اس لمحے کے آگے پیچھے کچھ بھی نہیں/ڈاکٹر ستیہ پال آنند

ہے ارتفاق یا اقران یا اخوان الزماں
کہ جس میں حاضر و موجود بھی ہیں زنگ آلود
رواں دواں کو بھی دیکھیں تو ایسے لگتا ہے
کہ منقضی ہے، فراموش کردہ، ما معنیٰ

اگر یہی ہے ، “رواں”، “حالیہ” اے ہمعصرو
جو پرسوں نرسوں بھی تھا، کل بھی تھا اور آج بھی ہے
تو بطن ِ فردا بھی لا ولد ہی رہے گا یہاں
نہ کوئی عاقبت، عقبےٰ، نہ آخرت ہو گی
نہ ہم کریں گے کبھی آنے والے کل کی بات
یہ “آج” ، گذرے ہو ئے”کل” کا نیم جاں خاکہ
یونہی چلے گا تزلزل میں ڈگمگاتا ہوا

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

یقیں تو تھا کہ نئی روح پھونکنے کے لیے
تمہارے جیسا کوئی آئے گا یہاں ، آنند
مگر قلم کے مسافر، نڈھال ،ضیق النفس
تھکن سے چور، کسل، ماندہ ، پاؤں ٹوٹے ہوئے
چلیں گے کیسے کسی تابناک فردا تک؟
کہیں بھی رستے میں تھک ٹوٹ کر ، لجیلے سے
کسی شجر کی گھنی چھاؤں میں پڑے ہوں گے

Advertisements
julia rana solicitors

میں جانتا ہوں کہ ہے کشمکش جگر کاوی
ہمارے پاس تو اب اٹھنے کی طاقت بھی نہیں
یہ” آج” گذر ے ہوئے کل کا ہے اگر خاکہ
تو کل” جو اگلا ہے،فی الحال ہو گا “آج” کا روپ!

  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply