​عالمی شعر و ادب کا ایک سانحہ۔۔ستیہ پال آنند

ایک دن جب عالم ِ ارواح میں بیٹھے ہوئے

ایون” کے شاعر ’شیکسپیئر‘ نے یہ پوچھا جارج برنارڈ شاء سے”
اے مسخرے ، کیا تو نے غالبؔ کو پڑھا ہے؟

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

مسکرایا جارج برنرڈ شا ۔۔۔ بولا
ہند کے اس شاعر ِ اردو کو پڑھ کر
میں تو اتنا ہی سمجھ پایا ہوں، ولیئم
فارسی میں کوئی تھیٹر کی روایت ہی نہیں تھی
اور اردو نے ، بزعم خود، پرانے ہندوی تھیٹر کو
ادنیٰ ، پست سمجھا
یہ روایت بھی اگر اردو کو ملتی، تو یقیناً
شاعر ِ اردو
“فقط تمثیل لکھتا

شیکسپیئر کچھ نہ کہہ پایا مگر اثبات میں چپکا رہا

Advertisements
julia rana solicitors

یہ۔۔۔ مگر اس کے مقدر میں نہیں تھا
اس کو تو بس اک غزل کی صنف ورثے میں ملی تھی
اور اس پر قانع و شاکر رہا وہ
تنگیٔ داماں کا شکوہ بھی دبے لفظوں میں وہ کرتا رہا
لیکن اکیلا ہی چنا تھا، بھاڑ کیسے پھوڑتا وہ؟
مثنوی کے ساتھ تھیٹر کی روایت بھی
اگر اس کو وراثت میں ملی ہوتی، تو شاید
شاعر ِ ایون کو غالب دور پیچھے چھوڑ جاتا
ہائے غالب! وائے بے چاری غزل کی تنگ دامانی
کہ تیرے فن کا اردو سے تجاوز کر نہ سکنا
عالمی شعر و ادب کا ایک ایسا سانحہ ہے
جس سے اب کوئی مفر ممکن نہیں ہے !

  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply