• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • زمین پر کسی بھی جگہ ایک گھنٹے میں پہنچنا چاہتا ہوں ،ایلون مسک

زمین پر کسی بھی جگہ ایک گھنٹے میں پہنچنا چاہتا ہوں ،ایلون مسک

ٹیسلا، سپیس ایکس اور ٹوئٹر جیسی کمپنیوں کے مالک ایلون مسک دنیا بھر میں راکٹ پلیٹ فارم قائم کرنا چاہتے ہیں تاکہ لوگوں کو تیزترین سفری سہولیات فراہم کی جاسکیں۔

انڈونیشیا کے علاقے بالی میں جی 20 کانفرنس سے آن لائن خطاب کے دوران ایلون مسک نے کہا کہ وہ دنیا بھر میں راکٹ پلیٹ فارمز چاہتے ہیں ، ایسا کرنے سے لوگ زمین کے دوسرے حصے تک آواز کی رفتار سے 20 گنا زیادہ رفتار سے سفر کرسکیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ‘میرے خیال میں اگر ہم دنیا کے کسی بھی حصے میں ایک گھنٹے سے بھی کم وقت میں سفر کرسکیں تو دنیا حقیقی معنوں میں قابل رسائی ہوجائے گی’۔

خیال رہے کہ یہ ایلون مسک کا نیا منصوبہ نہیں بلکہ کئی برس سے وہ اس پر بات کر رہے ہیں۔

ستمبر 2017 میں آسٹریلیا کے شہر ایڈیلیڈ میں ایک کانفرنس سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ سپیس ایکس کی جانب سے مریخ پر انسانوں کو پہنچانے کے لیے بگ فلائنگ راکٹ (بی ایف آر) کو تیار کیا جائے گا۔ یہ راکٹ نہ صرف مریخ کا سفر کرسکے گا بلکہ کسی عام مسافر طیارے کی طرح زمین کے کسی بھی حصے کا سفر کرسکے گا ، اس راکٹ سے دنیا کے کسی بھی حصے کا سفر ایک گھنٹے سے بھی کم وقت میں ممکن ہوجائے گا۔

اب ایک بار پھر انہوں نے اس طرح کے خیالات کا اظہار کیا ہے ، انہوں نے کہا کہ اس ویڈیو کال سے 3 منٹ قبل بجلی چلی گئی تھی اور وہ اس وجہ سے اندھیرے میں بیٹھے ہوئے ہیں۔

جب ان سے پوچھا گیا کہ وہ کانفرنس میں شرکت کے لیے بالی کیوں نہیں آئے تو انہوں نے مذاق کرتے ہوئے کہا کہ ٹوئٹر کو خریدنے کے بعد ان کی مصروفیات میں بہت زیادہ اضافہ ہوگیا ہے۔

جب ان سے پوچھا گیا کہ اگر کوئی نوجوان ان کی طرح کامیاب ہونا چاہے تو کیا کرے؟ جس پر ایلون مسک نے کہا کہ ‘اپنی خواہش کے حوالے سے محتاط رہیں، مجھے نہیں معلوم کہ کتنے افراد میرے طرح ہوسکتے ہیں، ہوسکتا ہے کہ انہیں لگتا ہو کہ وہ میرے جیسے ہیں مگر جس طرح میں اپنے اوپر تشدد کرتا ہوں اس کا کوئی مقابلہ نہیں’۔

Advertisements
julia rana solicitors

ایلون مسک نے خود پر ہونے والی تنقید کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ ایسا کوئی راستہ نہیں جس سے ہم ہر ایک کو خوش کرسکیں۔

  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply