• صفحہ اول
  • /
  • نگارشات
  • /
  • موجودہ معاشرتی صورت حال پر ما بعد نوآبادیات کے اثرات ۔۔نادیہ عنبر لودھی

موجودہ معاشرتی صورت حال پر ما بعد نوآبادیات کے اثرات ۔۔نادیہ عنبر لودھی

استعماری قوتیں جمہوری قوتوں کو پنپنے نہیں دے سکتی- استعماری قوتوں کے جبری استبداد کا طریقہ بہت ہی بھیانک ہے – کسی ملک کی ثقافتی ، مذہبی اور اخلاقی اقدار کو یہ ایک سازش کے تحت تبدیل کرتی رہتی ہیں – تبدیلی کا یہ عمل ذہنی غلامی کی نا ختم ہونے والی شکل میں سامنے آتا ہے۔

جب بھی نوآبادکار کسی ملک یا زمین کو اپنی کالونی بنانے کی سعی کرتے تھے تو وہاں پہلے سے موجود سارا نظامِ زندگی بدل کے رکھ دیتے تھے -برطانوی نوآبادکاروں نے بھی ہندوستان سے نا صرف اسباب اور وسائل لوٹ لیے بلکہ یہاں کاسماجی ڈھانچہ ایسا بدلا کہ آج ، ڈیڑھ دو صدیاں گزر جانے کے بعد بھی ہم اس کو ــ’’ڈی-کلونیلائز‘‘ نہیں کرپائے۔ ہندو ستانیوں سے صرف ان کی زبانیں چھینی نہیں گئی بلکہ مقامی زبانوں کو کم تر قرار دے کر ان زبانوں کو لسان ِ ممنوع بنانے کی کوششیں بھی کی گئی-

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

ان زبانوں کی جگہ غیر ملکی زبان کو دے دی گئی مقامی سطح پر انگریزی سکول اور کالج قائم کر دیے گئے جن کا مقصد استعماری قوتوں کے اپنے مفادات میں تھا جن میں فرنگی تراجم کا سہارا لے کر انگریزی زبان و ادب کی تعلیم دینے لگے اور مقامی زبانوں کی تحقیر کا ایک سلسلہ بھی شروع کردیا گیا کہ ہندستان کی زبانوں کو جدیدیت سے عاری قرار دیا گیا اور فرسودہ کہا گیا –

نئی سیاسی حد بندیاں قائم ہونے کے بعد بھی یہ سلسلہ رک نہیں سکا – نو آبادیاتی پھیلاؤ مابعد نو آبادیات میں منتقل ہوگیا اور ذہنی غلامی ، احساس کمتری ، اپنی قومی زبان سے عدم دلچسپی بڑھتی گئی آج صورت حال یہ ہے کہ نوجوانوں کی بڑی تعداد کج فہمی کا شکار ہے – معاملہ صرف یہاں تک محدود نہیں ہے -ٹیکنالوجی کی اس نئی یلغار میں اخلاقی قدریں ختم ہوتی جارہی ہیں- نئی نسل تک پہنچنے والا غیر اخلاقی مواد ، نامکمل علم ، مکمل شخصی آزادی کا تصور ، مذہبی اقدار سے دوری معاشرے کی کھوکھلی جڑوں کو تیزی سے کھا رہی ہے – خارجی ماحول کی شدت داخلی شخصیت کو ٹکروں میں بانٹ رہی ہے – یہ سلسلہ ذاتی پسند ناپسند ، لباس ،اخلاق ہر معاملے پر اثر انداز ہورہا ہے ۔ جدید رجحانات کے اتباع کی یہ شدت بظاہر مسائل کے حل کی کوششیں ہے لیکن در پردہ یہ دلدل میں اترنے کانام ہے – آج استبدادی قوتوں کا طریقہ کار بدل چکا ہے لیکن عزائم وہی ہیں جو آج سے کئی سو سال پہلے تھے یعنی حکومت کرنا –

لیکن اس دفعہ ان کا نشانہ ہندوستان کے مغل حکمران نہیں ہیں، ریاستوں کے نواب نہیں ہیں، ہندوستان کی دولت نہیں ہے بلکہ ہماری نئی نسل ہے – وہ نسل جس کی ذہنی بالیدگی از حد ضروری ہے –
مابعد نو آبادیاتی معاشرتی صورت حال پست سے پست ہونے کی وجوہات اس احساس کمتری میں کہیں چھپی ہوئی ہیں جس کا شکار نئی نسل ہوتی جارہی ہے ٹیکنالوجی کی اس یلغار کے دور میں فرد واحد مزید تنہا ہوتا جارہا ہے – اس تنہائی اور کم مائیگی کے احساس کو کم کرنے کے لیے جو حل تلاش کیے جارہے ہیں ان کے نتائج ہماری اخلاقی قدروں سے متصادم ہیں – انسیسٹ (Incest) جنسی ہرا سگی اور جنسی زیادتی جیسے واقعات نمودار ہو رہے ہیں – جن کا آغاز ممنوعہ ویب سائٹس پر اس نوعیت کا مواد اپ لوڈ کر کے کیا گیا – مابعد نو آبادیاتی ایجنڈے کا ایک حصہ حیوانی شہوانیت کو آخری حد تک تسکین آور بنانا ہے – حرُمت کے رشتوں کی پامالی اسی ضمن کی ایک مکروہ سوچ ہے –
جس کو معاشرے میں پھیلایا جارہا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors london

ذہنی غلامی کی ایک شکل ڈالرز کی ترغیب ہے جو یوٹیوب اور دیگر کماؤ ایپس کے ذریعے دی جارہی ہے – معاشرے میں پیسے کا لالچ بڑھتا جارہا ہے اور حصول ِ تعلیم کا فقدان بھی دکھائی دے رہا ہے – بہت ہوشیاری سے ترغیبات کو ضروریات میں بدلا جارہا ہے اور پھر ان کو ترجیحات میں بدلا جارہا ہے -ان میں ہی فرد کو الجھا دیا گیا ہے – یہ ہی ما بعد نو آباد کاروں کو مروجہ طریقہ ہے -غلام معاشرے کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دینا –

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply