• صفحہ اول
  • /
  • کالم
  • /
  • انقلاب اور اے غمِ دل کیا کروں ؟۔۔امجد اسلام امجد

انقلاب اور اے غمِ دل کیا کروں ؟۔۔امجد اسلام امجد

مجاز کی نظم “انقلاب” پہلی نظر میں روسی انقلاب کے اس عمومی عکس کی آئینہ دار لگتی ہے جس میں اس زمانے کے سارے جدید اور بالخصوص تعلیم یافتہ شاعر اپنا حصہ ڈالنا فرض منصبی جانتے تھے لیکن معلومات کی کمی اور جذبات کی بلند آہنگی کے باعث عام طور پر ایسی نظموں میں عجیب سی یکسانیت اور Antispation کی فضا پیدا ہو جاتی تھی جس کا سب سے زیادہ نقصان ان کی تاثیر کو پہنچتا تھا۔

مجاز کا شمار ان معدودے چند شعراء میں ہوتا ہے جنھوں نے اس موضوع کو کورس کے ساتھ ساتھ انفرادی سطح پر بھی بہت عمدہ انداز میں گایا اور بہت سے ایسے پہلوؤں پر بھی بات کی جس سے عام طور پر شعراء بوجوہ چشم پوشی کر جاتے تھے۔ یہ رنگ اگرچہ اس کی شاعری میں بہت زیادہ دیر روشن اور تازہ نہیں رہا لیکن اس کی نظم “انقلاب” کی حد تک یہ یقینا توجہ طلب ہے:

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

پھینک دے اے دوست اب بھی پھینک دے اپنا رباب

آنے ہی والا ہے کوئی دم میں شعورِ انقلاب

بھوک کے مارے ہوئے انسانوں کی فریادوں کے ساتھ

فاقہ مستوں کے جلو میں خانہ بربادوں کے ساتھ

ختم ہو جائے گا یہ سرمایہ داری کا نظام

رنگ لانے کو ہے مزدوروں کا جوشِ انتقام

اس طرح ملے گا زمانہ جنگ کا خونیں سبق

آسماں پر خاک ہو گی، فرش پر رنگ شفق

اور اس رنگ شفق میں بابزاراں آب و تاب

جگمگائے گا وطن کی حریت کا آفتاب

اسی طرح اس کی ایک بہت مشہور نظم “نوجوان خاتون سے” جو عام طور پر اپنے آخری شعر:

ترے ماتھے پہ یہ آنچل بہت ہی خوب ہے لیکن

تو اس آنچل سے اک پرچم بنا لیتی تو اچھا تھا

کے حوال سے جانی جاتی ہے، ایک بالکل مختلف مجاز سے ملواتی ہے۔ اس میں اس “کامریڈ شپ” کی جھلک لہریں لیتی دکھائی دیتی ہے جس کا زیادہ تر ذکر آپ کو روس اور چین کے انقلابات کی مہم کے دوران ہی دکھائی یا سنائی دیتا ہے لیکن اس نظم میں حوصلہ افزائی، تعریف، مشورے اور صورتِ حال پر غور کی جس جہت کی طرف مجاز نے اشارہ کیا ہے وہ اپنی مثال آپ ہے۔

بظاہر ہر شعر کے آخر میں “اچھا تھا” کے حوالے سے ایک بہتر اور زیادہ جامع مشورہ دینے کی کوشش کی گئی ہے مگر اس کی اصل خوب صورتی ہم سفری، دوستی اور ایک مقصدیت کی وہ ڈوری ہے جس نے وقتی طور پر ہی سہی Gender یعنی صنفی حوالے کی اس تقسیم کی بھرپور نفی کی ہے جو اس زمانے میں رائج ہونے کے ساتھ ساتھ بہت حد تک مقبول بھی تھا۔

اب یہ ایک بہت عجیب اور حیران کن بات ہے کہ مجاز کی جس تخلیق نے آج تک اپنی مقبولیت کو قائم رکھا ہے، اس کا براہ راست تعلق اب تک مجاز کے بارے میں لکھی گئی کسی بھی بات سے تقریباً نہ ہونے کے برابر ہے۔ جیسا کہ ہم سب جانتے ہیں مجاز کے زمانۂ طالب علمی میں غیرملکی ادب پاروں، اس دور کی مشہور اور نمایندہ عام نظموں اور تحریکوں کے ساتھ تعارف اور وابستگی کے راستے کھلنا شروع ہو چکے تھے جسکے نتیجے میں عالمی ادب کے بہت سے شاہکاروں کا کلی یا جزوی اور لفظی یا تخلیقی ترجمہ کرنے کا کلچر اپنی جگہ بنا چکا تھا۔

براہ راست تراجم یا کسی موڈ، خیال یا موضوع کو اصل سے بہت حد تک ہٹا کر اپنے انداز میں اس سے استفادہ بھی عام او مقبول ہو رہا تھا جس کا بہت واضح اثر ہمیں علامہ اقبال کے ابتدائی کلام میں بھی نظر آتا ہے۔ کسی شعری خیال یا مضمون کا چربہ، براہ راست ترجمہ یا اس سے متاثر ہو کر اصل سے ملتی جلتی بات کہنے کا رجحان بھی کھل کر سامنے آ رہا تھا لیکن ان میں لائن لگانا یا اصل کے ساتھ اس کے تعلق کی باقاعدگی سے وضاحت کرنا کوئی آسان کام نہیں تھا کہ بقول شخصے اگر نقل اپنے مزاج، انداز، کشش، گہرائی اور تاثر کی وجہ سے اصل سے آگے نکل جائے تو اسے نقل نہیں بلکہ “اصل” کہنا چاہیے۔

اس ساری بحث کا ماحصل مجاز کی مشہور نظم “آوارہ” سے منسوب اور متعلق وہ بحث ہے جس میں اس کے متن اور الحاقات کی وجہ سے اسے خالص تخلیق کے بجائے ترجمے یا اس س ملتی جلتی کسی چیز کا نام دیا گیا۔

غور سے دیکھا جائے تو اس نظم کی ایک ایک سطر امیج اور حوالے میں انیسویں صدی کے یورپ میں فرد کے لیے گھٹتی ہوئی گنجائش، سرمایہ داری کے فروغ، اقدار کی مقدار کے مقابلے میں پسپائی اور فرد آشوب کا نوحہ ایک مخصوص نوع کی بے معنویت میں گم ہوتا دکھائی دے رہا ہے۔

اب اس میں ایک غلام اور پسماندہ معاشرے کے ایک خواب دیکھنے والے فرد کو بھی جمع کر لیجیے تو یہ نظم ادب سے زیادہ خود زندگی کا حوالہ بن جاتی ہے اور ظاہر ہے بے معنویت کوئی ایسا سکہ نہیں جس پر کسی کی مہر لگائی جا سکے۔ اپنے آپ سے، اپنے معاشرے اور تاریخ سے اور اپنے اردگرد گزرتے ہوئے وقت سے بے تعلقی کا یہ گلہ اور اس کے ردعمل میں پیدا ہونے والی مایوسی اور بے چینی انفرادی سطح پر کیسے ایک زندہ حقیقت بن سکتی ہے۔”آوارہ” میں مجاز یہ بھی بتانے اور سمجھانے کی کوشش کر رہا ہے۔

شہر کی رات اور میں ناشاد و ناکارہ پھروں

جگمگاتی جاگتی سڑکوں پہ آوارہ پھروں

غیر کی بستی ہے کب تک دربدر مارا پھروں

اے غم دل کیا کروں اے وحشت دل کیا کروں؟

رات ہنس ہنس کر یہ کہتی ہے کہ مے خانے میں چل

پھر کسی شہنازِ لالہ رخ کے کاشانے میں چل

یہ نہیں ممکن تو پھر اے دوست ویرانے میں چل

اے غم دل کیا کروں اے وحشت دل کیا کروں؟

راستے میں رک کے دم لے لوں مری عادت نہیں

لوٹ کر واپس چلا جاؤں مری فطرت نہیں

اور کوئی ہم نوا مل جائے یہ قسمت نہیں

اے غم دل کیا کروں اے وحشت دل کیا کروں؟

Advertisements
julia rana solicitors london

اور پھر آخری بند میں شاعر کا یہ کہنا کہ “تخت سلطانی کیا، میں سارا قصر سلطان پھونک دوں ” اس ڈسٹرکشن کا عکاس بن جاتاہے جو کسی پر بھی کسی بھی وقت آ سکتی ہے لیکن یہ لکھتے وقت مجاز کو شاید معلوم نہیں تھا کہ وہ اپنی ہی زندگی کا ایک فلیش فارورڈ لکھ رہا ہے۔

  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • julia rana solicitors london
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply