اپنے ہاتھ فقیروں کے سُپرد کرو ۔ ۔محمد خان داؤد

وہ سندھ سے بہت دور بستے ہیں۔ پھر بھی سندھ ان کی جانب تکتا ہے۔وہ شالہ کی پہاڑیوں میں بھی نہیں پر پھر بھی بلوچستان کے پہاڑوں کے سر فخر سے بلند ہیں۔وہ پنجاب میں نہیں پر اب محسوس ہوتا ہے کہ کسان رہنمااشفاق لنگڑیا کا کیس یہی لڑیں گے۔

Advertisements
julia rana solicitors london

اس وقت توخیبرپختون کی شمالی وزیرستان کی میران شاہ نامی بستی میں بستے ہیں۔پر انہیں دیکھ کر پہاڑوں،صحراؤں،سمندروں،نخلستانوں،ویرانوں،کھلیانوں اور پتھروں کا دل بھی دھڑک اُٹھتا ہے
وہ اُمید ہیں،وہ اُمید  سے بھر  کر آئے ہیں۔
بظاہر ان کے ہاتھوں میں کچھ نہیں پر محسوس ہوتا ہے کہ ان کے ہاتھوں میں یدِ بیضا ہے،بظاہر ان کے ہاتھوں میں کچھ نہیں پر محسوس ہوتا ہے کہ وہ اپنے وقت کے مسیح ہیں۔
بظاہر ان کے ہاتھوں میں کچھ نہیں پر محسوس ہوتا ہے کہ وہی یسوع ہیں اور ان کے پاس ہی نجات ہے۔
بظاہر ان کے ہاتھوں میں کچھ نہیں پر جب کتے ان پر بھونکتے ہیں تو محسوس ہوتا ہے کہ یہی قلندر ہیں۔
بظاہر ان کے ہاتھوں میں کچھ نہیں پر ہم ان کے ہاتھوں کو دیکھتے ہیں تو ان کے ہاتھوں میں عوام کا ہاتھ ہے، چاہے وہ عوام میران شاہ کی    ہو، چاہے قلعہ سیف اللہ کی،چاہے شالہ کی، چاہے شہرِ اقتدار کی،چاہیے کراچی کی میلی بستی کی، چاہے لاہور کے   انقلابیوں کی۔
ان کے ہاتھوں میں عوام کا ہاتھ ہے
اور وہ ہاتھ اکیلے نہیں!
ان کے ہاتھوں میں ان عوام کا ہاتھ ہے جو بار بار کٹا ہے
اور بار بار گلابوں کی مانند اُگ آیا ہے
وہ ہاتھ جو ایک دن پھانسی گھاٹ پر پھانسی پر جھول جاتے ہیں
اور دوسرے دن سُرخ گلابوں کی مانند اُگ آتے ہیں
وہ ہاتھ جو مظلوموں کے ہاتھ ہیں
وہ ہاتھوں جو مظلوم ماؤں کے ہاتھ ہیں
وہ ہاتھ جو مظلوم بوڑھے باباؤں کے ہاتھ ہیں
وہ ہاتھ جو مظلوم بیٹوں کے ہاتھ ہیں جن کے وجود تو سنگلاخ سلاخوں کے پیچھے سڑ رہے ہیں پر ان کے ہاتھ ان فقیروں کے ہاتھوں میں ہیں!
وہ ہاتھ جو منتظر ہیں
وہ ہاتھ جو دید کو بے تاب ہیں
وہ ہاتھ جو اب اپنوں سے ملنا چاہتے ہیں
وہ ہاتھ جو اپنوں کو بانہوں میں بھرنا چاہتے ہیں
وہ ہاتھ جو ماؤں سے  بغلگیر ہونا چاہتے ہیں
وہ ہاتھ جو گم ہیں
وہ ہاتھ جو اسیر ہیں
وہ ہاتھ جو غم میں ہیں
وہ ہاتھ جو ان مسافر بہنوں کے ہاتھ ہیں جن کے پیر مشکل سفر میں ہیں
پر ان کے ہاتھ ان فقیروں کے ہاتھوں میں ہیں
وہ ہاتھ جو اپنے ساتھ اپنے گم شدہ بھائیوں کی مٹتی تصویر والی تصاویر لیے سراپا احتجاج ہیں
وہ ہاتھ جو ایک ہاتھ سے گرتا دوپٹہ سنبھالتے  ہیں
دوسرے ہاتھ میں بینر اور تصویر لیے سفر کر رہے  ہیں
اور ان کے ہاتھ ان فقیروں کے ہاتھوں میں ہیں
وہ ہاتھ جوان بیٹوں کے ہاتھ ہیں
وہ ہاتھ جن ہاتھوں کی پشت جل رہی ہے
اس لیے کہ ان ہاتھوں کی پشت پر بابا نے آخری بار یہ کہہ کر چوما  تھا کہ
”میں جلد لوٹ آؤ نگا!“
پھر نہ وہ بابا لوٹا
پھر نہ وہ ہاتھ لوٹے
نہ وہ پیر لوٹے
اور نہ ہی وہ وجود جو کسی کی روح کا چین تھا اور کسی کی آنکھوں کی راحت!
سب پیچھے رہ گیا اور سفر بڑھ گیا اور سفر بھی ایسا بڑھا کہ  اب تک تمام نہیں ہوا۔۔۔
تو ایسے سب ہاتھ جو ہاتھ دردوں کے ما رے ہیں ،جو ہاتھ خود اشک بار رہتے ہیں، جو ہاتھ خود گریہ  و زاری کرتے ہیں،جو ہاتھ خود سینہ کوبی کرتے ہیں،جو ہاتھ آنکھیں رکھتے ہیں،جو ہاتھ احساس رکھتے ہیں،جو ہاتھ دید رکھتے ہیں، جو ہاتھ منتظر ہیں دید کے ،وہ سب ہاتھ ان فقیروں کے ہاتھوں میں ہیں جو اب بس آخری اُمید ہیں۔۔
وہ ہاتھ جو آئینہ ہیں
وہ ہاتھ جو اُمید کے ہاتھ ہیں
وہ ہاتھ جو نئی صبح کے ملن کے ہاتھ ہیں
وہ ہاتھ جو فریب یار نہیں
وہ ہاتھ جو دید یار ہیں
وہ ہاتھ جو پاس نہیں
پر پھر بھی ان ہاتھوں میں اپنی سی قربت ہے
وہ ہاتھ جو منزل ہیں
وہ ہاتھ جو داد رسی ہیں
وہ ہاتھ جو گیلی آنکھوں سے  اشکوں کو صاف کرتے ہیں
وہ ہاتھ جو بوڑھی ماؤں کی تھکی ماندی جوتیاں درست کرتے ہیں
وہ ہاتھ جو بہنوں کے سروں پہ سے گرتی چادریں ٹھیک کرتے ہیں
وہ ہاتھ جو میران شاہ میں ہیں
پھر بھی محسوس ہوتا ہے وہ ہاتھ میرے من میں ہیں!
”تماشا کہ اے محوِ آئینہ داری “
وہ ہاتھ دردیلے  دل کا آئینہ ہیں!
وہ جو اس ملک میں کسی کو بھی نظر نہیں آتا ،وہ انہیں نظر آتا ہے۔وہ جو دردوں کے بیچ پلے بڑھے اور اب خود چاہتے ہیں کہ مزید کوئی دردوں کا کاروبار نہ کرے۔
وہ جو بار بار بارودی سرنگوں سے بچتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ اب کسی کا پیر بارودی  سرنگ پر نہ پڑے،
وہ جن کی وردی والے بار بار توہین کرتے ہیں اور یہ چاہتے ہیں کہ اب کسی کی مزید توہین نہ ہو
وہ جو بار بار صوبہ بدر کیے جا تے ہیں پر اب یہ چاہتے ہیں کہ اب کوئی صوبہ بدر نہ کیا جائے
وہ جن کے گریبان پکڑے جا تے ہیں
وہ جن کو گالیاں پڑتی ہیں
وہ جنہیں غدار کہا جاتا ہے
وہ جو فقیر ہیں اور کتوں کو ایک آنکھ نہیں بھا تے
وہ جو اُمید کا ٹمٹماتا دِیا  ہیں
وہ دِیا آندھیوں کی لپیٹ میں ہے
اور اس دِیے  کو وہ ہزاروں ہاتھ بجھانے سے بچا سکتے ہیں جو عوام کے ہاتھ ہیں،
اگر  ہم چاہتے ہیں کہ اب کوئی گولی کسی کے سینے کو پار نہ کرے
کوئی ماں کسی سے اپنے گم شدہ بیٹے کا پتا نہ پوچھتی پھرے
اب کوئی بیٹی بِن بابا کے جوانی کی دہلیز کو نہ پہنچے
اب کوئی اشافق لنگڑیا بس اس لیے قتل نہ ہو کہ وہ اپنا حق چاہتا تھا اور اس کی بیٹی بابا کی میت پر ماتم کرتی نہ رہ جائے
تو آئیں اپنے ہاتھ ان فقیروں کے ہاتھوں میں دے دیں
پر یاد رکھیں فقیروں کی  راہ میں کتے بھونکتے ہیں!

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors london
  • julia rana solicitors

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply