سیلابی پانیوں کی چولستان تک روانی ۔۔انجینئر ظفر وٹو

چولستانیوں کے لئے جانور کی موت خاندان کے جوان پُتر کی موت ہے۔ اگر آپ سوشل میڈیا پر شیئر ہونے والی تصویروں کو خشک سالی سے مرتے ہوئے چند جانوروں کی تصویریں سمجھ رہے ہیں تو جان لیجیے کہ چولستان کی لولی لنگڑی معیشت کا سارا دارومدار ہی ان مویشیوں کی افزائش پر ہے۔

چولستان میں خشک سالی اگرچہ سال بدل بدل کر آتی ہے لیکن آتی ضرور ہے۔ کبھی شدید تو کبھی کم شدید۔ یہ ایک سخت بنجر زمین ہے جہاں بارش کم اور ناقابل اعتبار ہے۔ چولستان میں پانی کا سارا دارومدار ہی اس غیر یقینی بارش پر ہے۔ زمینی پانی تو ہے مگر بہت نیچے اور کھارا ہے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

خشک سالی کی اتنی یقینی آمد کے باوجود بھی پچھلے 75 سال سے اس مسئلے کے مستقل حل کے لئے عملی اقدامات کم ہی کئے گئے ہیں۔ چولستان ڈویلپمنٹ اتھارٹی اور PCRWR کی طرف سے بارشی پانی کے لئے ٹوبے، کنڈ اور بڑے تالاب تو بنائے گئے لیکن ان کی کم تعداد اور بارش نہ ہونے کی وجہ سے پانی کی کمی کے مسئلے کی شدت کم نہ ہوسکی۔

نہروں کے نظام کو چولستان میں پھیلانے کو میسر پانی کی کمی ، چولستانی انسانی آبادی کو کم ترجیح دینا اور متعلقہ اداروں کی سُستی کی وجہ سے اب تک ایک ناممکن کار ہی سمجھا گیا ہے حالانکہ اس مسئلے کا اگر کوئی بہتر حل ہوسکتا ہے تو وہ سیلابوں کے موسم میں دریاؤں کے پانیوں کا رخ اس علاقے کی طرف موڑنا ہے۔جس کے دریاؤں پر بنے موجودہ ہیڈ ورکس اور بیراج ہی کافی ہیں ۔ صرف لنک نہروں کے نظام میں کچھ بہتری لانے کی ضرورت ہوگی۔

اگرچہ یہ بالکل آسان اور سستا کام نہیں لیکن اس میں درپیش چیلنجز اس انسانی المیے کے مقابلے میں بہت کم ہیں جو تقریباً ہر سال چولستان کے باسیوں کی زندگی، ان کے خواب اور ان کی تہذیب کو کھاتا جا رہا ہے۔

دریاؤں سے موڑا گیا یہ سیلابی پانی نہ صرف چولستان کے ٹوبے، کنڈ اور تالاب بھر کر ہر سال کچھ عرصہ کے لئے پانی کی ضرورت پوری کر سکتا ہے بلکہ مستقل بنیادوں پر اس کی فراہمی زیر زمین پانی کو ری چارج کرکے اس کی کڑواہٹ بھی کم کرسکتی ہے۔ ساتھ ساتھ ہی ساتھ ملک میں سیلابوں کے نقصانات کو بھی کسی حد تک کم کر سکتا ہے۔

یقیناً یہ ایک بہت مشکل اور مہنگا کام ہے مگر کلی طور پر ناممکن نہیں۔ مختلف دریاؤں کے سیلابی پانی کو موڑ کر چولستان لانے کے کچھ موجود مواقع اور راستے یہ ہوسکتے ہیں۔

1- دریائے سندھ کا سیلابی پانی چشمہ بیراج سے موڑنا
دریائے سندھ کا سیلابی پانی چشمہ جہلم لنک کینال کے ذریعے دریائے چناب میں تریموں بیراج از مقام جھنگ میں لے جائیں ۔وہاں سے تریموں سندھنائی لنک کینال کے ذریعے چناب سے یہ سیلابی پانی دریائے راوی میں سندھنائی بیراج پر لے جائیں اور وہاں سے یہ سندھنائی میلسی لنک کینال کے ذریعے یہ سیلابی پانی سے چولستان لے جائیں۔(نقشے پر سرخ لائن ملاحظہ کریں)

2-دریائے سندھ کا سیلابی پانی تونسہ بیراج سے موڑنا
تونسہ پنجند لنک کینال سے دریائے سندھ کا سیلابی پانی موڑ کر دریائے چناب میں ڈال دیں (ملتان کے مقام پر) اور پھر اسے پنجند بیراج سے دریائے چناب سے نکال لیں اور عباسیہ کینال کو بڑا کرکے اس کے ذریعے چولستان میں پھیلا دیں (نقشے پر پیلی لائن ملاحظہ کریں)

3-دریائے سندھ کا سیلابی پانی تونسہ بیراج سے موڑنا
تونسہ پنجند لنک کینال سے دریائے سندھ کا سیلابی پانی موڑ کر دریائے چناب میں ڈال دیں (ملتان کے مقام پر) ۔ یہاں ایک نیا ملتان بیراج بنا لیں اور پھر نئی ملتان جہانیاں میلسی قائم پور لنک کینال کے ذریعے چولستان میں پھیلا دیں (نقشے پر سبز لائن ملاحظہ کریں)

4-دریائے چناب کا سیلابی پانی
تریموں بیراج از مقام جھنگ سے تریموں سندھنائی لنک کینال کے ذریعے چناب سے سیلابی پانی دریائے راوی میں سندھنائی بیراج پر لے جائیں اور وہاں سے سندھنائی میلسی لنک کینال کے ذریعے یہ سیلابی پانی سے چولستان لے جائیں۔(نقشے پر سرخ لائن ملاحظہ کریں) ۔
اس کے علاوہ پنجند بیراج سے عباسیہ کینال کے ذریعے بھی نکالا جاسکتا ہے (سیریل نمبر 2، پنجند سے پیلی لائن)
نیا ملتان بیراج بنا لیں اور پھر نئی ملتان جہانیاں میلسی قائم پور لنک کینال کے ذریعے چولستان میں پھیلا دیں (سیریل نمبر3، ملتان سے آگے سبز لائن)

5۔ دریائے راوی کا سیلابی پانی
سیلابی پانی دریائے راوی میں سندھنائی بیراج سے سندھنائی میلسی لنک کینال کے ذریعے سے چولستان لے جائیں۔(سیریل نمر 1, نقشے پر سندھنائی سے سرخ لائن ملاحظہ کریں)

اگرچہ دریائے ستلج خشک ہوچکا لیکن اگر کبھی کبھار اس میں بھی انڈیا زیادہ سیلاب کی صورت میں پانی چھوڑ دے تو ہمارے پاس اسلام بیراج پر اسے نکالنے کا متبادل بندوبست ہونا چاہئے جو کہ چولستان میں پھیلا دیا جائے۔ (مالٹائی لائن ملاحظہ فرمائیں)

یہ تجاویز صرف ایک فریم ورک فراہم کرتی ہیں اور ان پر غور کرکے مزید بہتر کیا جاسکتا ہے۔ بڑے سیلابوں کے دوران عموماً ان نہروں کو بند رکھا جاتا ہے مگرڈیزائن میں مناسب تبدیلیاں کرکے سیلابی پانی کو ان نہروں میں بیراج سے چھوڑا جا سکتا ہے یا پھر ان تجاویز کو ناممکن سمجھ کر رد بھی کیا جاسکتا ہے لیکن ایک کوشش کیوں نہ کی جائے۔

میں نے صرف موجود دستیاب مواقع کی نشاندہی کی ہے امید ہے متعلقہ ادارے اس سوچ پر پہلے ہی کام کر رہے ہوں گے۔
پاکستان کے زمینی رقبے کا 17 فی صد سے زیادہ صحرا ہے جس میں صحرائے تھل، چولستان، تھر، نوشکی اور خاران وغیرہ کے علاقے شامل ہیں۔ تھوڑے بہت فرق سے ہر صحرائی علاقے کے لوگ خشک سالی کے اس کرب سے گزر رہے ہیں۔

اچھا ہے کہ اس مسئلہ کو اس دفعہ سوشل میڈیا پر توجہ مل رہی ہے۔ اس سے آگاہی پھیلے گی اور متعلقہ حلقوں تک بات پہنچے گی۔تاہم چولستان کے اس مسئلے کا کوئی شارٹ کٹ حل نہیں۔ مستقل بنیادوں پر لمبے عرصے کی کوشش کے بعد ہی کچھ فرق پڑ سکتا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors london

چولستان کی انسانی آبادی کو سب سے اہم ترجیح سمجھا جائے گا تو شائد پھر ہی سیلابی اور نہری پانی کو یہاں تک پہنچانے پر سوچا جا سکے گا۔

  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply