فادرز ڈے۔۔علی اصغر

ایک مرد کو زندگی میں تین بار زیادہ عزت دی جاتی ہے یعنی جب وہ پیدا ہوتا ہے، پھر دولہا بنتا ہے اور پھر قبر میں اتارتے وقت، اس کے علاوہ مرد کی جدوجہد بچپن سے شروع ہوجاتی ہے، پڑھائی ختم ہوتے ہی نوکری کی تلاش تاکہ والدین اور بہن بھائیوں کی روزی روٹی کا بندوبست کرسکے۔

روزگار کی تلاش میں جوتے گھِسا کر آخر نوکری ملتے ہی اپنی تمام تر خواہشات کو پسِ پشت ڈال کر والدین کے علاج کے لئے دوا کا بندوبست کرنا، چھوٹے بہن بھائیوں کی تعلیم کے اخراجات پورے کرنا اور بہنوں کا جہیز تیار کرنے میں جُت جاتا ہے، صبح سے شام تک خون پسینہ بہا کر شام کو جیب میں چند روپے لاتا ہے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

راستے میں کہیں من پسند کھانے کی چیز نظر آجائے تو خود کو یہ تسلی دیتا ہے کہ پھر کبھی کھا لوں گا آج بہن کے جہیز کے لئے جو کمیٹی ڈالی ہوئی وہ دے لوں، ماں کی دوا ختم ہوئی پڑی ہے وہ بھی لے جانی ہے، والد کی چپل ٹوٹ گئی ہے چلو سب سے پہلے وہ خریدتا ہوں، اور اگر مرد محنت مزدوری کے لئے کسی عرب ملک میں رہتا ہے تو اس کی حالت تب دیکھنے والی ہوتی ہے جب 52 سینٹی گریڈ گرمی میں تپتے صحراوں میں اینٹیں اٹھا رہا ہوتا ہے، یا کسی بلند و بالا عمارت پر چڑھ کر شیشے صاف کر رہا ہوتا ہے۔

سارا دن عربیوں سے گالیاں کھانے کے بعد شام کو ماں کو کال کرکے بتا رہا ہوتا ہے “میں اتھے بہوں خوش آں” ماں کہتی ہے وہ تیرا بھائی کہہ رہا ہے میرے لئے آئی فون یاد سے بھیجنا، مرد ماں کا حکم ہنس کر بجالاتا ہے چاہے وہ خود کئی دن سے سوکھی روٹی کھا رہا ہو۔

والدین اور بہن بھائیوں کے بعد مرد کے فرائض میں بیوی اور بچوں کے حقوق بھی شامل ہوجاتے ہیں، اب بیوی سے بات کرے تو ماں ناراض، ماں سے زیادہ بات کرے تو بیوی کا موڈ آف، مرد بیچارہ ساری زندگی ان دو خواتین کی صلح کرواتا رہتا ہے مگر کامیاب پھر بھی نہیں ہوپاتا۔ گھر والوں کی تمام تر ضروریات پوری کرنے کے لئے اپنے جسم پر حد سے زیادہ مشقت کا بوجھ ڈالتا ہے، عید والے دن ماں باپ بہن بھائی بیوی بچے نئے کپڑے پہنتے ہیں اور مرد وہی پچھلے سال والا کاٹن کا سوٹ اور کئی ماہ سے ڈبے میں پڑی چپل نکال کر پہن لیتا ہے اور اپنے گھر والوں کو دیکھ کر خوش ہوتا رہتا ہے۔

پیدائش سے بوڑھاپے تک فرائض سر انجام دیتے دیتے نظر ختم ہوجاتی ہے، کمر جھک جاتی ہے، گھٹنوں کی ہڈیاں چٹخنے لگتی ہیں تو ایک گلاس پانی مانگنے پر جواب ملتا ہے”ایک تو آپ کے کام ختم نہیں ہوتے” اگر کبھی اولاد کے سامنے اپنی کسی خواہش کا اظہار کر بھی بیٹھے تو یہ سننے کو ملتا ہے “آپ نے ہمارے لئے آج تک کیا ہی کیا ہے؟”

آخر ہزاروں خواہشات سینے میں چھپائے، دل میں سخت الفاظ کے درد لئے مرد مر ہی جاتا ہے، جنازہ صحن میں پڑا ہوتا ہے اور جائداد کی تقسیم کی باتیں شروع ہوجاتی ہیں، سب کو تب یہ حدیث یاد آتی ہے کہ جنازہ جلدی پڑھاؤ مردے کو زیادہ دیر نہیں رکھنا چاہیے، تب نہ کسی کو باپ کے حقوق یاد آتے نہ کوئی آیت یاد آتی نہ کوئی حدیث، بس کوشش ہوتی ہے جلد از جلد قبر میں اتار کر سکھ کا سانس لیا جائے۔

Advertisements
julia rana solicitors

پیدائش سے وفات تک اپنے خاندان اور خصوصاً اولاد کے لئے ہر قسم کا دکھ درد سہنے والے باپ کی عظمت کو سلام۔ ہمارے ہاں جہاں ماں کی شان کی احادیث سنائی جاتی ہیں وہاں باپ کی عزت و احترام بھی سکھایا جانا چاہیے۔بشکریہ اردو کالمز

  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk

مہمان تحریر
وہ تحاریر جو ہمیں نا بھیجی جائیں مگر اچھی ہوں، مہمان تحریر کے طور پہ لگائی جاتی ہیں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply