• صفحہ اول
  • /
  • خبریں
  • /
  • ہر روز ہزاروں ایرانی میزائل اور راکٹ اسرائیل کی حماقت کا انتظار کرتے ہیں: سابق اسرائیلی جنرل

ہر روز ہزاروں ایرانی میزائل اور راکٹ اسرائیل کی حماقت کا انتظار کرتے ہیں: سابق اسرائیلی جنرل

صیہونی فوج کے ایک سابق جنرل نے تل ابیب کو خطے میں ہر قسم کی سازش سے خبردار کرتے ہوئے تاکید کی ہے کہ صیہونی فوج جنگ کے لیے تیار نہیں ہے۔

سابق صیہونی فوجی جنرل کا کہنا تھا کہ اگر اسرائیل نے حماقت کرتے ہوئے ایران پر حملہ کیا تو روزانہ تین ہزار میزائل اور راکٹ صیہونی حکومت کے منتظر ہیں۔

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

پریس ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سابق صیہونی جنرل اسحاق برک نے خبردار کیا اور کہا کہ شام، یمن، عراق اور غزہ میں اسرائیل کے حامی ایران نواز گروہ پر میزائلوں اور راکٹوں کی بارش کی وجہ سے اسرائیلی فوج خطے میں جنگ کے لیے تیار نہیں ہے۔ پٹی کریں گے۔

صہیونی جنرل نے کہا کہ یہ جنگ کئی محاذوں پر ہوگی اور اسرائیل اس کے لیے تیار نہیں ہے۔ جنرل برک نے کہا کہ نئی جنگ ہمیں برسوں پیچھے کر دے گی اور ہمیں ان مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا جن کا سامنا ہم نے پہلے کی جنگوں میں کیا ہے۔

اسی طرح اس صیہونی حکومت کے سابق فوجی جنرل نے کہا کہ اسرائیل مستقبل میں کسی جنگ کے لیے تیار نہیں ہے۔

ادھر ایک امریکی تھنک ٹینک نے بھی لکھا ہے کہ ایران کی جوہری تنصیبات پر حملے کے حوالے سے اسرائیلی دعویٰ بے معنی ہے اور ایرانی فوج کے ساتھ دفاعی نظام کی وجہ سے اسرائیل کو تزویراتی چیلنجز کا سامنا ہے۔

Advertisements
julia rana solicitors london

باخبر حلقوں کا خیال ہے کہ عالمی رائے عامہ اپنی جھوٹی اور کھوکھلی طاقت کو ظاہر کرنے کے لیے ایران کی ایٹمی تنصیبات پر حملے کی بات کرتی ہے لیکن اس کے اصل حامی اسرائیل اور امریکا سب جانتے ہیں کہ ایران کا جوہری تنصیبات پر حملہ کرنا اپنی ہی قبر کھودنے کے مترادف ہے۔ ہاتھ اور اگر اسرائیل یا اس کے آقاؤں میں ایران پر حملہ کرنے کی ہمت ہوتی تو وہ اب تک کر چکے ہوتے لیکن وہ اپنے انجام سے بخوبی واقف ہیں اسی لیے یہ چالیں دے کر اپنے دل کا غصہ نکالیں۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply