پاکستان میں مستقبل کی تعلیمی ضروریات۔۔سفیر رشید

تعلیم ایک معاشرے اور ایک ریاست کے فرد کے ساتھ ساتھ اجتماعی ترقی کے لئے سب سے اہم معیار ہے۔اور ابتدائی تعلیم ایک ایسی بنیاد ہے جس پر انسانی ترقی کی پوری عمارت کھڑی ہے ۔ یہ بچوں کو نئی دنیا کے لئے بنیادی بصیرت فراہم کرتی ہے اور انہیں زندگی کے مختلف شعبوں میں آگے بڑھانے کے لئے لازمی اوزار فراہم کرتی ہے ۔ بدقسمتی سے، پاکستان میں بنیادی تعلیمی نظام کی حالت بہت خراب ہے پاکستانی تعلیمی نظام اس وقت ایک کمزور مرحلے سے گزر رہا ہے اور تعلیمی نتائج فراہم کرنے سے قاصر ہے۔ مختلف سکولوں میں بچوں کو ملنے والی تعلیم کے میعاراور فراہمی میں فرق بہت واضع ہے جس کے باعث طلبہ ایک جیسی تعلیم سے قاصر ہیں اور زندگی کے شعبوں میں تفاوت کا شکار رہتے ہیں۔

کہا جاتا ہے کہ کسی بھی معاشرے کی ترقی تعلیم کے معیار پر منحصر ہوتی ہے۔ اگر آپ کسی بھی ملک کا مستقبل دیکھنا چاہتے ہیں تو آپ کو اس ملک کے تعلیمی نظام کو دیکھنا ہوگا۔ تعلیم کے معیار کو اس وقت دنیا میں خاص اہمیت دی جا رہی ہے۔

tripako tours pakistan

دنیا کے ترقی یافتہ ممالک بھی اپنی تعلیم کے معیار کو مزید بہتر بنانے کے لیے کوشاں ہیں۔ اساتذہ کو اس حوالے سے بہترین تربیت دی جاتی ہے۔ اگر طالب علم کو قوم کا مستقبل کہا جانا ہے تو اساتذہ کی تربیت بہت ضروری ہے تاکہ وہ قوم کے مستقبل کے معماروں کو سمجھ اور دور اندیشی کے ساتھ بہترین طریقے سے تربیت دے سکیں۔ مختلف قسم کے اساتذہ کے تربیتی پروگرام اور کیمپس بیرون ملک منعقد کیے جاتے ہیں تاکہ انہیں بہترین طریقے سے تربیت دی جا سکے۔

پاکستان میں تعلیم میں کمی کی بنیادی وجہ فنڈز کی کمی اور کرپشن ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ پاکستان اس وقت معاشی بحران سے دوچار ہے لیکن حکمرانوں کو چاہیے کہ وہ نظام تعلیم کو بہتر بنانے کے لیے اصلاحات لائیں۔ معاشی بحران کی وجہ سے غربت نے ملک کو سخت متاثر کیا ہے ، یہی وجہ ہے کہ والدین اپنے بچوں کو سکول بھیجنے کے بجائے دکانوں وغیرہ میں کام کرنے کی طرف مائل ہو رہے ہیں ، یقیناًہر والدین چاہتے ہیں کہ ان کے بچے تعلیم یافتہ ہوں اور اچھی تعلیم حاصل کریں۔ زندگی  میں غریبوں کے خواب صرف خواب ہوتے ہیں۔

حکومت غریب بچوں کو ماہانہ وظیفہ فراہم کرے۔ اور وہ والدین جو غربت کی وجہ سے اپنے بچوں کو سکول نہیں بھیج سکتے ، ان کی مدد اور آسان قرضوں کی فراہمی کے لیے ایک خصوصی پروگرام شروع کیا جائے تاکہ وہ اپنا کاروبار شروع کر سکیں۔ پاکستان میں بہت سے دیہات اور چھوٹے شہر ہیں جہاں سکول نہیں ہیں اور اگر ہیں بھی تو وہ اتنے خستہ حال ہیں کہ وہ تعلیم فراہم کرنے کے قابل نہیں ہیں۔

حکومت لڑکیوں کی تعلیم کے بارے میں آگاہی فراہم کرے اور لڑکیوں کے لیے الگ سکول اور کالج قائم کرے۔حکومت کو چاہیے کہ ایسے شہروں میں نئے سکول بنائے خصوصاً دیہی علاقوں میں۔

Advertisements
merkit.pk

کہا جاتا ہے کہ ایک پڑھی لکھی عورت ایک تعلیم یافتہ نسل کی پرورش کرتی ہے۔ پاکستان میں تعلیم کی کمی کی وجہ سے لوگ لڑکیوں کو سکول نہیں بھیجتے ، لیکن اب یہ رواج کسی نہ کسی طرح تبدیل ہو رہا ہے۔ حکومت لڑکیوں کی تعلیم کے بارے میں آگاہی فراہم کرے اور لڑکیوں کے لیے علیحدہ سکول اور کالج قائم کرے۔ پھر تعلیمی نظام میں کرپشن ہے۔ سرکاری سکولوں میں بہت سے بھوت اساتذہ ہیں جو کبھی سکول نہیں آتے بلکہ تنخواہیں وصول کرتے ہیں۔ ایسے لوگوں کی نشاندہی کی جائے اور انہیں سزا دی جائے۔ آخر میں ، ہم واحد قومی نصاب کے بارے میں بات کریں گے جو کہ موجودہ حکومت کے  طبقاتی فرق کو ختم کرنے کی بہترین کوشش ہے۔ اس سے امیر اور غریب کا بچہ یکساں نصاب اپنائے گا اور غریبوں میں احساس کمتری کو کم کرے گا۔ لیکن نجی سکول مافیا حکومت کے اس بہترین اقدام کے خلاف اٹل ہے۔ امید ہے کہ حکومت سنگل نیشنل نصاب کو نافذ کرنے میں کامیاب ہوگی۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply