پاکستانی خواتین ہماری لائف لائن ہیں،چیف جسٹس

چیف جسٹس گلزار احمد نے بریسٹ کینسر اسپتال میں پنک ربن مہم کا افتتاح کردیا

بریسٹ کینسر اسپتال انتظامیہ کی جانب سے چیف جسٹس کو پراجیکٹ پر بریفنگ دی گئی،چیف جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ خواتین صحت مند نہیں تو معاشرہ بھی صحت مند نہیں، ہرسال 40 ہزار خواتین کی موت آسان بات نہیں، خواتین کے بغیر معاشرہ مکمل نہیں ،خواتین کوہروقت اپنا معائنہ کرانا چاہیے،کینسرکی تشخیص بروقت ہوگی تو علاج ممکن ہوگی ،پنگ ربن مہم سے لوگوں میں آگاہی پیدا ہوئی،آئین میں خواتین کو حقوق حاصل ہیں،خواتین کو انکے حقوق ملنا چاہیے،پاکستان میں خواتین ہماری لائف لائن ہیں، خواتین کے علاج معالجے کے لیے اسپتال بننا چاہیے،

FaceLore Pakistan Social Media Site
پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

ہرسال تقریباً40 ہزار کے قریب خواتین چھاتی کے سرطان کا شکار ہوتی ہیں پاکستان میں ہر 8 میں سے ہر ایک خاتون بریسٹ کینسر کا شکار ہوسکتی ہے چھاتی کے کینسر کی بروقت تشخیص سے ہی اس کا مکمل علاج ممکن ہے، پمز میں بریسٹ کینسر سکریننگ کے حوالے سے سنٹر بنایا گیا ہے۔ ہر سال اکتوبر میں دنیا بھر میں بریسٹ کینسر سےبچاﺅ کے حوالے سے شعور اجاگر کرنے کے لئے مہم چلائی جاتی ہے تاکہ اگر کسی کو چھاتی کا کینسر ہو تو وہ بروقت علاج کرا سکے، یہ قابل علاج مرض ہے اور بروقت تشخیص سے اس کا علاج ممکن ہے۔

موجودہ دور میں چھاتی کا سرطان ایک عام بیماری بنتی جا رہی ہے یہ بیماری نہ صرف عورتوں بلکہ مردوں کو بھی لاحق ہو رہی ہے لیکن مردوں میں اس بیماری کی شرح بہت کم ہے پاکستان میں ہر سال نوے ہزار خواتین اس بیماری میں مبتلا ہو جاتی ہیں یہ ایک قبل علاج مرض ہے اگر جلدی تشخیص کر لیا جائے تو اس کا علاج ممکن ہے نارتھ امریکہ میں یہ ایک عم بیماری ہے ایک سروے رپورٹ کے مطابق 1990 کی تشخیص کے دوران 2 ملین عورتیں نارتھ امریکہ میں بریسٹ کینسر میں مبتلا ہیں امریکہ میں ہر سال 41 ہزار خواتین اس بیماری سے مر جاتی ہیں یہ بیماری 40 سے 60 سال کی عمر کی خواتین میں عام ہے اگر کسی کی دادی نانی یا ماں بہن کو یہ بیماری تھی ایسی عورت کو اس بیماری کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے

اس بیماری میں چھاتی میں گلٹی یا رسولی کا بن جانا یہ گلٹی یا رسولی سائز میں بڑھ جاتی ہے چھاتی میں تکلیف ہوتی ہے اور اس کی جڑیں چھاتی میں پھیل بھی سکتی ہیں چھاتی کی ساخت تبدیل ہو سکتی ہے چھاتی کے اندر باہر یا نیچے زخم کا بن جانا جو کہ بڑھ کر کینسر کی شکل اختیار کر لیتا ہے مریض اور مرض کی نوعیت کے مطابق یہ علامات مختلف بھی ہو سکتی ہیں

Advertisements
julia rana solicitors

شروع شروع میں اس مرض کی کوئی خاص علامت سامنے نہیں آتی گلٹی کی تشخیص بھی اسی وقت ہوتی ہے جب اسکا سائز مٹر کے دانے کے برابر ہو جاتا ہے شروع شروع میں یہ گلٹی مریض خود شناخت نہیں کر سکتا لیکن اس کی ٹیسٹ یا چھاتی کے ایکسرے خاص طور پرمیموگرام سے شناخت ہوتی ہے کئی دفعہ سوجن اور شکل اور رنگت میں تبدیلی واقع ہوتی ہے بریسٹ کینسر میں میلگننیٹ ٹیومر جو کہ ڈ این اے کو نقصان پہنچاتا ہے یہ بریسٹ کینسر کے اندر پھیل کر دوسرے حصوں کو بھی متاثر کر سکتا ہے اس کا تعلق پرائمری لمپ سےتوڑنے کا باعث ہے بریسٹ کو ڈکٹس اور لوبولز میں تقسیم کیا جاتا ہے بریسٹ کینسر کی سب سے عام شکل عموما ڈکٹس میں نمو پاتی ہے جب کہ لوبولز میں بننے والا بریسٹ کینسر اتنا عام نہیں ہے بریسٹ کینسر جسم کے دوسرے حصوں مثلا ہڈیوں اور جگر وغیرہ میں ہو سکتا ہے عورتیں روزانہ خود کے لیے 5 منٹ نکالیں اور چیک کریں کہیں بغل یا چھاتی میں گلٹی تو نہیں یا بازو پر سوج تو نہیں کیونکہ اگر اگر سوج بھی ہوتو یہ بھی پریشانی کی علامت ہے اس کی لازمی چیک کروائیں

  • julia rana solicitors london
  • merkit.pk
  • julia rana solicitors
  • FaceLore Pakistan Social Media Site
    پاکستان کی بہترین سوشل میڈیا سائٹ: فیس لور www.facelore.com

خبریں
مکالمہ پر لگنے والی خبریں دیگر زرائع سے لی جاتی ہیں اور مکمل غیرجانبداری سے شائع کی جاتی ہیں۔ کسی خبر کی غلطی کی نشاندہی فورا ایڈیٹر سے کیجئے

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply