عوامل کا کھوج لگائیے۔۔رابعہ علی

SHOPPING

ﮐﺸﺘﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﺭﺍﺥ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﺎﻧﯽ ﺑﺎﮨﺮ ﭘﮭﯿﻨﮑﺘﮯ ﺭﮨﻨﮯ ﺳﮯ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺣﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ، ﺟﺐ ﺗﮏ ﺳﻮﺭﺍﺥ ﺑﻨﺪ ﻧﮧ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﺍﻧﺪﺭ ﺁ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔

ﺯﯾﻨﺐ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ ﻗﺎﺗﻠﻮﮞ ﮐﻮ ﻋﺒﺮﺗﻨﺎﮎ ﺳﺰﺍﺋﯿﮟ ﺩﯼ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﯾﻮﻧﮩﯽ ﺧﺘﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻥ ﻋﻮﺍﻣﻞ ﮐﺎ ﺳﺪﺑﺎﺏ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﮯ۔ ﺟﻦ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺑﻨﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ﺍیسی  ﺳﻮﭺ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ؟ ﮐﻮﻥ ﺳﯽ ﭼﯿﺰ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﻋﻤﻞ ﭘﮧ ﺍﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﮨﮯ؟ ﺍﯾﺴﮯ ﮐﯿﺴﺰ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﮨﺮ ﻣﻠﮏ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ، ﯾﻌﻨﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﻣﺠﺮﻣﺎﻧﮧ ﺫﮨﻨﯿﺖ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻓﺮﻕ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺣﮑﻮﻣﺘﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺍﭼﮭﺎ ﺑﺮﺍ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮨﮯ۔

ﻓﺤﺶ ﻭﯾﮉﯾﻮﺯ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺧﺮﺍﻓﺎﺕ ﭘﮧ ﭘﺎﺑﻨﺪﯼ ﮨﻮﻧﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﺧﺮﺍﻓﺎﺕ ﮐﮯ ﺁﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﮨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﻣﻮﺭﺩ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﻧﮧ ﭨﮭﮩﺮﺍﺋﯿﮟ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﮨﻢ ﺯﯾﻨﺐ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﻋﻤﻮﻣﯽ ﺭﻭﯾﮯ ﮐﻮ ﺯﯾﺮ ﺑﺤﺚ ﻻ ﺭﮨﮯ ہیں ۔

ﺑﭽﮯ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺧﺒﺮ ﮐﻮﻥ ﮐﯿﺴﺎ ﮨﮯ؟ ﻧﮧ ﺍﺷﺎﺭﮮ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﺗﻮ ﺳﺐ ﻣﻌﻠﻮﻡ ہے  ﮐﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ہے۔ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﮐﯿﺎ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ، ﮐﺘﻨﺎ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ، ﮐﻮﻥ ﮐﻮﻥ ﺳﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺑﺘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﺗﺎﮐﮧ ﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﺳﮯ ﺑﭽﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﭽﮫ ﮐﮩﮯ، ﺗﻨﮓ ﮐﺮﮮ ﺗﻮ ﮔﮭﺮ ﺁﮐﮯ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺳﮯ ﺑﺘﺎ ﺳﮑﯿﮟ۔

ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺍﭼﮭﯽ ﮨﻮ، ﺍﺩﺍﺭﮮ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺁﺩﮬﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺣﻞ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﻮ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﻈﺮ ﺁﺭﮨﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﺑﭽﮯ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﺋﯿﮟ؟ ﮨﻤﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺫﮨﻨﯿﺖ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﺘﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺍﺣﺘﯿﺎﻁ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔

SHOPPING

مجرم حضرات زمین سے نہیں اگتے، معاشرے میں ہی پروان چڑھتے ہیں۔سارا کام حکومت کے کرنے کا نہیں ہے اور سارا کام عوام کے کرنے کا بھی نہیں۔ بلکہ ہر ایک کو اپنی اپنی  ذمہ داری کا احساس کرنا ہے، ٹھیک طریقے سے ادا کرنا ہے۔ چاہے وہ حکومت ہے، ادارے ہیں یا معاشرہ۔

SHOPPING

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *