شکیل عادل زادہ۔۔ علامہ اعجاز فرخ

(حیدرآباد دُکن میں مقیم علامہ اعجاز فرخ چمن اردو کا وہ گُل ہیں کہ خوشبو چمن سے گزرنے والے کا بدن بھی مہکا دیتی ہے۔ آج جب سوشل میڈیا اور مکالمہ جیسے پلیٹ فارمز نے زمان و مکاں کے فرق کو ناپید نہ سہی بہت کم تو کر دیا ہے، کیا فرق پڑتا ہے کہ علامہ صاحب مقیم کہاں ہیں، انکی نثر کے قتیل اردو کی عالمی دنیا میں ان سے فیضیاب ہوتے ہیں۔ علامہ نصیر ترابی کے بھانجے (ہم زلف کےبیٹے) نے منبر تو شاید انکی محبت میں سنبھالا مگر منبر کی خوش قسمتی کہ رزق اس سے وابستہ نہ  تھا۔ چنانچہ علامہ صاحب آجکل کی روایت اور ہٹو بچو کے شور سے دور ہیں۔ قلم علامہ فرخ نے کس کی محبت میں تھاما یہ راز وہ کم ہی کھولتے ہیں۔ مگر انکی نثر اس اُوج پہ ہے کہ معاصرین میں اب ان کا ہم سر شاذ ہی ملتا ہے۔ انکی مہربانی کہ  مکالمہ کیلئے کرم نوائی پہ آمادہ ہوئے، جوہمارا اعزاز ہے۔ یہ مضمون شکیل عادل زادہ جیسے عبقری پہ ہے اور برصغیر میں ان پہ پہلا مضمون تھا۔ مضمون پڑھتے وقت یادرکھیے گا کہ شکیل صاحب کی الفت میں ڈوب کر لکھا گیا ہے- ایڈیٹر)

شب وعدہ کہہ گئی ہے شبِ غم دراز رکھنا

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

شکیل عادل زادہ۔’’سب رنگ‘‘ کے حوالے سے

وہ شاید بیسویں صدی کی ساتویں دہائی کے آخری سال تھے ۔ جب میں نے شکیل عادل زادہ کی تحریر پڑھی تھی۔وہ بھی کس طرح کہ مکہ مکرمہ ، جدہ اور مدینہ منورہ کے Aerial Survey اور Photo Grammetry کے ضمن میں سعودی عرب جانا پڑا۔ مکہ مکرمہکی فضائی پٹی چھوٹے ہوائی جہاز کیلئے ہی تھی اور شہر سے دور تھی۔ برطانیہ کی ٹیم میں عیسائی بھی تھے اور حدود میں داخل نہ ہوسکتے تھے سو خیمے ہوائی پٹی کے ساتھ ہی لگے تھے۔ دشت کو دیکھ کے گھر یاد آیا۔ دشت بھی دشتِ تنہائی بھی ۔کبھی کبھی کوئی بگولہ آ نکلتا اور سفر کرتا ہوا گذر جاتا تب ہوائی جہاز کے پنکھ پھڑپھڑاتے۔ لگتا پرندہ پاؤں بدل رہا ہے ۔ وحشتِ دل کچھ اور بڑھ جاتی۔ سونچ گھر کے آنگن تک پہنچتی ضرور تھی لیکن لوٹ آتی تو سوائے سکوت کے کچھ ساتھ نہ لاتی۔ جب چاند سبز چشم ہوجائےتب یہی کچھ ہوتا ہے کہ وہ ہمسفر بھی رہے اور ہمنوائی نہ ہو۔ اسی کو دھوپ چھاؤں کا کھیل کہتے ہیں۔ ایک شام اپنی پرواز مکمل کرکے میں جدہ چلاگیا۔ رسالوں کی دوکان پر کئی پاکستانی میگزین رکھے تھے میں یوں ٹوٹ پڑا گویا پل بھر کی دیر ہوئی تو یہ خواب بھی سراب نہ ہوجائے۔ سپنس، جاسوسی ڈائجسٹ ، نیا اُفق ، عالمی ڈائجسٹ اور نہ جانے کیا کچھ، اسی میں ’’ سب رنگ‘‘ بھی ۔میں نے سب سمیٹ لئے کہ کوئی تو ہم کلام ہو۔ ہم سخنی ابھی دور تھی ۔اسی میں دیوتا کی صورت محی الدین نواب بھی ، فرہاد علی تیمور کی نقاب اوڑھے، الیاس سیتاپوری ، ضیاء تسنیم بلگرامی، شوکت صدیقی ، فرخ جمال ، ایم اے راحت، مرزا امجد بیگ اور کیاکچھ نہیں تھا ۔ ایسے میں سب رنگ کے کچھ ورق اُلٹے تو سندھی ادیب شیخ ایاز سے ملاقات ہوگئی ۔ کہانی تھی ’’ ہنس مُکھ‘‘ مگررُلاگئی ۔ پھرنہ جانے اسیری کا وہ لمحہ کہاں سانس روکے کھڑا تھا ۔ ’’ بازیگر‘‘ کا شاید ایک صفحہ پڑھا تھا۔ اُس کے بعد تو نہ’’دامنوں کو خبرتھی نہ آستینو کو‘‘یہ شاید وہ وقت تھا جب بابرزماں خاں جیل میں تھے اور کرشنا جی کے التفات کے بوجھ تلے دبےہوئے تھے ۔ کہانی مجھے شب گزیدہ کر گئی۔اردلی جب چائے لئے خیمے میں داخل ہوا تو پو پھٹنے کوتھی۔ تمام رات خیمے کا در کھلارہا ۔ شبنم پھول کو چومتی ہے تو یوں کہ گل تازہ کو گلِ تر کردے۔ کمبخت منافق ہوا رات بھر ریت سے یوں اٹھکھیلی کرتی رہی کہ مجھے خاک بسرکر گئی ۔بدن ٹوٹ رہا تھا لیکن خیمے میں ایک مانوس خوشبو سی تھی۔ ایسے لگتا کہ یہ خوشبو نہ جانے کب سےوجود کے نہاں خانے میں سربستہ رہی۔ راز کی طرح ۔۔ جو کبھی آفتاب کے آگے بے حجاب نہ ہوئی ۔ کمبخت فراق تپیدہ سورج ، سارادن شب کے تعاقب میں رہا لیکن وہ البیلی روشنی کے شہزادے کی رہگذر پَر بال کھولے بیٹھ گئی ۔ جب وہ مغرب میں ڈوبا تب یہ چاندنی کی رِدا سرپہ ڈالے نکل آئی۔ خوشبو تو بس خوشبو ہوتی ہے ۔ پھیلتی ہے تو سمت و جہت سے ماورا ہوتی ہے ۔ ہر سو ہر جہت، سمٹتی ہے تو خود میں اپنے آپ کو چھپالیتی ہے ۔ پھراس کا کوئی سراغ نہیں ملتا۔ بے ساختہ میری زبان سے نکلا ’’ کورا ‘‘ ! اردلی مجھےحیرت سے تکتا رہ گیا۔ میرا سر، چہرہ ، پلکیں ، بدن ، سب خاک میں اٹا تھا۔ پھر اُس نے مجھے آواز دی
’’ سرجی ‘‘
میں چونکا ، اُس نے پوچھا
’’ آپ ٹھیک تو ہیں ؟ ‘‘
’’ ہاں ‘‘
’’ رات آپ نے شاید اپنا خیمہ بند نہیں کیا ۔‘‘
’’ ہوں ‘‘
جب تک میں نہالیتا اُس نے میرا خیمہ صاف کردیا ۔ لیکن خوشبو ویسی ہی تھی ۔ تب مجھے لگا خوشبو تو ایک احساس ہے وہ تو وجودمیں بسی رہتی ہے ۔ سِمت اور جہت کا تعین تو خوشبو کو اسیر کرنا ہے ۔ بھلا خوشبو اور روشنی کو کوئی قید کرسکا ہے ! جس کوزندانِ بدن نہ قید کرسکا ہو بھلا اُسے طوق و سلاسل کیا ۔
اُس دن میں نے معمول سے زیادہ فلائنگ کی ۔ Navigator نے کہا ’’ سر ہمارے کیمرہ فلم ختم ہورہے ہیں‘‘
’’ کیوں ‘‘
’’ سر ! آج بہت Run لیا ہے۔‘‘
میں نے فلائٹ کو گھما کر کمان معاون پائلٹ کے سپرد کردی اور بدن کو ڈھیلا چھوڑ دیا۔ واپسی کے بعد میں نے پھر ’’ سب رنگ ‘‘ نکالا ، چاہا کہ آگے پڑھوں لیکن لگتا تھا سامنے لفظ نہیں ہیں ، بے جان لاشیں پڑی ہیں ۔گویا ’’ پھر اُس کے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی‘‘۔
میں کوئی 40 مہینے کام میں مصروف رہا اور اس دوران دس مرتبہ ہندوستان آیا۔ بمبئی سے گذرتا تو لگتا کہیں قریب میں بالے ہے ،مارٹی ہے، کہیں لگتا بٹھل ہے ۔ حیدرآباد کی گلیاں تو میری اپنی ہیں ، کہیں خلاؤں میں خانم کا سراپا دکھائی دے جاتا۔ وہی سوگوارآنکھیں وہی جھکی ہوئی پلکوں کی چلمن اور خود پسِ چلمن ۔ میرا خیال ہے کہ ان چالیس مہینوں مشکل سے کوئی چھ ’’ سب رنگ ‘‘ شائع ہوئے ہوں گے لیکن سرورق پر ماہنامہ ضرور لکھا ہوتا اور اداریہ میں کوئی نہ کوئی عُذر بہرحال سب رنگ کا لازمہ تھا لیکن اسکے باوجود ساری خطائیں خودبخود معاف۔

بٹوارے کے بعد کس نے کیا کھویا کس نے کیا پایا ،یہ الگ موضوع ہے ۔ نہ میں سیاستداں ہوں نہ مجھے اس سے کبھی کوئی غرض رہی۔ ہم تو ہمیشہ کھونے والوں ہی میں رہے ہیں لیکن پانے والوں نے کیا کچھ پالیا یہ سودوزیاں اب بے سود ہے ۔ شکیل عادل زادہ کےفن اور شخصیت پر پاکستان نے کتنا کام کیا ؟ کیا کچھ لکھا گیا ، فن پر ناقدوں نے کیا رائے قائم کی یہ سب میری نظر میں نہیں ہے ۔کتابیں بھی مشکل ہی سے ملتی ہیں ۔ اور یوں بھی آدمی کی دسترس میں تقریر و تحریر کے ابلاغیہ حُسن کا بہ یک رُخ یکجا ہوناخاصہ دشوار ہوتا ہے ۔ میں تو یوں بھی ہنربے ہنری میں یکتا ئے روزگار ہوں ۔ اس لئے شکیل عادل زادہ پر دوچار جملے بھی لکھنا شایدمیرے بس میں نہیں ہے ۔ شکیل عادل زادہ جو محبتوں سے اسیر کرنے اور بے رُخی سے پروانۂ رہائی جاری کردے۔اس کی محبتیں سمندر سمندر جس کے آگے نسرینِ ناز آفریں، عذرائے گل عذار، نسترنِ غنچہ دہن ، سمن پیرہن، لالہ رُخسار، شیشہ اندام ہیچ ہوں ۔ایسا سفاک جو محبت سے زخم لگائے اور اجنبیت میں وہ تاثیر مسیحائی رکھے کہ اس کے قلم کا لمس اندمال کے سارے سامان بہم پہنچائے ۔ شکیل عادل زادہ تو دلِ سرکش کا دوسرا نام ہے لیکن اسی دلِ خانہ خراب سے تو زندگی کا رنگ ہے ۔ میں اکثر سوچتا ہوں کہ اگر وہ دراصل صرف ایک ادیب ہوتے تو شایداتنے قیمتی نہ ہوتے ان کی تحریروں کے پیچھے تو کتاب زاروں کی تہذیب اور فکری رزمگاہوں کا تمدن ہے ۔ ان کے وجود کی فضاء مصنوعاتی نہیں بلکہ تو فیقی ہے اس لئے بیرونی زبوں حالیوں میں بھی ہمیشہ نہال و بحال رہتی ہے ۔ اور یہی اُن کے افکار کی آراستگی کے باوجود انفرادیت کے ادراک سے مکمل آراستہ ہے ۔ تخلیق اور پھر حُسن کو کمال تک پہنچانے کیلئے کتنا خونِ جگر درکار ہے یہ ہنوز قرار نہیں پاسکا ،اس لئے بھی کہ اندر کا فنکار کمال حُسن پر ہے وہ تخلیق میں بھی اُسی کمال ِ حُسن کا متقاضی ہے ۔ شکیل عادل زادہ کی کہانی کا بدن کرنوں سے تراشیدہ ہے اور اس پہلوی بدن کو جہاں کرن چھولیتی ہے اندر سے رنگ اُچھال دیتی ہے ۔ حقیقت یہ ہے کہ بازیگر کے ہر کردار کو شکیل عادل زادہ نے نہایت احتیاط سے تراشا ہے ۔اور پھر اس بتِ طناز کو میں نے تراشا ، میں نے پرستش کی اور میں نے توڑدیا والی بات بھی نہیں ہے اس صنم خانے کا ہر پیکر صرف اپنی تراش کی وجہ سے محو کلام ہوتا تب بھی یہ آذری ، ایک کمال تھی لیکن انہوں نے ہر کردار کو تراشنے سے پہلے اُس کے خمیرکوپرکھا ہے پھر تراشنے کے دوران جتنے زخم مجمسہ کے بدن پر آئے، کچھ اس سے سواء ان کی ہتھیلیوں پر بھی آئے۔ لیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اس کہانی کے مرکزی کردار ’’ کورا‘‘ کو انہوں نے کیسے تراشا۔ کہیں ایسا تو نہیں کہ چھپی ہوئی کورا پل بھر سےبھی کچھ کم میں اپنی چھبی دکھاکر پھر اُسی چٹان میں چھپ گئی ہو۔ اُس کا بدن تو از سے تھا ۔ اس ایک پل میں شکیل عادل زادہ نے چٹان کے فاضل حصوں کو تراش دیا اور کورا وجود کے نہاں خانوں میں چھپ گئی ۔ اس تہہ در تہہ نہاں خانہ کے اطراف ان گنت پہرے بھی ہیں ۔ شکیل کے پاس اس طلسم کدے کا حرف خفی بھی ہے ۔ لیکن جس طرح عذاب و ثواب کے فلسفے انسان کو بکھیردیتےہیں ۔ اسی طرح ہجر و وصل کے فلسفے نے شکیل عادل زادہ کے ہر قاری کو سحر میں اسیر رکھا۔ یہ بات درست ہے  کہ سرشاریٔ وصل ایک کیف ہے اور بدن ایک خوب وسیلہ تو ہے لیکن کیفِ سرشاریٔ وصل کو صرف بدن کہنا دراصل توہینِ وصل ہے ۔ ہجر اگر آرزوئےوصال ہے تو اس کی تپش سب کچھ جلاکر بھی ذوق سوختنی کو نہ صرف باقی رکھتی ہے بلکہ فزوں تر کردیتی ہے ۔ ممکن ہے اس نظریہ سے اتفاق نہ ہو اس لئے کہ یہ واردات اور اسکا تجربہ ایک نفسیاتی مسئلہ ہے ۔

سن دوہزار چار میرے لئے ایک سخت آزمائشی سال تھا۔میری بیوی دُنیا سے گذر گئی جس نے تحیرکی لذت سے آشنا کیا تھا وہ تنہائی سے بھی روشناس کرواگئی۔خوشبو ہواؤں میں بکھرجاتی ہے تو زندگی کو دشت دشت کرجاتی ہے ۔ بے مکانی تو میراث آدمیت ہے ۔ ہاتھ تھامنے کی خواہش اور ہے ۔ ہاتھ میں ہاتھ آکر چھوٹ جائے تو تمام عمر ہتھیلی میں سنسناتا ہے ۔ پاکستان سے نصیرؔترابی برابر فون کرتے رہے ۔ کبھی دلاسہ نہیں دیا۔ صبر کی تلقین نہیں کی ۔ وہ جانتے ہیں کہ صبر کی تلقین کبھی کبھی شقاوت ہوجاتی ہے۔ سرکشوں میں دلاسے کا شعار کچھ اور ڈھنگ سے ہے ۔

ادب میں سرکشوں کی بھی ایک تاریخ ہے۔گذشتہ صدی اور اس صدی میں پریم چند ، سعادت حسن منٹو، عصمت چغتائی ، کرشن چندر ، بیدی، جوش ملیح آبادی، فراق ؔ، اخترشیرانی، مجازؔ، نظام رامپوری، احمد ندیم قاسمی، فیض ؔ، افتخار عارف، نصیرترابی، جون ایلیا، شکیل عادل زادہ ، ناصر بغدادی ، مشتاق احمد یوسفی، غرض ایک طویل فہرست ہے جن کی سرکشی میں ایک دوسرے ہی کانہیں بہت سارے انسانوں کے دل کا اطمینان پوشیدہ ہے ۔ یہ سب ایک دوسرے کو صرف جانتے نہیں پہچانتے بھی ہیں ۔ نصیر ترابی کافون آیا ’’ کچھ دنوں کیلئے یہاں چلے آؤ‘‘ وہ میرے خالہ زاد بھی ہیں ، میرے ہم عمر بھی ۔ صرف تارِ نفس کھینچنے میں کچھ پہلےہوگئے ۔ میں پاکستان پہنچ گیا۔ وہ مجھے کئی جگہ لے گئے ۔ کوئی شام جمیل جالبی کے ساتھ گذری، کوئی دوپہر فرہان فتح پوری کےپاس، مشتاق احمد یوسفی کے پاس کئی گھنٹے لگ گئے ، پیرزادہ قاسم نے یونیورسٹی میں اپنے احباب کو جمع کرلیا ۔ افتخار عارف اکیڈیمی آف لیٹرز سے وابستہ تھے۔اسلام آباد سے وہ آگئے تو ایک شام وہاں گذرگئی ، امجد اسلام امجد نے لاہور آنے کے لئے کہا ،میں جا نہیں پایا۔ مہدی حسن کی عیادت کیلئے گیا وہ اُٹھ نہیں پارہے تھے ۔ پشت تکیوں سے لگاکر بیٹھ گئے ۔ کچھ دیر بعد لڑکے سےکہا ’’ ہارمونیم لاؤ‘‘ سب حیرت سے انھیں دیکھنے لگے ۔ فنکاراپنی زندگی کا ثبوت دینا چاہتا تھا ۔ سرکشی بدن کو مات دے گئی ۔انہوں نے اپنے آپ کو سمیٹا ۔ کچھ دیر اپنے آپ میں مگن رہے ۔ پھر وہی غزل ، وہی لے، وہی آواز
رنجش ہی سہی دِل ہی دُکھانے کیلئے آ
آ پھر سے مجھے چھوڑ کے جانے کیلئے آ

لگتا تھا گلاب کا کانٹا بلبل کے سینے میں چبھ کر سُرخی سینچ رہا ہے ۔ میری آنکھ بھر آئی۔ سرکشی کس کس کو سینچ رہی ہے ۔میرے اندر کسی نے سرگوشی کی ’’ کورا‘‘ میں نے آنسو ضبط کرلیے۔

اُسی شام میں نے نصیر ترابی سے کہا ’’ میں ایک شخص سے ملنا چاہتا ہوں ، ملوادو ‘‘ انہوں نے پوچھا ’’ کس سے ‘‘ میں نے کہا ’’ نام تو اُس کا شکیل عادل زادہ ہے لیکن میں اُسے شکیل حرام زادہ کہتا ہوں ۔‘‘ انہوں نے کہا ’’ ایسا کیوں ؟ ‘‘ میں نے کہا ’’ ہے کوئی وجہ ۔ اُسی سے کہوں گا۔‘‘ پھر بڑی تک باتیں ہوتی رہیں ، مرادآباد ، امروہہ، ملک کی تقسیم ، 1947، 1957،رئیس امروہی ، شکیل کے والد ، ادبی ذوق ، عالمی ڈائجسٹ، شکیل عادل زادہ ، جون ایلیا، پندار، غیرت مندی ، پھر ’’ سرکشی‘‘ ۔ کافی کی تلخی اور سگریٹ کا  دھواں۔ جانے کتنا کچھ ۔ کیا کچھ۔ ۔رات ڈھل گئی۔

Advertisements
julia rana solicitors

میں اپنی واپسی کا ٹکٹ کنفرم کرواکر لوٹ رہا تھا۔ نصیرترابی ایک مصروف شاہراہ پر پارکنگ کی تلاش میں تھے ۔ کوئی 45 منٹ بعدجگہ ملی پھر کوئی ایک کلو میٹر لوٹ کر پیدل آئے ۔ایک عمارت کی چوتھی منزل پر پبلی کیشنزکا دفتر تھااس میں داخل ہوئے ۔ ایک شخص والہانہ استقبال کیلئے لپکا’’ ترابی صاحب آپ ! آئیے آئیے، بہت زمانہ بعد دیدار ہوا، تشریف رکھیے ‘‘ نصیر نے پوچھا ’’ شکیل ہیں ؟‘‘ اس نے کہا ’’ بس آتے ہی ہوں گے ابھی فون آیا تھا ۔‘‘ کچھ دیر بعد شکیل عادل زادہ آئے۔ نصیرترابی سے والہانہ معانقہ کیا۔نصیرترابی نے میرا تعارف کرواتے ہوئے کہا ’’ ان سے ملو ، یہ میرے چھوٹے بھائی علامہ اعجاز فرخ ہیں، حیدرآباد دکن سے آئے ہیں اورتمہیں شکیل حرام زادہ کہتے ہیں‘‘ نصیرترابی بڑا سفاک اور ظالم آدمی ہے لیکن مجھے اتنی سفاکی کی اُمید نہیں تھی۔ شکیل میرےگلے لگ گئے۔ کہنے لگے ’’ ٹھیک ہی تو کہتے ہیں اور جب علامہ صاحب نے کہ دیا تو کہ دیا ،ایسے بھی کون کہتا ہے ۔‘‘ نصیر ترابی نےکہا ’’ اب کہو، تم کہہ رہے تھے کہ اِنہی سے کہوگے ‘‘ میں ادھر چپ کہ ٹک ٹک دیدم ،دم نہ کشیدم۔پھر میں نے کہنا شروع کیا ۔ تبت،بدھ راہب ، ابا جان ، کورا، بابر، ہندوستان ، گیا ، بٹھل، کرشنا جی، پاڑے، بمبئی، حیدرآباد، نواب ، ہیرے ، خانم، بالے ، مارٹی ۔گنگا تری بہتی رہی ، کہیں سبک خرامی ، کہیں تیزروی کے ساتھ جانے کتنی دیر گذر گئی ۔ ندی کے بہاؤ میں خبر ہی نہ ہوئی کہ دوگھنٹے سے زیادہ گذر گئے۔ لیکن پیاس لگی تھی۔ میں رُکا ۔ شکیل عادل زادہ اُٹھے اور مجھ سے لپٹ گئے ۔ جانے کتنے دیر گذر گئی۔ کتنا زمانہ گذرگیا شاید ایک صدی ، شائد کئی صدیاں ۔ جب دونوں بیٹھ گئے تو دونوں کی آنکھیں نم تھیں۔ کمرے میں خاموشی تھی۔ ایسی خاموشی کہ گویا ہوا بھی سانس لینا بھول گئی ہو۔ دفتر کے لوگ جو نہ جانے کب سے کھڑے سُن رہے تھے آہستہ قدم لوٹ گئے۔ نصیر ترابی نے کہا ’’ تم کچھ پوچھنا چاہتے تھے ‘‘ شکیل عادل زادہ نے میری طرف دیکھا ۔ میں نے کہا ’’ نہیں ! اب مجھے کچھ نہیں پوچھنا ہے ۔‘‘ لوٹتے وقت نصیرترابی نے مجھ سے پوچھا ’’ تم کیا پوچھنا چاہتے تھے۔‘‘ میں نے اُن کی طرف دیکھا ۔ انہوں نےمیری آنکھوں میں دیکھ کر صرف اتنا کہا ’’ اوہ! اچھا ‘‘ وہ شاعر ہیں جانے اُنھیں کیا نظر آیا پھر خود ہی کہا ’’ اچھا کیا ! جو نہاں خانوں میں رداپوش ہو اُسے بے ردا کرنا اچھانہیں ہوتا۔‘‘ جانے وہ یہ کیوں کہہ گئے ۔ میں تو نہ نصیرترابی کو سمجھ پایا نہ شکیل عادل زادہ کو،نہ اپنے آپ کو، اس لئے کہ :
شبِ وعدہ کہہ گئی ہے، شبِ غم دراز رکھنا
اسے میں بھی راز رکھوں ،اسے تو بھی راز رکھنا!

  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply