• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • جنگ دنیا میں ایک سو ملین لوگوں کے بے گھر ہونے کا سبب بنی ہے

جنگ دنیا میں ایک سو ملین لوگوں کے بے گھر ہونے کا سبب بنی ہے

اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ جنگ اور تشدد سے بے گھر ہونے والوں کی تعداد 100 ملین سے زیادہ ہو گئی ہے۔

الجزیرہ نے جمعرات کو اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین کے حوالے سے بتایا کہ دنیا میں جنگ، تشدد اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے بے گھر ہونے والے افراد کی تعداد 100 ملین سے زیادہ ہو گئی ہے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

کمشنر نے کہا کہ یوکرین پر روس کا حملہ اس کے بعد سے جبری نقل مکانی کا سب سے تیز ترین اور سب سے بڑا بحران ہے۔

پناہگزین

اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین (یو این ایچ سی آر) نے جمعرات کو اپنی تازہ ترین رپورٹ میں کہا ہے کہ دنیا بھر میں پناہ گزینوں اور پناہ کے متلاشیوں کی تعداد گزشتہ دہائی میں دوگنی ہو کر اب تک کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق 2021 کے آخر تک دنیا میں تقریباً 90 ملین افراد بے گھر اور پناہ کے متلاشی تھے۔ متعلقہ اعداد و شمار کے آغاز سے یہ تعداد بے مثال ہے۔ یو این ایچ سی آر کے ماہرین کا اندازہ ہے کہ یہ تعداد اب 100 ملین تک پہنچ چکی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بہت سے ممالک میں جنگ، تشدد اور جبر عروج پر ہے، اور حالیہ مہینوں میں صورتحال میں شدت آئی ہے۔ روس کا یوکرین پر حملہ اب صورتحال کو مزید خراب کر رہا ہے۔

پناہ گزینوں کے لیے اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر فلیپو گرانڈے نے کہا کہ وہ یوکرین میں جنگ کے بارے میں پرامید نہیں ہیں اور انہیں خدشہ ہے کہ یہ طویل مدتی تنازع میں بدل جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ “اس کے علاوہ، یوکرین میں جنگ نے دنیا کے دیگر حصوں میں انسانی امداد پر منفی اثرات مرتب کیے ہیں۔”

انہوں نے عطیہ دینے والے ممالک سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنی امداد میں اضافہ کریں تاکہ کم از کم انسانی امداد پر عمل درآمد ہو سکے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے اب تک جو کچھ دیکھا ہے وہ اضافی امداد نہیں بلکہ مستقل امداد ہے۔ “صورتحال یہ ہے کہ یوکرین کو اس وقت بہت زیادہ امداد مل رہی ہے اور دیگر بحران زدہ ممالک مزید محروم کیے جا رہے ہیں۔”

یو ان او

یوکرین، شام، افغانستان، یمن، ایتھوپیا، وینزویلا، اور جنوبی سوڈان؛ اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین کے مطابق جنگ زدہ اور بحران زدہ ممالک کی فہرست طویل ہے جن کے شہریوں کو مدد کی ضرورت ہے۔

پناہ گزینوں اور پناہ گزینوں کی میزبانی کرنے والے ممالک کو بھی اس فہرست میں شامل کیا جا سکتا ہے۔ وہ ممالک جو عموماً پڑوسی ہوتے ہیں اور بہت سے معاملات میں ان سے نمٹنے کے لیے زیادہ سرمایہ اور وسائل نہیں ہوتے۔

رپورٹ کے مطابق 2021 کے اختتام تک صرف ترکی، کولمبیا، یوگنڈا اور پاکستان میں 80 لاکھ سے زائد مہاجرین اور دیگر ممالک سے پناہ کے متلاشی تھے۔

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا: “بے گھر ہونے کی رفتار اور پیمانہ ان امکانات سے کہیں زیادہ ہے جس پر بے گھر افراد اور پناہ کے متلاشیوں کے لیے حل تلاش کیے جا سکتے ہیں۔ بحران کا حل بین الاقوامی تعاون سے ہی حاصل کیا جا سکتا ہے۔ گرانڈی کے مطابق، تاہم، ان تعاون کی صورت حال ابتر ہو گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر ممالک ایک دوسرے کے ساتھ تعاون نہیں کریں گے تو وہ اس منفی رجحان کو نہیں روک سکیں گے۔ درحقیقت ہر کوئی ہارنے والا ہے۔ “لیکن میں پریشان ہوں کیونکہ یوکرین پر روس کے حملے نے سیاسی سطح پر تعاون کی تمام کوششوں کو نقصان پہنچایا ہے۔”

گرانڈی نے مزید کہا کہ انہیں امید ہے کہ یہ رجحان بدل جائے گا، ورنہ آنے والے سالوں میں دنیا میں پناہ گزینوں اور پناہ گزینوں کی تعداد میں ایک بار پھر اضافہ ہوگا۔

پناہ گزین
یو این ایچ سی آر کی رپورٹ میں بھی امید کی کرن ہیں۔ مثال کے طور پر، ایسے لوگوں کی تعداد جو اپنے آبائی ممالک میں بے گھر ہو چکے ہیں اور وطن واپس آنے کے قابل ہو چکے ہیں، 2021 میں اضافہ ہوا ہے، جو کہ کورونا کی وبا شروع ہونے سے پہلے کی سطح تک پہنچ گیا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors

پناہ گزینوں کے لیے اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر گرانڈی نے کہا، “یوکرین میں جنگ ظاہر کرتی ہے کہ اگر دنیا کی حکومتیں، خاص طور پر یورپی حکومتیں تعاون کرنا چاہیں تو پناہ کے متلاشیوں کی بڑی لہروں کو کس طرح روکا جا سکتا ہے۔”

  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply