• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • ویانا مذاکرات میں بیانیہ جنگ، فرانس نے اپنی چالیں شروع کر دیں

ویانا مذاکرات میں بیانیہ جنگ، فرانس نے اپنی چالیں شروع کر دیں

ویانا میں جاری مذاکرات جس کا مقصد ایران پر عائد غیر منصفانہ پابندیوں کو ہٹانا تھا، ابھی تک اپنی منزل سے بہت دور ہے لیکن اس دوران مغربی ممالک نے نفسیاتی چالوں کا استعمال تیز کر دیا ہے۔

مذاکرات میں شامل حکام کے بیانات سے یہ نتیجہ اخذ کیا گیا ہے کہ دونوں فریقوں کے درمیان اختلافات کم ہو گئے ہیں اور بات چیت میں پیش رفت ہو رہی ہے، یہاں تک کہ فرانسیسی وزیر خارجہ جین ایف بھی اضافہ کر رہے ہیں۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

لوڈرین نے کہا کہ میں اس بات سے اتفاق کرتا ہوں کہ ہم کسی معاہدے پر پہنچ سکتے ہیں لیکن ابھی بہت کم وقت باقی ہے۔

فرانسیسی وزیر خارجہ کا یہ بیان انتہائی حیران کن ہے کیونکہ حالیہ چند دنوں میں مذاکرات کی میز پر فرانس کا رویہ اسرائیل جیسا ہو گیا ہے۔ اس سے قبل فرانسیسی صدر میکرون نے کہا تھا کہ بات چیت میں پیش رفت نہیں ہو رہی ہے اور اس وقت مذاکرات کے اگلے دور کا کوئی امکان نہیں ہے۔

لیکن اگر ہم فرانسیسی وزیر خارجہ کے بیان کو دیکھیں تو ثابت ہوتا ہے کہ ایرانی مذاکرات کاروں نے ویانا میں جاری مذاکرات کے بارے میں جو بیانیہ پیش کیا تھا وہ بالکل درست تھا جب کہ مغربی ممالک کے مذاکرات کاروں کے بیانیے میں تضاد ہے۔

مذاکرات میں شامل ہونے سے قبل ہی مغربی ممالک نے ایران کی مذاکراتی ٹیم کے بارے میں منفی پروپیگنڈہ شروع کر دیا تھا، ان کا الزام تھا کہ ایرانی مذاکرات کار وقت ضائع کرنا چاہتے ہیں اور مذاکرات میں سنجیدہ نہیں ہیں۔

مغربی حکام کو لگتا ہے کہ اگر ایرانی حکومت اور مذاکراتی ٹیم کے بارے میں منفی ماحول پیدا کیا گیا تو ایران مغرب کے غلط مطالبات ماننے پر مجبور ہو جائے گا۔ مغربی ممالک جوہری معاہدے کو ایک اچھا معاہدہ سمجھتے ہیں لیکن وہ یکطرفہ طور پر اس معاہدے سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کرتے ہیں۔

اسلامی جمہوریہ ایران کی کوشش ہے کہ اس معاہدے کو متوازن اور دوطرفہ استعمال میں لایا جائے۔ ایران نے واضح کیا ہے کہ تہران کے لیے اس معاہدے سے فائدہ اٹھانا ضروری ہے۔ ایران کہہ رہا ہے کہ اس ملک پر سے پابندیاں عملی طور پر اس طرح ہٹا دی جائیں کہ پابندیوں کے خاتمے کی تصدیق بھی ہو سکے۔

یہ حربہ اب مغربی ممالک ایران کو مذاکراتی عمل کے جمود کا ذمہ دار ٹھہرانے کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔ امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن نے سینیٹ کے اجلاس میں کہا کہ جوہری معاہدے سے امریکہ کی دستبرداری کے لیے ابھی بہت طویل سفر طے کرنا ہے۔

ایسا لگتا ہے کہ یورپ اور امریکہ ملی بھگت سے یہ نفسیاتی کھیل کھیل رہے ہیں۔

اب امریکا اور یورپ کی جانب سے یہ دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ مذاکرات کی رفتار ایران کے جوہری پروگرام کی رفتار سے کم ہے، اگر یہی صورتحال جاری رہی تو کچھ عرصے بعد جوہری معاہدے کو وہ فائدہ نہیں ملے گا جو معاہدے کے وقت تھا۔ 2015 میں تھا.

Advertisements
julia rana solicitors

ان بیانات سے واضح ہوتا ہے کہ مغربی ممالک ویانا مذاکرات میں نفسیاتی چالوں کے استعمال کے علاوہ کوئی پہل کرنے کو تیار نہیں۔

  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply