افغان صوبے بلخ میں خواتین کے حمام اب سے بند ہوں گے

طالبان انتظامیہ نے افغانستان کے صوبہ بلخ میں خواتین کے حمام بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

طالبان کی عبوری حکومت کی وزارت برائے دعوت خیر اور برائی سے بچنے کے بلخ کے صوبائی ڈائریکٹر سردار محمد حیدری نے کہا کہ خواتین کو پردے کی پابندی کرنی چاہیے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

یہ بتاتے ہوئے کہ صوبہ بیلہ میں خواتین کے حمام اب سے بند ہوں گے، حیدری نے کہا کہ اب سے مردوں کے حمام کو بھی کنٹرول کیا جائے گا۔

نیکی کی دعوت اور برائی سے بچنے کی وزارت کی طرف سے جاری کردہ بیان کے مطابق، خواتین کو لمبی دوری کے سفر پر اکیلے گاڑیوں میں نہیں لے جایا جائے گا، انہیں ٹیکسیوں میں موسیقی سننے کی اجازت نہیں ہوگی، اور جو خواتین اس کی پابندی نہیں کرتی ہیں۔

طالبان، جنہوں نے 15 اگست 2021 کو افغانستان کا کنٹرول سنبھالا، خاص طور پر خواتین کے لیے مختلف شعبوں میں کچھ پابندیاں متعارف کرائی ہیں،

طالبان انتظامیہ نے ملک کے کئی صوبوں میں لڑکیوں کے لیے ہائی اسکول کی تعلیم روک دی تھی۔

طالبان کی عبوری حکومت نے پرائمری، سیکنڈری اور ہائی اسکولوں میں صرف مرد طلبہ کے لیے تعلیم شروع کی تھی، اور اعلان کیا تھا کہ طالبات 6ویں جماعت تک تھوڑی دیر کے لیے اسکول جا سکتی ہیں۔

ملک کے کئی صوبوں میں سکولوں میں عمارتوں کی کمی کی وجہ سے مرد اور خواتین طالب علم مختلف اوقات میں ایک ہی سکول میں پڑھتے ہیں۔

طالبان انتظامیہ ایسی عمارتیں بھی چاہتی ہے جہاں طلباء اور طالبات کو الگ الگ تعلیم دی جائے گی۔

اس کے علاوہ، طالبان کی عبوری حکومت نے خواتین کے امور کی وزارت کو اپنی کابینہ سے ہٹا دیا اور اس کی جگہ خیر کی دعوت اور برائی سے بچنے کی وزارت رکھ دی۔

آخر کار، طالبان انتظامیہ نے 22 نومبر 2021 کو جاری کردہ ایک بیان میں خواتین پریزینٹرز سے کہا کہ وہ ٹیلی ویژن چینلز پر حجاب کی پابندی کریں۔

طالبان کے ملک پر قابض ہونے سے پہلے میڈیا ورکرز میں 30 فیصد سے زیادہ خواتین تھیں، جب کہ اب صرف چند خواتین صحافی کام کر رہی ہیں۔

Advertisements
julia rana solicitors london

طالبان کے ملک پر قبضے کے بعد درجنوں میڈیا ورکرز ملک چھوڑ گئے۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply