سول سوسائٹی کے ایک اور بدنام ارسطو کی حقائق سے زیادتی۔۔عامر حسینی

ایکسپریس ٹرائبون کراچی نے سابق سیکرٹری خزانہ رہے ایک شخص محمدیونس ڈھگا کا مضمون شایع کیا عنوان ہے “کراچی کو جینے دو”
حیرت کی بات ہے کہ جو آدمی سیکرٹری خزانہ رہا ہو اُسے ریونیو اور بجٹ میں فرق نہیں معلوم؟
( معلوم تو ہے مگر اپنے قاری کو شاید “چ” سمجھتا ہے یا اُس کے قاری محض ایم کیو ایم، جماعت اسلامی، پاک سرزمین پارٹی والے ہی ہیں)

یہ یونس (ڈگھا) اس بارے میں بھی بات نہیں کرتا کہ کس طرح پی ایم ایل این اور پی ٹی آئی کی متعدد حکومتوں نے سندھ کو این ایف سی ایوارڈز دینے سے انکار کیا، روکا اور تاخیر کی۔
بلاشبہ ایک مکمل منافق کی طرح ڈگھا صرف سندھ کی بات کرتا ہے جب کہ پنجاب اور کے پی کے کے بلدیاتی اداروں کی سرے سے بات ہی نہیں کرتا جہاں دودھ اور شہد کی نہریں نہیں بہتی ہیں
سندھ میں بلدیاتی نظام ہے اور کارپوریشن و میونسپل کمیٹیوں کا سسٹم آن لائن اور آن لائن اکاؤنٹس ہیں جبکہ یہ ہم سے چھپاتا ہے کہ کیسے ان اکاؤنٹس سے ایم کیو ایم بغیر کچھ کیے اربوں لے گئی۔

Advertisements
julia rana solicitors
FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

ڈھگا جان بوجھ کر اس بات کا ذکر نہیں کرتا کہ جماعت اسلامی، پی ایس پی، ایم کیو ایم اور پی ٹی آئی نے غیر قانونی طور پر بلدیاتی حکومت اور اصلاحات کو مسترد کر دیا ہے۔
یقیناً یہ مضمون جو ایکسپریس ٹرایبون میں چھپا ہے سوائے کوڑا کرکٹ کے کچھ بھی نہیں ہے –
اس مضمون نما حملے کا اصل پیغام کچھ یوں ہے:
کراچی، جو پہلے ہی 70 فیصد اسٹیبلشمنٹ کے کنٹرول میں ہے، اسٹبلشمنٹ کو باقی ماندہ کنٹرول بھی دیا جائے اور اسٹبلشمنٹ کو مزید رقم فراہم کرنے کی ضرورت بھی ہے۔
سندھ سے حاصل ہونے والی گیس، زراعت اور کوئلے سے حاصل ہونے والی آمدنی واقعی اس سے تعلق نہیں رکھتی۔
سندھ میں ہسپتال اور یونیورسٹیاں پیسے کا زیاں  ہیں حالانکہ ان سے پورے پاکستان کو فائدہ ہوتا ہے۔
اور یہ کہ 18ویں ترمیم سے پہلے کراچی کو کھربوں روپے مل رہے تھے۔
اس مضمون میں جو زیادہ تر کوڑے کرکٹ کی تصدیق کرنے کے لیے کوئی حقائق نہیں ہیں جو کہ محصولات/ریونیو اور بجٹ کو ایک ہی چیز کے طور پر دکھاکر اپنے پڑھنے والوں کو گمراہ کرتا ہے –
پاکستان کا 97 فیصد ریلوے بجٹ لاہور کو جاتا ہے۔ سکیورٹی اسٹیبلشمنٹ، طاقتور کارپوریٹس، جاگیرداروں، مذاہب کے گروہوں اور حامی میڈیا کو کھربوں کی سبسڈی دی جاتی ہے – جب کہ بے کار عدلیہ اور بیوروکریسی اپنے اپنے طریقے سے خون چوسنے والے طفیلی ہیں – جبکہ اس سے ہٹ کر مستثنیات کو یہ برداشت نہیں کرتے۔

  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

عامر حسینی
عامر حسینی قلم کو علم بنا کر قافلہ حسینیت کا حصہ ہیں۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply