• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • سپریم کورٹ سے کچھ نہیں ملے گا ، تحریک عدم اعتماد لائیں۔۔ گل بخشالوی

سپریم کورٹ سے کچھ نہیں ملے گا ، تحریک عدم اعتماد لائیں۔۔ گل بخشالوی

تحریک انصاف اور مسلم لیگ (ق) نے ڈپٹی اسپیکر پنجاب اسمبلی کا فیصلہ مسترد کرتے ہوئے رات ڈیڑھ بجے سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں درخواست دائر کردی، درخواست میں حمزہ شہباز، ڈپٹی اسپیکر اور چیف سیکرٹری کو فریق بناتے ہوئے ڈپٹی اسپیکر کی گنتی کو بھی چیلنج کیا ہے کہ مسلم لیگ (ن) کے 7 ارکان ووٹ کاسٹ کرنے ہی نہیں آ ئے۔ یہ 7 لیگی ارکان گھروں میں بیٹھے رہے، ان کا ووٹ بھی انتخاب میں شمار کرلیا گیا۔

یاد رہے کہ پنجاب اسمبلی میں ہونے والی ووٹنگ کے نتیجے میں پی ٹی آئی کے امیدوار پرویز الہیٰ نے 186 ووٹ لیے جبکہ مسلم لیگ (ن) کے حمزہ شہباز نے 179 ووٹ   ملے تھے۔ووٹنگ کا عمل مکمل ہونے کے بعد ڈپٹی اسپیکر دوست مزاری نے (ق) لیگ کے سربراہ چوہدری شجاعت کا خط اسمبلی میں پڑھ کر سنایا۔ جس میں چوہدری شجاعت نے اپنی جماعت کے اراکین کو وزیر اعلیٰ پنجاب کے انتخاب میں حمزہ شہباز کے حق میں ووٹ دینے کی ہدایت کی تھی۔ڈپٹی اسپیکر کا کہنا تھا کہ اس خط کے مطابق سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میں جتنے بھی   (ق) لیگ کے ووٹ کاسٹ ہوئے وہ مسترد ہوتے ہیں اور میں اس بات کا اعلان کرتا ہوں کہ 10 ووٹ ختم ہونے کے بعد حمزہ شہباز وزیراعلیٰ پنجاب منتخب ہوگئے ہیں ۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

قابل ِ افسوس بات یہ ہے کہ قبر کی دہلیز پر کھڑے چوہدری شجاعت نے اپنے خاندانی وقا ر کا جنازہ نکال کر اپنے خاندان کے بڑوں کی عظمت اور پہچان کی لاش کو دفن کر دیا، جیسے عوام کے دلوں میں زندہ بھٹو خاندان کا نام آصف علی زرداری نے دفن کیا ہے۔

ڈپٹی سپیکر دوست محمد مزاری نے پی ڈی ایم کے ساتھ دوستی کا حق ادا کر کے دیس کو ایک بار پھر سیاسی عدم استحکام کے دلدل میں دھکیل دیا ہے ۔ اور اناؤں کی اس جنگ میں قوم اور دیس کا وقار بے دردی سے مجروح کیا جا رہا ہے ۔بلاول زرداری نے عوامی مینڈیٹ پر ڈاکہ ڈالنے والے ضمیروں کے سوداگر آصف علی زرداری کو خراج  تحسین پیش کرتے ہوئے کہا ہے ” ایک زرداری سب پہ بھاری “، درست کہا اس نے ، زرداری کی شیطانی سیاسی بصیرت  کا مقابلہ ممکن نہیں۔

سابق اٹارنی جنرل اور ماہر قانون عرفان قادر نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں کہا تھاکہ اگر پارٹی ہیڈ کی ہدایت کے برعکس کوئی ووٹ دے گا تو وہ ممبر ناصرف ڈی سیٹ ہو گا بلکہ اس کا ووٹ بھی گنتی میں شمار نہیں کیا جائے گا۔’اگرچہ آئین میں یہ کہیں نہیں لکھا ہوا کہ ایسے ممبر کا ووٹ شمار نہیں کیا جائے گا۔ کسی بھی ملک کا سپریم کورٹ ایسی کوئی شق آئین میں نہیں ڈال سکتا جو آئین میں نہیں لکھی ہوئی۔ اگر عدالت کی طرف سے ایسی کوئی شرط یا شق ڈالی جاتی ہے تو وہ قانون سازی کے مترادف ہو گا جس کا اختیار صرف پارلیمان کو ہے۔ لہذا سپریم کورٹ کا یہ فیصلہ جس کی بنیاد پر پنجاب کی وزارت اعلیٰ کے انتخاب کا فیصلہ ہوا ہے وہ ہی بالکل غلط ہے۔

قانونی ماہرین جو چاہیں کہیں، جس طرح چاہیں قانون کی تشریح کریں لیکن ہو گا وہی جو سپریم کورٹ چاہے گی اور سپریم کورٹ اس وقت پی ڈی ایم کے ہر اس جرم کے ساتھ ہے جس سے قومی وقار مجروح ہو، اس لئے سپریم کورٹ میں قانونی جنگ میں پرویز الہی  کو کچھ بھی حاصل نہیں ہو گا ، بہتر ہو گا کہ تحریک انصاف اور ق لیگ پنجاب اسمبلی میں تحریک ِ عدم اعتماد لا ئیں ۔

Advertisements
julia rana solicitors london

عمران خان نیازی اور پاکستانی عوام کے ساتھ دنیا بھر نے عوامی مینڈیٹ پر ڈاکہ ڈالنے والوں کو دیکھ لیا، اس قومی جرم میں اسٹیبلشمنٹ اور افواج ِ پاکستان کا کوئی کردار نہیں البتہ یہ یقین ہو گیا ہے کہ سپریم کورٹ پنجاب اسمبلی میں ہونے والے جرم میں پی ڈی ایم اور سپریم کورٹ برابر کے شریک ہیں۔

  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply