بار بار بُلا یاربّ۔۔طیّبہ ضیا ء چیمہ

حرم مکہ و مدینہ میں رمضان المبارک کے دو عشرے گزارنے کے بعد پاکستان روانگی کے موقع پر دل انتہائی مغموم ہے۔ اپنے گھر بار بار بلا یارب۔۔ فتح مکہ کا تاریخی دن آتا ہے۔ ذراتصور کیجئے اس لمحے کا جس وقت فاتح عالم آقا نامدار محمد رسول اللہ ﷺ اپنے آبائی علاقے اور اللہ سبحان تعالیٰ کے محترم شہر مکہ معظمہ میں داخل ہو تے ہیں اور خشوع و خضوع اور سجدہ شکر کا یہ عالم ہے کہ آپ کی ٹھوڑی مبارک سواری کے پالان کو چھو رہی ہے۔

اللہ کے حبیب دس سال بعد فاتحانہ انداز میں اس مکہ مکرمہ میں داخل ہو رہے ہیں جہاں انہیں اور ان کے اصحابؓ و اہل بیت ؓ کو اذیتیں دی جاتی تھیں، مذاق اڑایا جاتا تھا حتیٰ کہ امن والے شہر سے نکلنے پر مجبور کر دیا گیا اور دس سال بعد 17 رمضان المباک کی صبح رسول اللہ ﷺ مکہ روانہ ہوئے اور اپنے سبز دستے کے جلو میں مکہ اس شان سے داخل ہوئے کہ ابوسفیان نے حضرت عباسؓ سے پوچھا “اے عباس! یہ کون لوگ ہیں؟ انہوں نے کہا اے ابو سفیان! یہ نبوت ہے۔”

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

فاتحین کا جلوس آگے بڑھا، حضرت زبیرؓ نے مسجد فتح کے پاس رسول اللہ ﷺ کا جھنڈا گاڑ دیا۔ اس کے بعد رسول اللہ مہاجر و انصار کے جلوس میں مسجد حرام کے اندر تشریف لے گئے۔ آگے بڑھ کر حجر اسودکو چوما اور اس کے بعد بیت اللہ کا طواف کیا، آپ نے طواف اپنی اونٹنی پر بیٹھ کر کیا۔ اس وقت آپ کے ہاتھ میں ایک کمان تھی اور بیت اللہ کے گرد اور اس کی چھت پر 360 بْت تھے۔

آپ ﷺ اسی کمان سے ان بْتوں کو ٹھوکر مارتے جاتے تھے اور کہتے جاتے “حق آ گیا اور باطل چلا گیا، باطل جانے والی چیز ہے۔” اور آپ کی ٹھوکر سے بْت چہروں کے بل گر جاتے تھے۔ پھر بیت اللہ کے اندر تشریف لے گئے، وہاں موجود بْتوں کو بھی پاش پاش کر ڈالا اور پھر وہیں آپ نے نماز اداکی۔ اس کے بعد آپ بیت اللہ کے دروازے پر تشریف لائے۔

قریش سامنے مسجد حرام میں صفیں لگائے بیٹھے تھے۔ ہجوم قابل دید تھا۔ آپ نے کعبہ کے دروازے کے دونوں پٹ تھامے اور نیچے بیٹھے قریش سے مخاطب ہو کر فرمایا “اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں، وہ واحد ہے، اس کا کوئی شریک نہیں، اس نے اپنا وعدہ سچ کر دکھایا، اپنے بندے کی مدد کی اور تنہا سارے جتھوں کو شکست دی۔

اے قریش کے لوگو! اللہ نے تم سے جاہلیت کی نخوت اور باپ دادا پر فخر کا خاتمہ کر دیا۔ سارے لوگ آدم علیہ السلام سے ہیں اور آدم علیہ السلام مٹی سے۔” اس کے بعد یہ آیت تلاوت فرمائی “اے لوگو! ہم نے تمہیں ایک مرد اور ایک عورت سے پیدا کیا اور تمہیں قوموں اور قبیلوں میں تقسیم کیا تاکہ تم ایک دوسرے کو پہچان سکو۔ تم میں اللہ کے نزدیک سب سے باعزت وہی ہے جو سب سے زیادہ متقی ہو، بے شک اللہ جاننے والا اور خبر رکھنے والا ہے۔”

اس کے بعد آپ ﷺ نے فرمایا “قریش کے لوگو! تمہارا کیا خیال ہے، میں تمہارے ساتھ کیسا سلوک کرنے والا ہوں؟ انہو ںنے کہا “آپ کریم بھائی ہیں۔” آپ نے فرمایا “تو میں تم سے وہی بات کہہ رہا ہوں جو حضرت یوسف علیہ السلام نے اپنے بھائیوں سے کہی تھی کہ آج تم پر کوئی سرزنش نہیں، جاؤ تم سب آزاد ہو۔”

عام معافی کے بعد نماز کا وقت ہو چکا تھا۔ رسول اللہ ﷺ نے حضرت بلال کو حکم دیا کہ کعبہ پر چڑھ کر اذان دیں۔” سبحان اللہ! وہ کیا منظر تھا، بلال حبشی فتح مکہ کے موقع پر کعبہ کی چھت پر کھڑے اذان دے رہے تھے اور قریش سر جھکائے بیٹھے تھے، عرش تا فرش انوار کی بارش برس رہی تھی، آقا سجدہ ریز تھے، جذبہ شکر سے غلاموں کی آنکھیں اشکبار تھیں، مکہ کی وادی بلال کی اذاں سے گونج رہی تھی اور پہاڑ لرز رہے تھے۔

مکہ میں رسول اللہ ﷺ نے 19 روز قیام فرمایا، اس دوران آپ شعائر اسلام کی تجدید فرماتے رہے۔ یہ رسول اللہ ﷺ کی پیغمبرانہ زندگی کا آخری مرحلہ ہے، جسے آپ نے 23 سال کی طویل جدوجہد، مشکلات و مشقت، ہنگاموں اور فتنوں، فسادات اور جنگوں اور خونریز معرکوں کے بعد طے کیا تھا۔

Advertisements
julia rana solicitors london

بشکریہ نوائےوقت

  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply