59 فیصد اسرائیلی اسرائیل سے فرار کے چکر میں ہیں

ایک سروے کے مطابق 59 فیصد اسرائیلی اسرائیل سے فرار ہونا چاہتے ہیں۔

حالیہ جائزوں سے پتہ چلتا ہے کہ بہت سے اسرائیلی، بگڑتی ہوئی معاشی صورتحال، فلسطینی بحران کے حل اور اپنے مستقبل سے مایوس ہوکر کہیں اور جانا چاہتے ہیں۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

رائی الیوم اخبار کے مطابق بیگن نامی تنظیم کی جانب سے کرائے گئے سروے کے نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ 59 فیصد اسرائیلیوں نے اسرائیل چھوڑنے کے لیے متعدد سفارت خانوں سے رابطہ کیا ہے جب کہ بہت سے دوسرے بھی ایسا ہی کرنا چاہتے ہیں۔ اسی وقت، 78 فیصد اسرائیلی گھرانوں کی خواہش ہے کہ ان کے بچے اسرائیل چھوڑ کر کہیں اور چلے جائیں۔

ایک اسرائیلی اخبار میو کے کالم نگار کلمان لبسکینٹ لکھتے ہیں کہ ہمیں اسرائیل میں دائیں بازو کی سوچ کی نشوونما پر تشویش ہے کیونکہ ان کی اسرائیل پر توجہ بہت کم ہے۔ یہ بنیاد پرست صرف اپنے نظریے کو اہمیت دیتے ہیں دوسروں کو نہیں۔ ان کے بقول یہ وہی لوگ ہیں جو بیرون ملک سے پیسہ لیتے ہیں۔

Advertisements
julia rana solicitors london

یاد رہے کہ اس سے قبل بھی اسرائیل سے الٹا اخراج کی متعدد اطلاعات سامنے آ چکی ہیں۔ بہت سے اسرائیلیوں کے فرار ہونے کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ صہیونیوں کی طرف سے ان سے کیے گئے وعدے پورے نہیں کیے گئے، اس دوران فلسطینی دھڑوں کے ساتھ جھڑپوں میں انھیں کافی نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ ان چیزوں کی وجہ سے بہت سے اسرائیلی اب یہ ماننے لگے ہیں کہ اسرائیل ان کے رہنے کی جگہ نہیں ہے۔

  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply