سعودی عرب میں کچھ مہینوں میں انٹرسیپٹر میزائل ختم ہو سکتے ہیں

(مکالمہ ویب ڈیسک/مترجم: آفتاب سندھی)سعودی عرب میں کچھ مہینوں میں انٹرسیپٹر میزائل ختم ہو سکتے ہیں۔فنانشل ٹائمز اخبار کی رپورٹ کے مطابق، جیسے ہی حوثی باغیوں کے حملے بڑھ رہے ہیں، ریاض کے پاس ‘ایک ہنگامی صورتحال’ ہے کیونکہ اس کے پاس اپنے فضائی دفاعی نظام کے لیے میزائلوں کی کمی ہے۔
فنانشل ٹائمز (FT) اخبار کے حوالے سے ایک سینئر امریکی اہلکار کے مطابق، کچھ مہینوں” میں اپنے امریکی ساختہ پیٹریاٹ ایئر ڈیفنس سسٹم کے لیے ا نٹرسیپٹر میزائل، ریاض کو اس اسٹاک کو بھرنے کے لیے علاقائی اتحادیوں سے مدد کی اپیل کرنے پڑ رہی ہے۔

امریکی اہلکار نے کہا کہ “یہ ایک فوری صورتحال ہے،” انہوں نے مزید کہا کہ واشنگٹن خلیجی ممالک سے میزائلوں کے ذریعہ حاصل کرنے کے اقدام کی حمایت کرتا ہے کیونکہ یمن کے حوثی باغی مملکت پر سرحد پار سے حملوں میں اضافہ کر رہے ہیں۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

خلیج میں اور بھی جگہیں ہیں جہاں سے وہ حاصل کر سکتے ہیں، اور ہم اس پر کام کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ویسے بھی یہ امریکی ہتھیاروں کی فروخت کا تیز تر متبادل ہو سکتا ہے،” امریکی اہلکار کا کہنا تھا۔

دو افراد نے سعودی عرب اور اس کے پڑوسیوں کے درمیان ہونے والی بات چیت کے بارے میں بریفنگ دی ایف ٹی کو تصدیق کی کہ ریاض نے ایسی درخواستیں کی ہیں۔
انٹرسیپٹر کی کمی ہے۔ لوگوں میں سے ایک نے اشاعت کو بتایا، سعودی عرب نے اپنے دوستوں سے قرضوں کے لیے کہا ہے، لیکن بہت زیادہ نہیں ہیں،”۔

ایک دوسرے شخص نے ایف ٹی کو بتایا کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے دسمبر میں ریاض میں خلیج تعاون کونسل (جی سی سی) کے سربراہی اجلاس کے دوران اس مسئلے کی طرف اشارہ کیا تھا اور اس کے بعد مملکت نے خطے کے ممالک سے براہ راست رابطہ کیا۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یہ واضح نہیں ہے کہ آیا سعودی عرب کے پڑوسی ابھی تک اسے گولہ بارود فراہم کرنے میں کامیاب رہے ہیں۔
ایک تیسرے امریکی اہلکار نے بتایا کہ حوثی باغیوں نے، جو ایران سے منسلک ہیں اور شمالی یمن پر کنٹرول رکھتے ہیں، گزشتہ سال مملکت پر اپنے حملوں کو تیز کیا، سعودی عرب کے خلاف سرحد پار سے 375 حملے کیے، جن میں سے اکثر کا مقصد تیل کے بنیادی ڈھانچے، ہوائی اڈوں اور شہر تھے۔
اہلکار نے ایف ٹی کو بتایا کہ “اس قسم کے انٹرسیپٹرز کا استعمال کرتے ہوئے ان حملوں کا جواب دینے کا مطلب یہ ہے کہ ان کے جلنے کی شرح اس سے زیادہ تیز ہوگی جس کی ان کی پہلے توقع تھی۔”

“یہ وہ چیز ہے جس سے ہمیں نمٹنا ہے اور اس کا جواب نہ صرف زیادہ مداخلت کرنے والا ہے، بلکہ اس کا جواب بالآخر یمن کے بحران کا ایک سفارتی حل ہے۔”

Advertisements
julia rana solicitors

امریکہ سعودی تعلقات
یہ صورتحال امریکہ-سعودی تعلقات کے لیے تازہ ترین امتحان کی نمائندگی کرتی ہے، جسے صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ نے اکتوبر 2018 میں استنبول میں سعودی کارکنوں کے ہاتھوں سعودی مخالف صحافی جمال خاشقجی کے قتل کی روشنی میں نئی ​​شکل دینے کی کوشش کی ہے۔
پچھلے سال فروری میں، بائیڈن نے کہا تھا کہ وہ یمن میں سعودی عرب کی “جارحانہ کارروائیوں” کے لیے امریکی حمایت ختم کر دیں گے، بشمول “متعلقہ ہتھیاروں کی فروخت”۔لیکن کئی مہینوں بعد، اس کی انتظامیہ نے مملکت کو فضا سے فضا میں مار کرنے والے میزائلوں کی 650 ملین ڈالر کی فروخت کی منظوری دی۔

  • julia rana solicitors
  • merkit.pk
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply