• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • باب دمشق ۔ یروشلم – اسرائیل ( مقبوضہ فلسطین )-تالیف : محسن علی خاں

باب دمشق ۔ یروشلم – اسرائیل ( مقبوضہ فلسطین )-تالیف : محسن علی خاں

تصویر میں نظر آنے والا یہ دروازہ یروشلم کا قدیم دروازہ ہے۔ اس راستے کو یہودیوں کی مقدس کتاب میں شکیم کہا گیا ہے۔ اسی نسبت سے اس کو باب شکیم اور رومن ایمپائر کی نسبت سے باب نابلس بھی کہا جاتا ہے۔
جب کہ عربی میں اس دروازہ کو باب العمود اور باب النصر ( فتح کا دروازہ ) بھی کہا جاتا ہے۔
اوٹامن ایمپائر (خلافت عثمانیہ) میں اس کی تعمیر کے بعد اب اس کو باب دمشق کہا جاتا ہے۔
یروشلم کے تین دروازے جو فی الحال بند ہیں، ان کے نام :
۱- باب النبی ﷺ
۲- باب سلیمان
۳- باب الذھبی ( اس کو باب الرحمتہ، باب التوبہ ) بھی کہا جاتا ہے۔
باب دمشق ان آٹھ دروازوں میں سے ہے جو اب کھلے ہیں۔ باقی سات دروازوں کے نام جو اب کھلے ہیں :
۲- باب الجدید
۳- باب الساھرۃ
۴- باب الاسباط
۵- باب الولید
۶- باب المغاربۃ
۷- باب داؤد
۸- باب الخلیل
علی عبداللّٰہ صاحب نے ایک نظم کا عربی سے اردو ترجمہ کیا ہے۔ جو مقدس یروشلم کی محبت میں لکھی گئی ہے۔
بـَــكــَــيــْـــتُ .. حــَــتــَّــى اِنــْـــتــَــهــَـــت الــدُّمــُـــوع
میں رویا، حتی کہ آنسو بھی ختم ہو گئے
صــَـــلــَّــيــْــتُ .. حــَــتــَّــى ذَابــَـــت الــشــُّــمــُـــوع
میں نے عبادت کی یہاں تک کہ شمعیں بھی گل ہو گئیں
ســَــألــْـــتُ عــَــنْ مــُــحــَــمــَّــدٍ فــِــيــكِ، وعــَــنْ يــَــســُــوع
تجھ سے، میں نے محمد (صلی اللہ علیہ وسلم) اور مسیح(علیہ السلام) کے بارے پوچھا
يــَــا قــُـــدْسُ، يــَــا مــَــدِيــنــَـــةً تــَــفــُــوحُ أَنــْــبــِــيــَــاءَ
اے قدس(یروشلم)! اے انبیاء کی خوشبوؤں سے معطر شہر
يــَــا أَقــْـــصــَــرَ الــدُّرُوبِ بــَــيــْــنَ الأَرْضِ والــســَّــمــَــاءِ
اے زمین و آسمان کے بیچ مختصر ترین راستے
يــَــا قــُــدْسُ، يــَــا مــَــنــَــارةَ الــشــَّــرَائــِــــع
اے قدس، اے مذاہب کے مینار
يــَــا طــِــفــْــلــَــةً جــَــمــِــيــلــَــةً مــَــحــْــرُوقــَـــةَ الأصــَـــابــِـــعِ
اے انگلیوں جلے، حسین بچے
حــَـــزيــنــَــةٌ عــَــيــْـــنــَــاكِ، يــَــا مــَــدِيــنــَـــةَ الــبــَـــتــُــول
تمہاری آنکھیں غمگین ہیں، اے کنواری مریم کے شہر
يــَــا وَاحــَــةً ظــَــلــِــيــلــَـــةً مــَـــرَّ بــِــهــَــا الــرَّســُــول
اے سایہ دار نخلستان، گزرگاہ پیغمبر(محمد صل اللہ علیہ وسلم)
حــَــزيــنــَـــةٌ حــِــجــَــارَةُ الــشــَّـــوَارِع
گلیاں و پتھر اداس ہیں،
حــَــزيــنــَــةٌ مــَــآذِنُ الــجــَـــوَامــِــع
مساجد و مینار مغموم ہیں،
يــَــا قــُــدْسُ، يــَــا جــَــمــِــيــلــَــةً تــَــلــْــتــَـــفُّ بــِــالــســَــوَادِ
اے قدس، اے سیاہی میں لپٹی حسین عورت
يــَــا قــُــدْسُ، يــَــا مــَــدِيــنــَــةَ الأحــْـــزَانِ
اے قدس، اے غموں کے شہر
يــَــا دَمــْــعــَــةً كــَــبــيــرَةً تــَــجــُــولُ فــِـي الأَجــْــفــَــانِ
اے آنکھ میں تیرنے والے اشک
يــَــا لــُــؤْلــُــؤةَ الأدْيــَـــانِ
اے مذاہب کے موتی
مــَــنْ يــَــغــْــســِــلُ الــدِّمــَــاءَ عــَــنْ حــِــجــَــارَةِ الــجــُــدْرَانِ ؟
کون پتھریلی دیواروں سے لہو کو دھوتا ہے؟
مــَــنْ يــُــنــْــقــِــذُ الإنــْــجــِــيــلَ ؟
کون انجیل کی حفاظت کرتا ہے
مــَــنْ يــُــنــْــقــِــذُ الــقــُــرآنَ ؟
کون قران کو بچاتا ہے؟
مــَــنْ يــُــنــْــقــِــذُ الــمــَــســِــيــحَ مـِــمــَّــنْ قــَــتــَــلــُــوا الــمــَــســِــيــحَ ؟
کون مسیح کو قاتلوں سے بچاتا ہے؟
مــَــنْ يــُــنــْــقــِــذُ الإنــْــســَـــانَ ؟
کون انسان کو محفوظ رکھتا ہے؟
يــَــا قــُــدْسُ .. يــَــا مــَــدِيــنــَــتــِــي
اے قدس، اے میرے شہر
يــَــا قــُــدْسُ .. يــَــا حــَــبــيــبــَــتــِــي
اے قدس، اے میری محبت
غــَــداً .. غــَـــداً .. ســَــيــُــزْهــِـــرُ الــلــَّــيــْــمــُــونُ
کل، ہاں کل، لیموں کے پودے کھلیں گے
وَ تــَــضــْــحــَــكُ الــعــُــيــُـــونُ ..
اور آنکھیں مسکرائیں گی
وَ تــَــرْجــَــعُ الــحــَــمــَــائــِـــمُ الــمــُــهــَـــاجــِـــرَةُ ..
اور مہاجر فاختائیں لوٹیں گی
إلــى الــســُّـــقــُــوفِ الــطــَّــاهــِــرَة
پاکیزہ چھتوں کی جانب،
وَ يــَــرْجــِــعُ الأطــْــفــَـــالُ يــَــلــْــعــَــبــُـــون
اور بچے کھیلیں گے،
وَ يــَــلــْــتــَــقــِــي الآبــَــاءُ و الــبــَـــنــُـــون
اولاد و والدین پھرسے جمع ہوں گے
عــَــلــى رُبــَـــاكِ الــزَّاهــِـــرَة ..
تمہاری پھیلتی ہوئی پہاڑیوں پر
يــَــا بــَــلــَـــدَ الــســَّـــلامِ وَ الــزَّيــْـــتـــُـــونِ
اے شہر امن، اے شہر زیتون!
اے یروشلم تو آباد رہ، تو شاد رہ، تو راستوں کی دھول دیکھ کہ کہیں کوئی عیسی علیہ السلام تیری جانب واپس آنے ہی والا ہے۔ اور پھر تیرا سایہ بھی تیری طرح بمعنی یروشلم(امن کا گہوارہ) ہو گا۔

  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply