نعت رسولِ مقبولﷺ۔ ڈاکٹر ستیہ پال آنند

( ﯾﮧ ﻧﻌﺖ ﺑﺼﻮﺭﺕ ﺍﺳﺘﻐﺎﺛﮧ ﮨﮯ )
۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔
اے خاصہ ء خاصانِ رسلؑ،ہادیء برحق
حالیؔ نے روا رکھا تھا جو طرزِ تخاطب
مجھ جیسے سبک سر کو تو اچھا نہیں لگتا
اے سیدِ الابرار۔۔۔

“امت پر تری آ کے عجب وقت پڑا ہے”
اس “تُم ” پہ “تمھاری” پہ ،تیری”تٹو” پہ تو مالکؑ
ہے سخت تعجب کہ اک ادنیٰ سا یہ انسان
کیا آپؤ سے اس درجہ تکلف پہ بری ہے؟

اے سرورِ کونینؑ۔۔۔
میں خاکِ کفِ پا ء بھی نہیں آپ ؑ کی آقاؑ

میں کیا ہوں ،فقط ایک کفں خاشاک،خس و خاک
بے وقعت و ناکارہ و بے دانش و نافہم
اور آپؑ ،حضورؑ ،اکمل و سرمد ،مرے مالک

میں آپؑ کو “تُو” کہہ کے پکاروں ؟ میری جرآت؟۔۔
میں “تُو” کہوں اس صلِ ؑ علیٰ ،شمس الضحیٰ کو
جس کے لیے حسنانؔ کا لہجہ بھی ہے کمتر
اس طرزِ تخاطب پہ زباں
میری نہ کٹ جائے؟
اے صدر العلیٰ شہ ؑ

ہاں خاک مرے منہ میں مگر پوچھ ہی لوں میں
کیا آپ ؑ شہؑ انبیا ،کمتر ہیں کسی سے؟
جو آپ ؑ کو “تُو” کہہ کے مخاطب ہیں سخن میں ؟
یہ “افسر الشعرا”،یہ “غزل گو” یہ” بیت بند”؟

اے سید الابرارؑ!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۱؂۔ ﺧﻮﺍﺟﮧ ﺍﻟﻄﺎﻑ ﺣﺴﯿﻦ ﺣﺎﻟﯽؔ
۲؂۔ ﺣﻀﺮﺕ ﺣﺴّﺎﻥ ﺑﻦ ﺛﺎﺑﺖ

ستیہ پال آنند
ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

براہ راست تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *