ انھوں  نے اپنی بی ایس سی کی ڈگری آدم جی سائنس کراچی سے حاصل کی۔

طارق فتح نےجامعہ کراچی سےخرد کیمیا ( بائیو کیمسٹری ) میں ماسٹریٹ ( ایم ایس سی) کی سند حاصل کی، لیکن پاکستان ٹی وی کے لیے تحقیقاتی صحافی بننے سے پہلے 1970 میں کراچی کے انگریزی کے جریدے   “سن ” میں بحیثیت نامہ نگا   صحافت کی دنیا میں شریک ہوئے۔

1960 اور 1970 کی دہائیوں میں کمیونسٹ طالب علم کے یساریت اور نراجیت پسند کارکن کے طور پرپاکستان کے  سیاسی اور صحافتی آفاق میں متعارف ہوئے، انھیں  دو بار فوجی حکومتوں نے پابند سلاسل کیا۔ان کی سیاسی اور مذہبی تنقید نے انہیں 1977 میں ایک بار پھر مشکل میں ڈال دیا، جب ان پر غداری کا الزام عائد کیا گیا اور ضیاء الحق انتظامیہ نے ان کی  صحافت پابندی لگادی۔

طارق فتح نے 1987 میں کینیڈا ہجرت کرنے سے پہلے پاکستان چھوڑ کر سعودی عرب میں سکونت اختیار کی۔ انہوں نے کہا کہ آخرکار انہوں نے احمدیوں ( قادیانیوں) کے ساتھ حکومت کے امتیازی سلوک کی وجہ سے اپنی پاکستانی شہریت ترک کر دی۔انھوں  نے کچھ دن سعودی عرب میں بھی ملازمت کی تھی ۔

طارق فتح کو پاکستان چھوڑنے پر مجبور کیا گیا اور 1987 میں کینیڈا میں سیاسی جلاوطنی اختیار کی۔اور یہاں ان کا  ایک نشر کار ( براڈ کاسٹر) اور حاشیہ نویس ( کالم نگار) کے طور پر ایک نتیجہ خیز کیریئر کا آغاز تھا۔ اس نے ٹورنٹو ریڈیو اسٹیشن CFRB Newstalk 1010 میں اپنی مزاحمتی بائیں بازو کی آواز دریافت کی اور پھر اخبار *ٹورنٹو سن* (2012–2023) کے لیے اور باقاعدگی سے پروگرام کرتے رہے۔ ۔ وہ سن نیوز نیٹ ورک پر مبصر کے طور پر نمودار ہوئے ہیں اور انہوں نے نیو دہلی ٹائمز کے یوٹیوب چینل (2018-2023) پر اپنا شو “واٹ دی فتح” پیش کیا۔

طارق فتح پاکستان کی مذہبی اور سیاسی اقتدار اعلیٰ  یا حاکمیت( اسٹیبلشمنٹ) اور ہندوستان کی تقسیم کے کھلم کھلا ناقد تھے۔وہ نہات دلیری ،بغیر کسی بھید بھاؤ کے   اسلام اور دہشت گردی کے بارے میں اپنے ترقی پسند خیالات اور پاکستان کی قیادت پر اپنی واضح تنقید کے لیے مشہور و معروف تھے۔ انہوں نے “میرج کا پیچھا” اور “یہودی میرا دشمن نہیں ہے” جیسے ناول لکھے۔ فتح کا انتقال 24 اپریل 2023 میں 73 سال کی عمر میں ہوا۔انھوں نے  کئی بار بھارت کی شہریت حاصل کرنے کی کوشش کی جس میں وہ ناکام رہے۔

طارق فتح ایک خاموش طبع انسان  تھے  جو اپنی ذاتی معلومات ظاہر نہیں کرتے تھے  حالانکہ یہ واضح ہے کہ انہوں نے ایک بوہری فرقے کی ایک خاتون  نرگس ٹپال سے شادی کی تھی۔ ان کے دو بچے نتاشا اور نازیہ فتح ہیں۔ جو اَب کینیڈا میں مقیم ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کتاب کےکلیدی نکات:

اسلام اور ریاست، اسلام، مسلمان، سیاست اور حکومت، تاریخ، اسلام اور ریاست، تاریخ، مسلمان، اسلام اور روشن خیالی اور ترقی پسندی کا تناؤ اور کشمکش

کتاب سراب کے تعاقب میں  (Chasing a Mirage) انگریزی میں لکھی گئی۔اس کتاب کے  متن کو اسلام پسند فاشزم کے خلاف ترقی پسند مسلمانوں کی لڑائی میں ‘سراب (میراج) کا پیچھا کرنا’ ایک انتہائی قابل قدر شراکت ہے۔ یہ کتاب مغرب میں بائیں بازو کے ان لوگوں کو  پڑھنی چاہیے جنہوں نے غلطی سے یہ ماننا شروع کر دیا ہے کہ اسلام پسند سامراج مخالف کسی قسم کی نمائندگی کرتے ہیں۔ مصنف کی فکری  دلچسپیاں اسلام کے اندر سیکولرازم، لبرل ازم اور ترقی پسندی، سوشل ڈیموکریسی ہیں۔

کتاب” سراب کے تعاقب میں” میں  طارق فتح رقم طراز ہیں: اسلام پسند دلیل دیتے ہیں کہ حضرت محمد (ص) کی رحلت کے بعد کا دور اسلام کا سنہری دور تھا اور ہم مسلمانوں کو آج کی دنیا میں اس سیاسی نظام کی تقلید کے لیے اس خلافت کو دوبارہ تشکیل دینے کی ضرورت ہے۔ میں یہ ظاہر کرنا چاہتا ہوں کہ جب مسلمانوں نے پیغمبر کو سپرد خاک کیا تو انہوں نے ان کے ساتھ اسلام کی بہت سی عالمی اقدار کو بھی دفن کیا ،جن کی آپ نے تبلیغ کی تھی۔ اسلام کی تاریخ کو بنیادی طور پر ایک نہ ختم ہونے والی طاقت کی جدوجہد کی تاریخ کے طور پر بیان کیا جا سکتا ہے، جہاں مردوں نے محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی چادر کا دعویٰ کرنے کے لیے ایک دوسرے کو قتل کیا ہے۔ یہ کشمکش ایک دردناک کہانی ہے جو نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ہمیشہ کے لیے آنکھیں بند کرنے کے چند گھنٹوں کے اندر شروع ہوئی تھی، اور اسے سنانے کی ضرورت ہے۔ میرا پختہ یقین ہے کہ قرآن کا پیغام تاریخ کے حقائق کا مقابلہ کرنے کے لیے اتنا مضبوط ہے۔ یہ میرا یقین ہے کہ مسلمان سچائی کا سامنا کرنے کے لیے بالغ اور اپنی شناخت میں محفوظ ہیں۔ یہ وہ کہانی ہے۔ میراج کا پیچھا کرنے کے لیے پیشگی تعریف “طارق فتح نے ایک اشتعال انگیز اور چیلنجنگ کتاب لکھی ہے جو ان مسائل کے بارے میں فکر مند ہر شخص کو  پڑھنی چاہیے۔” -جینس گراس سٹین کا کہنا ہے “سراب یا دھوکے یا *میراج کا پیچھا کرنا* اسلام پسند فاشزم کے خلاف ترقی پسند مسلمانوں کی لڑائی میں ایک انتہائی قابل قدر تعاون ہے۔ یہ کتاب مغرب میں بائیں بازو کے ان لوگوں کو  پڑھنی چاہیے جنہوں نے غلطی سے یہ ماننا شروع کر دیا ہے کہ اسلام پسند کسی قسم کے سامراج مخالف کی نمائندگی کرتے ہیں۔ ”   طارق فتح نے استثنیٰ کے بجائے محیط  ارض یا عالمگیریت، یہودیت کے بجائے انضمام کے لیے پُرجوش بحث کی ہے، اور مسلمانوں کی خاموش اکثریت سے اس سے پہلے کہ بہت دیر ہو جائے بولنے کی پُرزور اپیل کی ہے۔ جرات اور ہمت کے اس کام کو بڑے پیمانے پر پڑھنے کی ضرورت ہے۔ ” – پرویز ہودبھائی

“بہادر اور ذہین طارق فتح کا یہ دلچسپ کام بیک وقت فکر انگیز، عام لوگوں اور علما ، مسلمانوں اور غیر مسلموں کے لیے فکر انگیز، سبق آموز اور روشن خیال ہے۔ پوسٹ میں اسلامی ادب کے ذخیرے میں ایک انمول اور نایاب اضافہ ہے۔ نو گیارہ (9/11) کے واقعہ کے بعد کی دنیا، اسلامی اصلاح اور روشن خیالی کی طرف ایک جرات مندانہ قدم۔ ہے ۔” (تاج ہاشمی )”

طارق فتح کی آواز ایک ایسی آواز ہے جسے سننے کی ضرورت ہے۔ کینیڈا کو ان مسائل کے بارے میں ایک صحت مند، مدلل بحث کی ضرورت ہے جو وہ اٹھا رہے ہیں، اور حقیقتاً دنیا کو بھی۔” -باب راے

“بُرے اور شاندار طارق فتح کا یہ دلچسپ کام بیک وقت فکر انگیز، عام لوگوں اور علما ، مسلم اور غیر مسلموں کے لیے فکر انگیز، سبق آموز اور روشن خیال ہے۔ پوسٹ میں اسلامی ادب کے ذخیرے میں ایک انمول اور نایاب اضافہ ہے ۔ کینیڈا کو ان مسائل کے بارے میں ایک صحت مند، مدلل بحث کی ضرورت ہے جو وہ اٹھا رہے ہیں، اور حقیقتاً دنیا کو بھی۔”  ( باب رائے، رکن پارلیمنٹ، کینیڈا)

Advertisements
julia rana solicitors

ٹورنٹو سٹار  کے تبصرہ نگار جان گوڈارڈ نےلکھا ہے کہ یہ کتاب “سخت اور کٹھن حقیقتوں کا بھرپور تہہ دار کام ہے۔” اسلام، خاص طور پر کینیڈا میں” لیکن کتاب کو اس کی “غیر ضروری بحث” اور جھوٹے  حقائق کی جانچ کے لیے تنقید کا نشانہ بنایا۔ میکنزی انسٹی ٹیوٹ کی طرف سے اس کتاب کی تعریف کی گئی تھی، جو اسلام کے اصل متن سے اخذ کرنے والے اسلام پسند جنونیوں کے لیے ایک براہ راست چیلنج کے طور پر، کامیابی کے ساتھ اس بات پر بحث کرتی تھی کہ کس طرح عالمی اسلامی ریاست کے حصول نے محمد کے اصولوں کی خلاف ورزی کی ہے۔ 31 مارچ 2009 کو قدامت پسند ڈونر کینیڈین فاؤنڈیشن نے اس کتاب کو ان کے $35,000 ڈونر پرائز کے لیے شارٹ لسٹ کیا، جو عوامی سیاست کا احاطہ کرنے والی غیر افسانوی تحریروں کو دیا جاتا ہے۔
۔۔۔۔
طارق فتح کی کتاب پر چند تبصرے : 
*طارق فتح کی مرکزیت کے بارے میں موصول ہونے والی حکمت پر سوال اٹھانے کی جسارت کی ہے۔
اسلامی ریاست عالمگیر مسلم کمیونٹی کے مقدر میں۔ وہ دکھاتا ہے۔
بڑی محنتی، باریک بینی سے تحقیق کہ مسلمان جتنی جلدی اس سے جان چھڑا لیں گے۔
صدیوں کی فضول اور فضول قبائلی اور گروہی عداوتوں اور فرقہ واریت کا ڈیڈ ویٹ حقیقی اسلام اور اسلامی ریاست کے نام پر جھگڑے کے ان کے امکانات اتنے ہی زیادہ ہوں گے۔
جنونیت کے دلدل سے نکلنے کے لیے۔ باقی تمام مہذبوں کی طرح دنیا کی مذہبی برادریوں کو بھی مسلمانوں کو سیکولرازم کو اپنانے کی ضرورت ہے۔
تکثیریت ان کے سماجی اور سیاسی احکامات کا ایک لازمی حصہ ہے۔ مجھے یقین ہے کہ یہ کتاب سیاسی اسلام پر انتہائی ضروری تنقیدی بحث کو جنم دے گا۔*
(اشتیاق احمد، پی ایچ ڈی۔پولیٹیکل سائنس کے پروفیسر، سٹاک ہوم یونیورسٹی، سویڈن۔)

Facebook Comments

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply