افطاریات۔۔مرزا یاسین بیگ

افطاری ہر روزےدار کا بنیادی حق ہے مگر ہر افطاری کو دیکھ کر ایسا لگتا ہے جیسے روزے دار دوسروں کا حق بھی کھاجانا چاہتا ہے۔

افطاری اور جہیز کے لوازمات کبھی ختم نہیں ہوتے، جتنا ڈالو کم نظر آتا ہے۔ ہر افطاری میں ایک روزےدار کے ساتھ تین سے چار بےروزےدار بندھے ہوتے ہیں جو فضائل رمضان پر ایسی جامع اور رقت آمیز تقریر کررہے ہوتے ہیں جیسے ہمارا ان پڑھ وزیرِ سائنس، ٹیکنالوجی سائنس پر کررہا ہوتا ہے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

ہر روزے کی تان کھجور پر آکر ٹوٹتی ہے۔ کھجور اور پکوڑوں کے بغیر روزہ ہے نہ مسلمان۔ ہر اچھے روزےدار کو روزہ رکھنے کی دعا کم اور روزہ کھولنے کی دعا زیادہ یاد رہتی ہے۔ ماہرینِ روزہ اس کی وجہ یہ بتاتے ہیں کہ روزہ رکھنے کی دعا سحری میں سب کچھ کھالینے کے بعد پڑھنی پڑتی ہے اور پیٹ بھرجانے کے بعد خدا کب یاد رہتا ہے۔

افطاری کے وقت زبان تو زبان آنتیں بھی قل ھواللہ پڑھ رہی ہوتی ہیں۔ اچھا مردِ مومن وہی ہے جو نکاح میں قبول ہے، قبول ہے، اور افطاری کے وقت افطار کی دعا تیزی سے پڑھ سکے ورنہ ڈر رہتا ہے کہ کھجور اور دلہن دوسرے کے ہاتھ نہ لگ جائے۔ رمضان میں کھجور اور عید الاضحٰی میں جانوروں کی بےدریغ قربانی مسلمان کی شان ہے۔

کھجور کے بعد دوسری للچائی نظر پکوڑوں پر ہوتی ہے۔ پکوڑے جتنے خستہ، چٹپٹے اور گرما گرم ہوں روزےدار کے روزے کو اتنی ہی زیادہ تسکین ملتی ہے۔ افطار وہ واحد وقت ہے جب لوگ ملکی سیاست اور موبائل فون کی گھنٹی تک بھول جاتے ہیں۔ ہاتھ، منہ، دانت اور زبان میں سے کس کی حرکت سب سے زیادہ تیز رہتی ہے اس کا حساب بعد میں میزبان کو نہ سہی اپنے اپنے پیٹ کو ضرور دینا پڑتا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors london

دنیائے نماز میں یہ بات وثوق سے کہی جاتی ہے کہ مومن کا دل جس نماز میں سب سے کم لگتا ہے وہ ہے رمضان میں مغرب کی نماز۔ ایک مولوی کا کہنا ہے رمضان میں مغرب کی اذان جتنی بھلی لگتی ہے، افطاری درمیان میں چھوڑ کر نماز کیلئے اٹھنا، اتنا ہی برا، یہ ایسے ہی ہے جیسے نکاح کے بعد دولہے کو جاب پر جانا پڑجائے۔

  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply