• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • چین کے دنیا میں 100 سے زائد پولیس سٹیشن ہیں ، انسانی حقوق گروپ کا الزام

چین کے دنیا میں 100 سے زائد پولیس سٹیشن ہیں ، انسانی حقوق گروپ کا الزام

سپین کے شہر میڈرڈ میں موجود انسانی حقوق کے گروپ سیف گارڈ ڈیفنڈرز کی نئی رپورٹ میں الزام عائد کیا گیا ہے کہ چین کچھ میزبان ممالک کی مدد سے دنیا بھر میں 100 سے  زائد پولیس سٹیشن چلا رہا ہے۔

 

سیف گارڈ ڈیفنڈرز نے اپنی نئی رپورٹ میں الزام لگایا ہے کہ اسے اس بات کے شواہد ملے ہیں کہ چین بیرون ملک 48 اضافی پولیس سٹیشن چلا رہا ہے۔

قبل ازیں اس گروپ نے ستمبر کی رپورٹ میں پہلی بار ایسے 54 سٹیشنوں کے وجود کا انکشاف کیا تھا۔

سیف گارڈ ڈیفنڈرز کا کہنا ہے کہ اس نے کم از کم 53 ممالک میں سرگرم چین کی وزارت پبلک سکیورٹی کے چار مختلف پولیس دائرہ اختیار کی نشاندہی کی ہے جو ظاہری طور پر دنیا کے چاروں کونوں میں پھیلے ہوئے ہیں۔

انسانی حقوق گروپ کے مطابق اوورسیز پولیس اسٹیشن کے قیام کا مقصد جلاوطن چینی شہریوں کی نگرانی، انہیں ہراساں کرنا اور بعض صورتوں میں ان کی وطن واپسی میں مدد کرنا ہے۔ یہ پولیس سٹیشن چین کے یورپی اورافریقی ملکوں کے ساتھ دو طرفہ سکیورٹی معاہدے کے تحت قائم کیے گئے ہیں۔

دوسری جانب چین نے بیرون ملک غیر اعلانیہ پولیس فورس چلانے کی رپورٹ کی تردید کی ہے اور گزشتہ ماہ چینی وزارت خارجہ نے کہا تھا کہ امید ہے متعلقہ فریق کشیدگی پیدا کرنے کیلئے اسے بڑھاوا دینا بند کریں گے اوراسے چین کو بدنام کرنے کے طور پر استعمال کرنا ناقابل قبول ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors london

چین نے دعویٰ کیا ہے کہ یہ سہولیات کے انتظامی مرکز ہیں جو چینی تارکین وطن کو ان کے ڈرائیونگ لائسنس کی تجدید جیسے کاموں میں مدد کرنے کیلئے قائم کیے گئے ہیں۔

  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • merkit.pk

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply