بہروپیے۔۔آغر ؔندیم سحر

بہروپیے۔۔آغر ؔندیم سحر/  ہماری زندگی کا سب سے بڑا المیہ یہ ہے کہ ہمیں دشمنوں کے ساتھ ساتھ بہروپیوں کا بھی سامنا ہوتا ہے۔کوئی آپ کا دشمن ہے’ممکن ہے آپ اس سے آسانی سے بچ نکلیں مگر بہروپیا شخص آپ پہ کہاں کہاں سے وار کرے گا’یہ آپ نہیں جان پاتے۔یہی وجہ ہے کہ اکثر اوقات آپ کو وہاں سے تیر لگتے ہیں’جہاں سے آپ کو گمان بھی نہیں ہوتا۔یہ ایسا مسئلہ ہے جو میرے عہد کے ہر دوسرے قلم کار’صحافی اور سوشل آدمی کو درپیش ہے ’جس شخص نے عمر سے زیادہ کام کیا یا جس نے بیساکھیاں تلاش کرنے کی بجائے اپنی محنت سے سروائیو کیا’میرے عہد نے اسے تسلیم نہیں کیا۔یہ بات میری سمجھ سے بالاتر ہے کہ ان نام نہاد دوستوں یا بہروپیوں کا اصل مسئلہ کیا رہا ہے اوروہ کس بنیاد پر اختلاف کرتے رہے۔ہم نے تو کامیاب اور متحرک لوگوں کے خلاف ایسے لوگوں کو بھی باتیں بناتے دیکھا جو پوری زندگی خود توایک لفظ نہ لکھ سکے’کسی کے لکھے پر شیخیاں بگھارتے رہے مگر پراپیگنڈا کرنے’کامیاب لوگوں کی زندگیوں پر کیچڑ اچھالنے اور آگے بڑھنے والوں کی ٹانگیں کھینچنے کے علاوہ وہ کوئی کام نہیں کر پائے۔ کسی کے پاس عہدہ تھا تو وہ اس کا فائدہ اٹھاتا رہا’کوئی کامیاب دوستوں کے کندھوں پر کھڑا ہو کر اپنا قد بڑا کرتا رہا’کوئی شاگرد نہ پال سکا تو ایک استاد پال لیا اور اس کے نام پر ‘‘قد آور’’لکھاری بن گیا۔میں کبھی کبھی حیران ہوتا ہوں کہ اس منفی سرگرمی سے کیا حاصل ہوا؟وقتی شہرت یا چند مشاعرے’بس؟کیا زندگی کا یہی حاصل ہے؟ہم ایسے بونے لوگ ہیں کہ جب کسی کے کام کو چیلنج نہیں کر سکتے تو اس کی ذات کے منفی پہلوؤں کی تشہیر شروع کر دیتے ہیں اور یوں ایک ہارے ہوئے سپاہی کی طرح شور ڈالنے لگتے ہیں۔

ہم سب کو ایسے دوستوں کا سامنا رہا ہے جن کو آغاز میں مَیں نے بہروپیا کہا’ایسا کیوں ہوا’یہ ہم سب کو سوچنے اور سمجھنے کی ضرورت ہے۔کیا ہم اتنے مجبور اور لاچار ہیں کہ ہم اپنی صفوں میں موجود’ ان نالائقوں اور نکموں کا مقابلہ نہیں کر سکتے جنہوں نے ہماری جیبوں پہ بھی ڈاکہ ڈالا’ہماری محفلوں میں بیٹھ کر عزت و شہرت بھی پائی اور جب یہاں سے اٹھے تو کسی اور محفل میں ہمارے ہی شعروں اور تحریروں کا مذاق اڑاتے رہے،اور ستم تو یہ ہے کہ ہمارے خلاف وہ لوگ بولتے’لکھتے اور شور مچاتے رہے جن سے ہم زندگی میں نہ ملے نہ کبھی بات کی۔یہاں تک کہ وہ لوگ بھی ہمارے خلاف برسرِ پیکار رہے جن کے نام تک سے ہم واقف نہیں تھے۔مجھے ندیم بھابھ کا ایک شعر یاد آ گیا:
ستم تو یہ ہے کہ میرے خلاف بولتے ہیں
وہ لوگ جن سے کبھی میں نے بات بھی نہیں کی

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

کچھ روز قبل سوشل میڈیا پر کسی نے اس شعر کے پہلے مصرعے میں ‘‘بولتے’’ کی جگہ‘‘ بھونکتے’’ بھی لگایا۔خیرکیسی عجیب بات ہے کہ آپ پر سنگ زنی کرنے والوں نے بھی آپ کے بارے میں صرف سنا ہوتاہے’آپ سے ان کا بالواسطہ یا بلا واسطہ کوئی تعلق نہیں رہاہوتا۔ایسے ہی ایک واقعہ سناتا چلوں’کچھ روز قبل ایک سینئر شاعر سے زندگی میں پہلی بار ایک تقریب میں ملاقات ہوئی’تقریب کے بعد ہم کھانے پر بیٹھے اور تقریباً ایک گھنٹہ مختلف موضوعات پر بات چیت ہوتی رہی۔جب وہ دوست جانے لگے تو گلے ملتے ہوئے بولے‘‘بھائی آپ کے بارے میں جو سنا’آپ تو اس سے بالکل برعکس نکلے’’۔میں نے بھی مزید کچھ جاننے کی کوشش نہیں کی کیوں کہ مجھے علم ہے کہ ہم سب بغیر تحقیق کیے دوسروں کے بارے منفی یا مثبت رائے رکھنے میں ماہر ہیں۔اس کے علاوہ بھی درجنوں بار ایسا ہو چکا’بلکہ گزشتہ دنوں ایک دوست کا فون آیا اور چند سینئرز پروفیسرز اور دانش وروں کا نام لے کر بتانے لگا کہ آپ کے بارے ان کی یہ رائے ہے’میں نے مسکرا کر انھیں دعا دی ’میں سمجھتا ہوں کہ ہمارے خلاف بولنے والے یا لکھنے والے حقیقت میں ہمارا حوصلہ بڑھا رہے ہوتے ہیں’ہمیں ایسے عناصر کی متعصب اور شرپسند کاروائیوں سے پریشان نہیں ہونا چاہیے بلکہ ان کا شکریہ ادا کرنا چاہیے۔

Advertisements
julia rana solicitors london

بادِ مخالف کا کام آپ کا راستہ روکنا ہوتا ہے’ہمت تو آپ کے پروں میں ہونی چاہیے کہ وہ بادِ مخالف کا مقابلہ کر سکتے ہیں یا نہیں۔اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ وہی شخص آپ کا راستہ روکے گا جو خود نکما ہوگا یا جسے آپ سے کوئی خطرہ ہوگا۔ایسے لوگ جب آپ پر سامنے سے آ کر وار نہیں کر سکتے تو آپ سے محبت کرنے والوں اورآپ کے قریبی دوستوں کے کان بھرتے ہیں تاکہ کسی طرح سے آپ کو تنہا کر سکیں حالانکہ یہ بہروپیے اتنا بھی نہیں سمجھ سکتے کہ عزت اور ذلت تو خدا کے اختیار میں ہے۔آپ کا منفی عمل ’آپ کی تربیت کی عکاسی کر رہا ہوتا ہے۔میں یہ بات پورے وثوق سے کہتا ہوں کہ آپ کامیاب لوگوں کو عزت دینا شروع کر دیں’خدا اس کے بدلے آپ کو کامیاب کرے گا۔ذاتیات اور شخصیات کو ڈسکس کرنے کی بجائے نظریات کو ڈسکس کرنا شروع کر دیں’خدا آپ کو پھل دار درخت بنا دے گا۔کسی کی عزت و شہرت کو خاک میں ملاتے ملاتے ’ہم خود خاک میں مل جاتے ہیں جس کا احساس ہمیں بہت دیر سے ہوتا ہے۔راہ چلتے لوگوں پر آوازیں کسنے والے ایک دن اپنی آواز کھو دیتے ہیں اور راہ چلنے والے منزل پا جاتے ہیں لہٰذا ہمیں محنتی اور متحرک لوگوں کے لیے سگِ آوارہ کی بجائے ایک پھل دار شجر کا کردار ادا کرنا چاہیے۔اگر ہم کسی کو کچھ دے نہیں سکتے تو کم از کم ان کا راستہ روکنے کی بجائے’راستہ آسان کرنا چاہیے۔اس سے بڑی کیا سپورٹ ہو سکتی ہے کہ لوگوں کے لیے آسانیاں پیدا کرتے جائیں، سنی سنائی منفی باتوں پر کان دھرنے کی بجائے دوستوں کی مثبت باتوں کی تشہیر کریں اور ان کا ساتھ دیں۔انسان خطا کا پتلا ہے’اس سے غلطیاں ہر حال میں ہوں گی مگر اس کا مطلب یہ نہیں کہ ہم ان سے کنارہ کریں یا ان کے منفی پہلوؤں کو ڈسکس کریں بلکہ بہتر یہ ہے کہ انھیں سمجھائیں’ان کے مثبت کام پر تھپکی دیں اور ان کے لیے راستہ ہموار کریں۔سگِ آوارہ جیسے لوگ آوازیں کستے’ٹانگیں کھینچتے رہ جاتے ہیں اور منزل پانے والے منزل پا جاتے ہیں۔

  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk

آغر ندیم سحر
تعارف آغر ندیم سحر کا تعلق منڈی بہاءالدین سے ہے۔گزشتہ پندرہ سال سے شعبہ صحافت کے ساتھ وابستہ ہیں۔آپ مختلف قومی اخبارات و جرائد میں مختلف عہدوں پر فائز رہے۔گزشتہ تین سال سے روزنامہ نئی بات کے ساتھ بطور کالم نگار وابستہ ہیں۔گورنمنٹ کینٹ کالج فار بوائز،لاہور کینٹ میں بطور استاد شعبہ اردو اپنی خدمات سرانجام دے رہے ہیں۔اس سے قبل بھی کئی اہم ترین تعلیمی اداروں میں بطور استاد اہنی خدمات سرانجام دیتے رہے۔معروف علمی دانش گاہ اورینٹل کالج پنجاب یونیورسٹی لاہور سے اردو ادبیات میں ایم اے جبکہ گورنمنٹ کالج و یونیورسٹی لاہور سے اردو ادبیات میں ایم فل ادبیات کی ڈگری حاصل کی۔۔2012 میں آپ کا پہلا شعری مجموعہ لوح_ادراک شائع ہوا جبکہ 2013 میں ایک کہانیوں کا انتخاب چھپا۔2017 میں آپ کی مزاحمتی شاعری پر آسیہ جبیں نامی طالبہ نے یونیورسٹی آف لاہور نے ایم فل اردو کا تحقیقی مقالہ لکھا۔۔پندرہ قومی و بین الاقوامی اردو کانفرنسوں میں بطور مندوب شرکت کی اور اپنے تحقیق مقالہ جات پیش کیے۔ملک بھر کی ادبی تنظیموں کی طرف سے پچاس سے زائد علمی و ادبی ایوارڈز حاصل کیے۔2017 میں آپ کو"برین آف منڈی بہاؤالدین"کا ایوارڈ بھی دیا گیا جبکہ اس سے قبل 2012 میں آپ کو مضمون نگاری میں وزارتی ایوارڈ بھی دیا جا چکا ہے۔۔۔آپ مکالمہ کے ساتھ بطور کالم نگار وابستہ ہو گئے ہیں

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply