سیلاب کی تباہ کاریاں اور پھل۔۔ محمد وقار اسلم

سیلاب کی تباہی کے خطرناک اوقات میں، اب تک تقریباً 60 فیصد پاکستان متاثر ہوا ہے۔ یہ اذیت ہے ایسی ہے کہ صرف وہی لوگ محسوس کر سکتے ہیں جنہوں نے سب کچھ کھو دیا ہے دوسرے ہمدردی ظاہر کرنے کی کوشش کریں گے لیکن زیادہ تر اس درد کا ان لوگوں پر برا اثر پڑے گا جنہوں نے اس سے نمٹا ہے۔ان رفاحی اداروں کو سلام ہے جو سینہ سپر ہوکر دکھ کی اس گھڑی میں اپنے ہم وطنوں کے ساتھ کھڑے ہیں اس سب میں جے ڈی سی، الخدمت فاؤنڈیشن، وسیلہ راہ،ملین سمائلز فاؤنڈیشن سمیت سینکڑون این جی او ز نے مثالی کردار ادا کررہی ہیں۔ خوراک کا بحران عالمی سطح پر تشویش کا باعث ہے کیونکہ ورلڈ فوڈ باسکٹ نے متعدد بار خبردار کیا ہے کہ یوکرین کی جنگ نے عالمی سطح پر خوراک کے بحران کو جنم دیا ہے۔ پاکستان میں قدرتی آفت نے حالات کو اور بڑھا دیا ہے اور ہنگامہ خیزی نے خوراک کی بھی قلت پیدا کر دی ہے۔ فصلیں تباہ برباد ہوگئیں سبزی اور پھل کی بیشتر فصلیں اجڑ گئیں، دیہاتوں کا کل سرمایہ مویشی بھی بہہ گئے اب تک ڈیڑھ ہزار لوگ اس آفت میں لقمہ اجل بن چکے اکثر و بیشتر کچے مکان زمین بوس ہوگئے۔۔جب ہم چیزوں کو ٹریک پر رکھنے کے لیے تیار ہوجاتے ہیں نقل مکانی کرنے والوں اور مشکل حالات سے دوچار ہونے والوں کی دادرسی کرلیتے ہیں۔ڈیم بنا لیں ے کو ترجیح بنا لیتے ہیں مستقبل میں نقصان کے خطرات کو کم کرنے کی حکمت عملی بنا لیتے ہیں. تو اس کے بعد ہماری پہلی ترجیح پھر سے پھلوں کی کاشت کو بڑے پیمانے پر لانا ہونی چاہیے کیونکہ یہ معیشت کے لیے لازمی ہے۔ پھلوں کا غذائیت میں نمایاں کردار ہے کیونکہ ان میں وٹامنز موجود ہوتے ہیں جو نقل و حرکت کو بڑھاتے ہیں اور آپ کے خلیات کو انفیکشن کے خلاف لڑنے کے لیے طاقتور بناتے ہیں۔ اس کے علاوہ، ان کے پاس بین الاقوامی مارکیٹ کی صلاحیت بھی ہے.
پھل بعد میں معدنیات اور وٹامنز سے بھرپور ہوتے ہیں کیونکہ انہیں حفاظتی خوراک کے طور پر بیان کیا جاتا ہے۔ پاکستان کو تیس اقسام کے پھلوں کی کاشت کے لیے موزوں ترین ماحول فراہم کیا گیا ہے۔ پرائیویٹ زونز پھلوں کی کاشت کاری کے لیے کام کر رہے ہیں لیکن حکومتی سطح پر اس سلسلے میں بہت کم کوششیں شامل ہیں۔ حکومت کی پالیسیاں کبھی بھی یکساں نہیں رہی ہیں اب تک اقدامات تو کیے گئے لیکن پورے نہیں ہوئے اور پھلوں کی کاشت کو نظر انداز کرنے کے اثرات نقش ہوں گے۔ پاکستان میں جو پھل بکثرت پائے جاتے ہیں ان میں سیب، انگور، آم، امرود، کیوی، آڑو، خربوزہ، زعفران، زیتون، اورنج، ایوکاڈو، اسٹرابیری، تربوز، خوبانی، چیری، ناشپاتی، پائن نٹ، کھجور اور بہت کچھ شامل ہے۔
پاکستان میں 764,258 ہیکٹر رقبے میں پھل کاشت کیے جاتے ہیں جو کہ معیار کے لحاظ سے وسیع ہیں۔ یہ بھی نوٹ کیا گیا ہے کہ زیادہ تر پھلوں کو مناسب فائدہ نہیں دیا جاتا ہے جس کی وجہ سے ان کی کاشت متاثر ہوتی ہے جس کی وجہ سے بڑے اسپیکٹرم میں ان کی بوائی کم ہو جاتی ہے۔
اگر حکومت نامیاتی پھل پیدا کرنے کے لیے کام شروع کرے تو وہ عالمی منڈی سے تین گنا حاصل کر سکتے ہیں۔ پاکستان میں حکومتوں نے کبھی بھی کاشتکاری کو کم کرنے میں دلچسپی نہیں دکھائی اور نہ ہی چھوٹے یا بڑے پیمانے کے کسانوں کی مدد کی اور انہوں نے اپنی طرف سے سب کچھ اگایا جو کہ قابل قدر ہے اور اس کی تعریف کی جانی چاہیے۔ پاکستان سنتری کا چھٹا سب سے بڑا پیدا کرنے والا ملک ہے جو مشرق وسطیٰ کو 32.5 فیصد تک برآمد کرتا ہے پاکستان لیموں کی پیداوار میں 10 واں اور لیموں کی مصنوعات کا 20 واں سب سے بڑا برآمد کنندہ ہے۔ پاکستان آم کا دوسرا سب سے بڑا برآمد کنندہ ہے اور اس پھل کے کاشتکاروں میں پانچویں نمبر پر ہے۔ پاکستان 535000 ٹن سے 86000 ٹن تک 300 اقسام کی کھجور برآمد کرنے والا تیسرا بڑا ملک ہے۔ یہ دنیا میں مصر، ایران، الجزائر، اور KSA.UAE اور دیگر ممالک میں 7 واں سب سے بڑا کھجور پیدا کرنے والا ملک ہے۔ پائن گری دار میوے پاکستان میں 21.6 فیصد تک پیدا ہوتے ہیں اور چین، جرمنی، فرانس اور مشرق وسطیٰ کے بعد دوسرے نمبر پر ہیں۔ پاکستان میں ریپسیڈ بہترین کریش فصل ہے جس کے بعد چاول اور مکئی کا نمبر آتا ہے۔

حال ہی میں، پھلوں کی برآمدات 435 ملین ڈالر تھیں جنہیں بوائی کے عمل میں بے کار پن کو ختم کرکے اور میکانزم کو ہموار اور جدید بنا کر مزید بڑھایا جا سکتا ہے۔ پاکستان بلوچستان اور کے پی کے بڑے کاشتکار ہیں لیکن مواد کے معاملے میں کمی کا شکار ہیں کیونکہ پنجاب اور سندھ میں بھی قابل کاشت اراضی ہے اور پھلوں کی کاشت کے بڑے پروڈیوسرز ہیں لیکن کیمیکل لگا کر پھلوں کو محفوظ کرنے کے لیے جو غیر مصنوعی نشونما کا طریقہ اپنایا جاتا ہے اس سے اس کا اعلیٰ معیار ختم ہو جاتا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors

پھلوں کی کاشت کے حوالے سے یہ بات نوٹ کی جاتی ہے کہ پھلوں کا فاضل ذخیرہ بہت زیادہ ہے لیکن ان کو سنبھالنے کی حکمت عملی ناکافی ہے جس کی وجہ سے یہ زیادہ مہنگا ہو جاتا ہے اور بالکل بھی پیداواری نہیں رہتا۔ پاکستان کو دنیا بھر میں پھلوں کا زبردست کاشتکار کہا جاتا ہے جس میں شمالی علاقہ جات اور پورے پاکستان سے کرشماتی پھل آتے ہیں لیکن نظام میں خامیوں کی وجہ سے سمگلی حاصل نہیں ہو سکی۔ جہاں تباہ کن جنگ معیشتوں کو سست کر رہی ہے وہیں پائیداری کے لیے پوری دنیا میں ایسے اقدامات کیے جا رہے ہیں جو بعد کے اثرات کے لیے پگھل سکتے ہیں۔
پاکستان کو پھلوں کو ایک اہم برآمد کرنے میں مصروف ہونا پڑے گا کیونکہ ایسا کرنے سے اس کی عظمت اور شرافت کا قد بلند ہو سکتا ہے۔ ایشین ڈویلپمنٹ بینک نے زور دیا ہے کہ پاکستان کو پھلوں اور سبزیوں کی کاشت میں زیادہ سے زیادہ مدد کرنے کے لیے گرین سگنل دیا جائے کیونکہ پاکستان کے پاس اس سلسلے میں زیادہ گنجائش ہے کیونکہ انتہائی زرخیز زمین ہے اور پھلوں میں سرمایہ کاری بہت زیادہ نتیجہ خیز ثابت ہو سکتی ہے۔ بیجوں کی بجائے پھلوں کی برآمدات میں اضافے کے اس نئے سنگ میل کو حاصل کرکے آنے والی کساد بازاری پر کافی حد تک قابوپایا جا سکتا ہے۔ سیلاب کی تباہ کاریوں کے نتیجے میں تباہ ہوں ے والی فصلی زمین پانی نکل جانے کے بعد زرخیز ہی رہتی ہے لہٰذا حکومت کو چاہیے کہ یہاں پھر سے فصلیں اگانے اور کسانوں کی داد رسی کرے

  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply