مقصد ، اہل ِ قلم ، اہل ِ زبان اور فوج کو ڈرانا ہے/گُل بخشالوی

کینیا کے جس علاقے میں سچائی کے علمبردار صحافی ارشد شریف کو  خاموش  اور غیر آباد راستے پر شہید کیا گیا وہ کینیا کے درالحکومت نیروبی سے تقریباً   100 کلومیٹر جنوب میں واقع ہے اور بظاہر ایسی جگہ نہیں جہاں ہمیں ارشد شریف جیسے صحافی کی موجودگی کی توقع ہو۔ یہ بہت ہی کم آبادی والا علاقہ ہے جہاں دور دور تک تا حدِ  نگاہ خاردار جھا ڑیوں کا جنگل  پھیلا ہوا ہے اس علاقے کو نا  صرف رات بلکہ دن میں بھی غیر محفوظ علاقہ تصور کیا جاتا ہے۔

کینیا پولیس کے سپیشل سروس یونٹ ماورائے قانون قتل اور جبری گمشدگیوں کے الزامات کی وجہ سے کینیا کے نئے صدر نے اپنی افتتاحی تقریر میں اس یونٹ پر پابندی کا اعلان کیا تھا کیونکہ اس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ انسانی حقوق کی پامالی میں ملوث ہے ،اب سوال پیدا ہوتا ہے کہ ارشد شریف اس غیر آباد علاقے میں کیوں گئے تھے  ؟

آج لاشوں پر سیاست کا  قائل طبقہ شہید ارشد شریف کے پوسٹ مارٹم کی تصاویر میڈیا میں دکھا رہا ہے اور ان کے درباری تجزیہ نگار شہید کے خاندان اور اُن  کے چاہنے والوں کے زخموں پر نمک پاشی کر رہے ہیں۔

پاکستان انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز ہسپتال کے ڈائریکٹر ڈاکٹر خالد مسعود کہتے ہیں یہ تصاویر ہسپتال سے ہی لیک ہوئی ہیں، تو سوال پیدا ہوتا ہے کیوں؟

کیالے پالک اینکر اور کاسہ لیس چینل کے ذریعے ارشد شریف پر قتل سے پہلے تشدد کی تصویریں اور شواہد نشر کرنے کا مقصد صرف اینکروں اور صحافیوں کو خوفزدہ کرنا ہے؟

پوسٹ مارٹم رپورٹ کی تصاویر نشر کرتے ہوئے نشر کرنے والے کو ذرّہ برابر بھی شرم نہیں آئی ، کیا وہ نہیں جانتا ہے کہ شہید کا تعلق اس کے قبیلے سے تھا؟

لگتا ہے شہیدارشدشریف کی تصاویرنشرکروانےوالے کا مقصد اپنی یزیدیت بربریت اورفرعونیت سے اہل ِ قلم ، اہل ِ زبان اور فوج کو ڈرانا ہے ، لیکن وہ بھول چکا ہے کہ جب کسی کردار کا خون گرتا ہے تو وہ بہتا نہیں جم جایا کرتا ہے۔

ایک دلیر صحافی کی شہادت ایک ایسا سوال ہے جس کا کسی کے پاس کوئی مثبت جواب نہیں ، سچ کیا ہے خدا جانتا ہے ،لیکن ہم اتنا ضرور جانتے ہیں کہ ہمارے دیس میں ہی نہیں دنیا بھر میں جھوٹ کی حکمرانی ہے، سچائی کو برداشت نہیں کیا جاتا ، ظلم کے خلاف حق اور صداقت کی آواز پر پابندی ہے اور جو اس پابندی کو تسلیم نہیں کرتا اس آواز کو خون میں نہلا کر دفن کر دیا جاتا ہے لیکن جھوٹ اور لاشوں پر حکمرانی کے قائل شیطان صفت نہیں جانتے کہ آخرت کی خوبصورتی کے پرستار ، نا تو جھکتے ہیں، نا بکتے ہیں اور نا ڈرتے ہیں ، اور ہم وطن دوست ، ایسے کرداروں کی شہادت پر سر اٹھا کر کہتے ہیں !

Advertisements
julia rana solicitors

تو نے ظالم گل فروشوں پر ستم جب کر دیئے
جام پھر اہلِ قلم نے اپنے خوں سے بھر دیئے
دے گئے بجھتے چراغوں کو نئی تم زندگی
تا ابد روشن رہیں گے اپنے اپنے گھر دیئے
ناز ہے تم پر تمہارے دیس کو ارشد شریف
ماؤ ں نے تم سے بہادر ، دیس کو دلبر دیے
صورت ِ انساں میں وہ شیطان دہشت گرد ہیں
حکمرانی کے لئے مغرب نے جو نوکر دیے
بد نصیبوں میں ہیں شامل اپنے وہ اہل قلم
جو جلاتے ہیں یزیدوں کے لئے در پر دیئے
جگمگاتے ہیں فلک پر شب کی تاریکی میں وہ
دیس کی تابندگی کو رب نے جو اختر دیئے
رنگ لاتا ہے شہیدوں کے لہو سے انقلاب
دین کو ابن علی نے بھی بہتر سر دئیے
دیس کے مردہ ضمیروں اور غداروں نے گل
کس قدر روشن دیئے اس دیس میں گل کر دئیے

  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply