• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • طالبان نے یونیورسٹی کے پروفیسرز سے ملک واپس آنے کا مطالبہ کر دیا

طالبان نے یونیورسٹی کے پروفیسرز سے ملک واپس آنے کا مطالبہ کر دیا

طالبان کے اقتدار سنبھالنے کے بعد سے افغانستان کی معاشی صورتحال ابتر ہے۔ افغانستان میں غربت اور انسانی بحران پہلے سے کہیں زیادہ خوفناک ہے۔ تعلیمی میدان میں بھی افغانستان کا برا حال ہے۔ طالبان عالمی سطح پر ان تمام چیزوں سے کافی پریشان نظر آتے ہیں۔ افغانستان میں تعلیم کی صورت حال کو بہتر بنانے کے لیے طالبان نے یونیورسٹی کے پروفیسرز کو طلب کیا ہے جو تنظیم کے اقتدار میں آنے کے بعد گزشتہ اگست میں ملک سے فرار ہو گئے تھے۔ جمعہ کو طالبان کے سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ تنظیم نے ملک کی تعمیر نو اور سائنسی ترقی میں اپنا حصہ ڈالنے کے لیے مدد مانگی ہے۔

اس دوران طالبان کی جانب سے کہا گیا کہ افغانستان تمام نسلی گروہوں کا مشترکہ گھر ہے اور ہم ان کی ترقی کے ذمہ دار ہیں۔ ملک کا تعلیمی نظام خوشحالی کی عدم موجودگی میں نامکمل ہے۔ اسی مناسبت سے وزارت اعلیٰ تعلیم ان تمام پروفیسرز کو مدعو کرتی ہے جو ملک چھوڑ چکے ہیں۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

بیان میں دعویٰ کیا گیا کہ افغانستان میں حکومت ملکی ترقی کو فروغ دینے کے لیے اپنی پالیسی کے حصے کے طور پر تعلیم پر توجہ مرکوز کرتی ہے۔ نئے تعلیمی عملے کی خدمات حاصل کرنے کے لیے مختص فنڈز کے ساتھ اس پر زور دیا جائے گا۔

طالبان کے اقتدار سنبھالنے کے بعد سے افغانستان کی معاشی صورتحال ابتر ہے۔ افغانستان میں غربت اور انسانی بحران پہلے سے کہیں زیادہ خوفناک ہے۔ تعلیمی میدان میں بھی افغانستان کا برا حال ہے۔ طالبان عالمی سطح پر ان تمام چیزوں سے کافی پریشان نظر آتے ہیں۔ افغانستان میں تعلیم کی صورت حال کو بہتر بنانے کے لیے طالبان نے یونیورسٹی کے پروفیسرز کو طلب کیا ہے جو تنظیم کے اقتدار میں آنے کے بعد گزشتہ اگست میں ملک سے فرار ہو گئے تھے۔ جمعہ کو طالبان کے سرکاری بیان میں کہا گیا ہے کہ تنظیم نے ملک کی تعمیر نو اور سائنسی ترقی میں اپنا حصہ ڈالنے کے لیے مدد مانگی ہے۔

اس دوران طالبان کی جانب سے کہا گیا کہ افغانستان تمام نسلی گروہوں کا مشترکہ گھر ہے اور ہم ان کی ترقی کے ذمہ دار ہیں۔ ملک کا تعلیمی نظام خوشحالی کی عدم موجودگی میں نامکمل ہے۔ اسی مناسبت سے وزارت اعلیٰ تعلیم ان تمام پروفیسرز کو مدعو کرتی ہے جو ملک چھوڑ چکے ہیں۔

بیان میں دعویٰ کیا گیا کہ افغانستان میں حکومت ملکی ترقی کو فروغ دینے کے لیے اپنی پالیسی کے حصے کے طور پر تعلیم پر توجہ مرکوز کرتی ہے۔ نئے تعلیمی عملے کی خدمات حاصل کرنے کے لیے مختص فنڈز کے ساتھ اس پر زور دیا جائے گا۔

ساتھ ہی طالبان حکام نے کہا کہ ہم مادر وطن کو چھوڑنے والے کیڈرز سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اپنا مقدس پیشہ جاری رکھیں اور ملک کی سائنسی ترقی میں اپنا حصہ ڈالیں۔ وزارت اعلیٰ تعلیم ان پروفیسرز کے تمام روحانی اور معاشی فوائد کی ادائیگی کا عہد کرتی ہے۔

طالبان نے گزشتہ سال اگست میں افغانستان میں اقتدار سنبھالا تھا۔ ایک ماہ بعد اس نے ایک عبوری حکومت بنائی جسے ابھی تک عالمی برادری نے تسلیم نہیں کیا۔

اقوام متحدہ کے پناہ گزینوں کے ادارے کے مطابق پڑوسی ملک پاکستان میں رجسٹرڈ افغان مہاجرین کی تعداد 1.4 ملین (1.4 ملین) سے زیادہ ہے۔ صرف ایران نے 780,000 رجسٹرڈ افغانوں اور 2.25 ملین غیر قانونی پناہ گزینوں کو پناہ دی ہے۔

ساتھ ہی طالبان حکام نے کہا کہ ہم مادر وطن کو چھوڑنے والے کیڈرز سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اپنا مقدس پیشہ جاری رکھیں اور ملک کی سائنسی ترقی میں اپنا حصہ ڈالیں۔ وزارت اعلیٰ تعلیم ان پروفیسرز کے تمام روحانی اور معاشی فوائد کی ادائیگی کا عہد کرتی ہے۔

طالبان نے گزشتہ سال اگست میں افغانستان میں اقتدار سنبھالا تھا۔ ایک ماہ بعد اس نے ایک عبوری حکومت بنائی جسے ابھی تک عالمی برادری نے تسلیم نہیں کیا۔

Advertisements
julia rana solicitors

اقوام متحدہ کے پناہ گزینوں کے ادارے کے مطابق پڑوسی ملک پاکستان میں رجسٹرڈ افغان مہاجرین کی تعداد 1.4 ملین (1.4 ملین) سے زیادہ ہے۔ صرف ایران نے 780,000 رجسٹرڈ افغانوں اور 2.25 ملین غیر قانونی پناہ گزینوں کو پناہ دی ہے۔

  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply