عورتوں کی مشابہت اختیار کرتے مرد ۔۔نعیم احمد باجوہ

مارچ میں ایک ہاہا کار مچ جاتی ہے۔  عورت  مارچ کے حق  میں نعرے اور مخالف نکتہ نظر ہر طرف موضوع بن جاتا ہے۔ ایک طبقہ ہر صورت میں اس مارچ کو کامیاب کرنے اور دوسرا اس عورت مارچ کے مد مقابل اپنی دوکانداری سجاتے ہوئے  مارکیٹ میں نئے برانڈ کے احتجاج لانے پر مصر ہے ۔ بہرحال ہم ہر صورت میں عورت کی  تعلیم،سماجی و معاشرتی  خود مختاری ، ا س کی رائے کا احترام، حقوق کا خیال رکھنا اور اسے معاشرے کا ایک  اہم فرد گردانتے ہوئے برابری کی سطح پر عزت و احترام سے بات کرنے کے قائل ہیں ۔

اس وقت عورت مارچ کے حامی اورمخالفین کے نکتہ نظر کو زیر بحث لانا مقصود نہیں ۔ لیکن اس ماہ مارچ  میں عین عورت مارچ سے تین دن قبل ایک مظاہر ہ ایسا بھی ہو اہے جس نے سوچنے پر مجبور کر دیا ہے کہ  عورت کی انتہائی حد تک تذلیل کرنے والے ، ا س کی خود مختاری پر ڈاکہ ڈالنے والے  ، ا  س کے حقوق غصب کرنے والے ،اسے پاؤں کی جوتی گرداننے والوں کو  اپنا سیاہ  چہرہ چھپانے کے لئے آخر عورت کا لباس ہی کیوں ملتا ہے۔پشاور کے ایک کلینک میں ایک برقع پوش  “خاتون” داخل ہوتی ہے  جو بہت تکلیف  میں ہونے کا ڈرامہ رچاتے ہوئے موقع پر موجود  ڈاکٹر محمد شاہد احمد صاحب کے قریب ہوتی ہےاورمحدود  فاصلے سے ڈاکٹر صاحب  کے سر پر فائر کردیتی ہے۔ ڈاکٹر موقع پر  شہید ہوجاتا ہے۔بعد ازاں معلوم ہوتا ہے کہ وہ کوئی خاتون  نہیں تھی بلکہ ایک سیاہ رو بدبخت تھا جس نے  اپنے سیاہ کارنامے کو چھپانے کے لئے کسی معصوم کی طرح نقاب اوڑھ رکھا تھا۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

عورت کے لبا س میں چھپ کر اپنے مذموم مقاصد کی تکمیل  او رقانو ن کی نظروں سے خود کو بچانے  کی کوشش کرنے کا یہ کوئی  پہلا واقعہ نہیں ۔اب شاید اس طرح کے واقعات   زیادہ ہونے لگے ہیں ۔صرف 2022 میں ہی دو تین خبریں ایسی ہیں جن میں یہی عمل دہرایا گیا ہے  کراچی جناح ہسپتال میں ایک وارڈ میں گھس کر دو ڈاکٹروں سے  الجھ کر اورانہیں زخمی کرکے بعد ازاں گرفتار ہونے  والا “برقع پوش  خاتون” دراصل اسی وارڈ میں ایک نرس کو قتل کرنے کے لئے ، آئی تھی ،آیا تھا۔

پھر 6 فروری 2022 کےروزنامہ  جنگ  کے مطابق” پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق جنوبی وزیرستان میں گاؤں سرواکئی میں خفیہ اطلاعات پر آپریشن کیا گیا جس میں کالعدم ٹی ٹی پی کا دہشت گرد اللہ نور پکڑا گیا۔آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ دہشت گرد اللہ نور برقع پہن کر فرار کی کوشش کر رہا تھا تاہم پکڑا گیا۔”

حالیہ تاریخ میں  اسلام آباد میں لال مسجد آپریشن  کا واقعہ  تو ابھی تازہ  ہے۔ جب ہزاروں معصوم  جانوں کی زندگی داؤ پر لگانے ، انہیں بند گلی میں دھکیلنے کے بعد ”  مرد مجاہد ” اسی طرح برقع پوش عورت کی مشابہت اختیار کئے سر نیوڑے کسی محفوظ منزل کی تلا ش میں تھا۔ایسے مجاہد پھر مرد میدان بن کر  میدان عمل میں ڈٹ کیوں نہیں سکتے؟ دوسروں کی زندگیاں  سستی اور ان کی بہت قیمتی ہے کیا؟بعد ازں اس برقع پوش کو   قومی ٹی وی پر دوبارہ برقع پہنانا اور کیمرے کے سامنے گھونگھٹ اٹھانے پر مجبور کرنا ایک دوسری انتہا ء تھی۔

بہرحال  ایسے مردوں کے بارے  میں او رکیا کہا جا سکتا ہے  سوائے  اس کے جو ان کے متعلق  نبی کریمﷺ  پہلے سے ہی فرما چکے ہیں ۔
عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہما سے روایت ہے، وہ کہتے ہیں: اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم  نے عورتوں کی مشابہت اختیار کرنے والے مردوں اور مردوں کی مشابہت اختیار کرنے والی عورتوں پر لعنت کی ہے۔ (بخاری)

Advertisements
julia rana solicitors

جنگ نیوز لنک
جنوبی وزیرستان سے برقع میں فرار ہوتے ہوئے دہشت گرد گرفتار‎ – YouTube
جنوبی وزیرستان میں آپریشن، برقع میں فرار ہوتے ہوئے دہشت گرد گرفتار  (jang.com.pk)

  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

چوہدری نعیم احمد باجوہ
محبت کے قبیلہ سے تعلق رکھنے والا راہ حق کا اایک فقیر

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply