• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • بھارتی انتہا پسندی، ملالہ سمیت 100 مسلمان خواتین نیلامی کے لیے پیش

بھارتی انتہا پسندی، ملالہ سمیت 100 مسلمان خواتین نیلامی کے لیے پیش

بھارت میں مودی سرکار کی شہہ پر مسلمانوں کے خلاف نفرت اپنے عروج پر ہے، تازہ ترین واقع میں بھارتی ایپ پر مسلمان خواتین کو نیلامی کے لیے پیش کر دیا گیا۔

بھارتی ایپ پر نیلامی کے لیے پیش کی جانے والی مسلمان خواتین میں پاکستان کی نوبل انعام یافتہ ملالہ یوسف زئی کا کا نام بھی شامل تھا، جن کی تصویر آن لائن نیلامی کے لیے اپ لوڈ کی گئی۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

بُلّی بائی نامی بھارتی ایپ پر 100 سے زائد مسلمان خواتین کی تصاویر اپ لوڈ کی گئیں، جن میں مشہور اداکارہ شبانہ اعظمی دہلی ہائی کورٹ کے ایک موجودہ جج کی اہلیہ، متعدد صحافی، کارکنوں اور سیاست دان بھی شامل ہیں.

اس ایپ پر آن لائن نیلامی میں مقبوضہ کشمیر کی مسلمان خاتون صحافی قرۃ العین رہبر کی تصویر بھی اپ لوڈ کی گئی تھی، یہاں تک کہ لاپتہ طالب علم نجیب احمد کی 65 سالہ والدہ فاطمہ نفیس بھی اس فہرست میں شامل تھیں۔

کشمیری صحافی نے ٹویٹ کی کہ گزشتہ سال انہوں نے اس بارے میں لکھا تھا کہ کیسے بھارت میں کھلے عام مسلمان خواتین کو غیر انسانی سلوک کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، اور اب ایک سال بعد ہی ان کا نام بھی اس فہرست میں شامل ہو گیا ہے۔

انہوں نے لکھا کہ انہیں برا ضرور لگا ہے پر وہ کمزور نہیں ہیں، اور انہیں ان ہتھکنڈوں سے خاموش نہیں کیا جا سکتا وہ ہمیشہ سچ لکھتی رہیں گی۔ انہوں نے تمام مسلم خواتین سے مکمل یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے کہا   ہم سب مضبوط ہیں۔

بھارت میں ایسا پہلی بار نہیں ہوا، اس سے پہلے جولائی میں “سلی ڈیلز” کے نام سے ایپ پر تقریباً 80 مسلم خواتین کو “فروخت” کے لیے پیش کیا گیا تھا، “بلّی بائی” ایک سال سے بھی کم عرصے میں اس طرح کی دوسری کوشش تھی۔

Advertisements
julia rana solicitors london

بھارتی رپورٹ کے مطابق مسلمان خواتین کے احتجاج کے بعد ایپ سے  تصاویر ہٹادیں گئیں، ایف آئی آر بھی درج کرائی گئی لیکن بھارتی پولیس کی جانب سے کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • julia rana solicitors london

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply