مرتضیٰ بھٹو کا قاتل کون؟۔۔عامر حسینی

مرتضٰی بھٹو کے قریبی ساتھی خواجہ آصف جاوید بٹ نے اپنی کتاب “کئی سولیاں سر راہ تھیں” میں لکھا ہے کہ فاطمہ بھٹو نے اپنی کتاب میں میر مرتضیٰ بھٹو کی زندگی سے وابستہ کئی واقعات بارے جو باتیں لکھی ہیں وہ حقائق کے منافی ہیں اور وہ اس کا الزام میر مرتضیٰ بھٹو کے ساتھی سہیل سیٹھی کو دیتے ہیں –

آصف بٹ کے خیال میں سلام اللہ ٹیپو، ارشد شیرازی اور ناصر جمال تینوں پی ایس ایف کے کارکن اور دل و جان سے بھٹو کے جانثار تھے اور اُن کو طیارہ اغوا کا ٹاسک میر مرتضٰی بھٹو نے ہی دیا تھا – میجر طارق رحیم کو الذوالفقار نے ہی غدار قرار دیا یہ تنظیم کا فیصلہ تھا ناکہ سلام اللہ ٹیپو کا ذاتی فیصلہ

tripako tours pakistan

آصف بٹ نے اپنی کتاب میں میر مرتضٰی بھٹو پہ الزام عائد کیا کہ انھوں نے سلام اللہ ٹیپو، ارشد شیرازی اور جمال ناصر کو طیارہ اغواء کے لیے استعمال کیا اور بعد ازاں اُن کو مزید غیر مفید جان کر چھوڑ دیا –

ارشد شیرازی اور جمال ناصر جو دونوں اب بھی با حیات ہیں اور جلا وطنی کاٹ رہے ہیں وہ بھی میر مرتضٰی بھٹو کو الزام دیتے ہیں کہ انھوں نے اُن کو استعمال کیا- الذوالفقار کو وہ بے کار مہم جوئی قرار دیتے ہیں –

ایم آر ڈی اور پی پی پی کی اُس وقت کی قیادت طیارہ اغوا کیس کو ضیاء الحق کی سازش قرار دیتی رہی، آصف بٹ سمیت میر مرتضٰی بھٹو کے ساتھ رہے الذولفقار میں شامل ہونے والے اسے سازش نہیں کہتے –سہیل سیٹھی اسے سلام اللہ ٹیپو، ارشد شیرازی اور جمال ناصر کا اپنا فیصلہ قرار دیتے ہیں

راجہ انور، آصف بٹ، ارشد اعوان، رانا فاروق اور دیگر اسے الذولفقار کا تنظیمی فیصلہ کہتے ہیں جسے میر مرتضیٰ اور شاہنواز بھٹو کی منظوری حاصل تھی –
آصف بٹ کا کہنا ہے کہ میر مرتضیٰ بھٹو کا قتل “سلیمانی ٹوپی پہنے نہ نظر آنے والی مخلوق” کی کارستانی تھی جس نے اُس وقت پولیس کو لیڈ کرنے والے شاہد حیات کو پیچھے سے گولی ماری تھی –
آصف بٹ نے اپنی کتاب میں میر مرتضٰی بھٹو کے بارے میں اور بہت کچھ لکھا ہے اور اُن کے بے نظیر بھٹو اور آصف علی زرداری سے ہوئے اختلافات پر بھی تفصیل سے بات کی ہے لیکن ایک بات وہ بہت صاف صاف لکھتے ہیں کہ فاطمہ بھٹو کا یہ خیال غلط ہے کہ اُن کے والد کے قتل میں بے نظیر بھٹو، آصف زرداری، چیف منسٹر عبداللہ شاہ یا اُس وقت کی کراچی پولیس کے افسران کا کوئی ہاتھ تھا-

Advertisements
merkit.pk

آصف جاوید بٹ کہتے ہیں کہ سلام اللہ ٹیپو کے دادا انگریز سرکار کے باغی تھے اور وہی باغی روح سلام اللہ ٹیپو میں بھی موجود تھی –

  • merkit.pk
  • merkit.pk

عامر حسینی
عامر حسینی قلم کو علم بنا کر قافلہ حسینیت کا حصہ ہیں۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply