یہ دھرتی ہم سے پوچھتی ہے۔۔ڈاکٹر ابرار ماجد

اسلامی جمہوریہ پاکستان کے سپوتو یہ دھرتی ہم سے پوچھتی ہے؟ لہلاتے کھیتوں، گرمجوش سنہری ریگستانوں، سفید پوش پہاڑوں، ندیوں، دریاوں، وادیوں کی جنت نظیر سرزمین، سمندری ساحلوں اور خوبصورت موسمی جزبوں سے لبریز مگر پریشان حال دھرتی ہم سے شکوہ کر رہی ہے۔ میرے نام کی لاج ہی رکھ لی ہوتی! امن، محبت، عدل، بھائی چارہ، رواداری کہاں گیا سب کچھ۔ سلامتی کے مفہوم کو ہی سمجھ لیا ہوتا؟

رحمت العالمین کے نام پر قتل و غارت کا بازار گرم کرنے والو!کم از کم خدا سے بغاوت تو نہ کی ہوتی، چوہترسالوں میں سود سے ہی چھٹکارا حاصل کر لیا ہوتا، کس منہ سے مسلمان کہلاو گے؟ کیا مجھے مقروض کروا کر عالمی برادری میں ذلیل و رسوا کرنے کے لیے آزاد کروایا تھا، پہلے ایسٹ انڈیا کمپنی چل کر آئی تھی اب تم چل کر جاتے ہو، حاصل کیا ہوا؟ کیا میرا بھی کوئی حق ہے کہ تمھاری عیش وعشرت اور شاہ خرچیوں کا حساب مانگ سکوں؟

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

آپ ہمیشہ نظام کی خرابی کے نعرے لگاتے ہو کیا اس کو میں نے ٹھیک کرنا ہے یا اس کو چلانا اور کامیاب کرنا آپ سب عوام اور سیاستدانوں کی ذمہ داری ہے؟ آپ سب حقوق تو مانگتے ہو کبھی اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے کا بھی سوچا ہے؟ آپ کی پہچان مجھ سے ہے یا مذہب، زبان، قبیلے اور صو بائی تعصباتتمہاریشخصیت کی بنیاد ہیں؟ کیا میں نےتمہاری ضروریات، مفادات، تحفظات، اپنے آپ کو گروی رکھ کر بھی پورے نہیں کیے اور تم نے مجھے یہ صلہ دیا ہے کہ مجھے ہی لوٹ کر اپنا مال و دولت غیروں کے پاس رکھا ہوا ہے۔ کیا یہی توفاداری ہے؟

کیاتمہاری آ آپس کی نااتفاقیاں میری ممتا کو سکون دیتی ہیں یا دکھ؟ تم نے میری خاطر پردیس کا دکھ جھیلنے والوں کو کیا صلہ دیا ہے کہ آج ان کی کمائی کوڑیوں کے بھاو بھی نہیں رہی؟ تم نے میرے محسنوں اور حفاظت کرنے والوں کے ساتھ کیا سلوک کیا؟ کیا میں نے آپ کو اس لئے پالا پوسہ کہ جب تمھارا مقام بن جائے تو اغیار کی گود میں بیٹھ کر تم میری ہی بدنامی اور رسوائی کرو؟ کیا میرا حق نہیں بنتا کہ تم میری خاطر اپنے ذاتی مفادات اور اختلافات کو بھلا کر قومی اور اجتماعی مفادات کو ترجیح دو؟

کیا میرا حق نہیں کہ تم میری خاطراتفاق، محبت اور بھای چارہ کے اصولوں پر عمل کرتے ہوئے میرے تقدس کی لاج رکھو اور میں فخر سے کہہ سکوں کہ تم میرے غمخوار اور جانثار ہو؟ کیا مجھے یہ حق نہیں پہنچتا کہ تم ایمانداری اور خلوص کے ساتھ محنت کر کے میرے قر ض اتار کر مجھے معاشی غلامی سے آزاد کراو؟ افسوس کہ تم میری طاقت بننے کی بجائے میرے ٹکڑے کرنے کے درپے ہو میں تو ابھی پہلے زخم بھی نہیں بھر پائی تھی؟

میرے زخموں کو روز تازہ کرتے ہو، چاہئے تو یہ تھا کہ پرانی یادیں اور عداوتیں بھلا کر نیا تجدید عہد کرتے اور بھائیوں کی طرح رہتے، مگر افسوس صد افسوس کہ تم ایک دوسرے کو دیکھنا بھی گوارہ نہیں کرتے۔ مجھے شرم آتی ہےتمہاریسوچ اور غیرت پر کہ میری عصمت کی حفاظت کی بجائے مجھے ہی بدنام کرتے ہو اور اغیار سے ملکر میری جگ ہنسائی کرواتے ہو؟ مجھے ندامت ہوتی ہے کہ تم خود ہی غیروں کے ہاتھوں آلہ کار بنتے ہو پھر الزام دوسروں پر ٹھہراتے ہو۔ تم میں اگر غیرت ہو تو اغیار کی کیا ہمت؟

کیا کبھی ایک لمحہ کے لیے بھی تم نے سو چا ہے کہ کس طرح میں خوشحال اور ترو تازہ ہو سکتی ہوں؟ کیا تمھارے خون اتنے سفید ہو گئے ہیں کہ تم دولت اور جھوٹی شہرت کی خاطر ایک دوسرے کا خون کر دیتے ہو؟ کہاں گیا جمہوری نظام، کہاں گئے عوام؟ کس نظریے کی بنیاد پر مجھے حاصل کیا گیا، اپنے نظریے کو ہی بچا لیتے، اس کے ٹکڑے تو نہ کرتے۔ ہم نے اس نظریے کو عمل کرنے والے اصول و ضوابط کا مجموعہ سمجھنے کی بجائے ایک تمغہ اور اگلی نسل نے اسے وراثت سمجھ لیا۔

ہم نے اس وراثت کی بٹائی کا عمل پہلی نسل سے ہی شروع کر لیا تھا۔ جس کو جو پسند آیا اس نے اس نظریہ سے نکالنا شروع کردیا: میرے سالار نے اپنا نظریہ طے کرلیا، میرے قاضی نے اپنا، بابو نے اپنا، ملاں نے اپنا نظریہ بنا لیا بلکہ ملاؤں نے اپنے اپنے نظریات بنا لئے، سب نے اپنے اپنے نظریات پر غلاف سجا لئے اور ہر کوئی اپنے کو دوسروں سے بہتر سمجھنے لگا۔ یوں ہمارا نظریہ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوگیا۔

ضرورت اس امر کی ہے کہ ماضی کے واقعات سے سبق حاصل کرتے ہوئے مستقبل کو محفوظ بنانے کی کوشش کی جائے، جو غلطیاں ہوگئیں، سو ہو گئیں، سوچنے کی اور غور کرنے کی ضرورت ہے کہ کیا ہم اب ان غلطیوں سے بچنے کی کوشش کررہے ہیں یا وہی غلطیاں دہراتے جارہے ہیں۔ تو یقیناً حالات زیادہ تر غلطیوں کو دہرانے کی طرف جاتے ہوئے ہی نظر آ رہے ہیں، جن کی سمت بدلنا ہوگی۔

Advertisements
julia rana solicitors london

ہمیں اپنے اپنے نظریات کو واپس اصل نظریے کے اندر جڑنا ہوگا۔ جہاں جہاں جڑتا ہے اس کو جوڑنا ہوگا اور پاکستان کے نظریے کو اپنی اصلی حالت میں واپس لانا ہوگا۔ مشکل ہی سہی مگر ناممکن تو نہیں۔ اسی میں بہتری اور امن کا حل ہے۔

  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply