• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • بوسنیا میں دہائیوں کے بعد مسلمانوں کے قاتلوں پر مقدمہ چلا، 9 افراد پر 100 مسلمانوں کو بے دردی سے قتل کرنے کا الزام

بوسنیا میں دہائیوں کے بعد مسلمانوں کے قاتلوں پر مقدمہ چلا، 9 افراد پر 100 مسلمانوں کو بے دردی سے قتل کرنے کا الزام

بوسنیا میں جنگی جرائم کے پراسیکیوٹر نے نو بوسنیائی سربوں کے خلاف 1992 سے 1995 کے دوران جنگ کے دوران سات خاندانوں سمیت تقریباً 100 مسلم بوسنیائی باشندوں کے قتل کے الزام میں چارج شیٹ دائر کی ہے۔

آرتھوڈوکس سرب، کیتھولک کروٹس اور مسلم بوسنیاکس کے درمیان ایک تباہ کن جنگ ہوئی جس میں تقریباً ایک لاکھ لوگ مارے گئے۔ جنگ کے خاتمے کے 26 سال بعد بھی بوسنیا لاپتہ ہونے والوں کی تلاش کر رہا ہے اور مشتبہ مجرموں کے خلاف قانونی کارروائی کا مطالبہ کر رہا ہے۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

اس کے ساتھ ساتھ بلقان ملک جنگ کے بعد اپنے ہی شدید سیاسی بحران سے گزر رہا ہے، بوسنیائی سرب رہنماؤں کی جانب سے مسلح افواج سمیت بوسنیائی قومی اداروں سے دستبرداری کی دھمکیوں سے ایک نیا بحران پیدا ہونے کا خدشہ ہے۔

جن 9 لوگوں کے خلاف چارج شیٹ داخل کی گئی ہے وہ سابق فوجی کمانڈر اور جوان ہیں۔ ان پر بوسنیائی شہریوں کو قتل کرنے کا الزام ہے، جن میں درجنوں خواتین، بوڑھے اور جوان شامل ہیں، جنوب مشرقی بوسنیائی قصبے نیو سنجے کے آس پاس کے علاقے میں۔

Advertisements
julia rana solicitors

پراسیکیوٹر کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ 1992 کے موسم گرما میں ہلاک ہونے والوں میں سات خاندان شامل تھے۔ ہلاک ہونے والوں میں سے 49 افراد کی لاشیں مل گئی ہیں جب کہ 47 افراد تاحال لاپتہ ہیں۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply