ایک درویش میرے گاؤں میں

SHOPPING

میرے آبائی علاقے میں ایک نیم خواندہ ، نان بائی نوجوان نہایت خوب صورت شاعری کرتا ہے، گاؤں جانا ہو تو وہ راستے میں پڑتا ہے، اکثر سلام دعا ہی ہوتی ہے، کبھی کوئی بہانہ بن جائے تو بیٹھک ہوجاتی ہے، ایسے موقعے پراس سے اس کے اشعار سننے کی فرمائش کرتا ہوں، اس دفعہ سردیوں کی چھٹیوں میں چند لمحوں کے لیے بیٹھے تو میری فرمائش پر ایک خوب صورت غزل سنائی۔ مطلع تھا:
ایک درویش میرے گاؤں میں
اسم پھونکے ہے آتماؤں میں
اس کی ایک اور غزل کے چند اشعار آپ کو اس کے غیر معمولی ٹیلنٹ کی داد پر مجبور کریں گے، کہتا ہے:
کیوں بناتا ہے بار بار مجھے
کوزہ گر چاک سے اتار مجھے
یوں نہ ہو تاب ہی نہ لائے کوئی
اس قدر کر نہ تاب دار مجھے
جاتے جاتے فقیر بستی سے
کر گیا مجھ پر آشکار مجھے
پسِ دیوار دیکھ سکتا ہوں
نظر آتا ہے آر پار مجھے
قیصر عباس قیصر کی خوب صورت شاعری میں سے کچھ اور بھی شئر کرنے کی کوشش کروں گا، ان شاء اللہ۔

SHOPPING

Avatar
ڈاکٹر شہباز منج
استاذ (شعبۂ علومِ اسلامیہ) یونی ورسٹی آف سرگودھا،سرگودھا، پاکستان۔ دل چسپی کے موضوعات: اسلام ، استشراق، ادبیات ، فرقہ ورانہ ہم آہنگی اور اس سے متعلق مسائل،سماجی حرکیات اور ان کا اسلامی تناظر

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست ایک تبصرہ برائے تحریر ”ایک درویش میرے گاؤں میں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *