تھوکنا چاہتا ہوں(ایک غصیلی نظم)۔۔ڈاکتر ستیہ پال آنند

مری چشم بینا سے پٹّی تو کھولو
مجھے دیکھنے دو
یہ کیا ہو رہا ہے؟

یہاں جنگ کی آگ میں جلتے ملکوں سے
بھاگے ہوئے مرد و زن، صد ہزاروں
سمندر کی بے رحم لہروں میں غرق ِ اجل ہو رہے ہیں۔

tripako tours pakistan

یہاں لاکھوں افراد بمبار گِدّھوں سے بچنے کی خاطر
ادھر سے اُدھر بھاگتے پھر رہے ہیں۔

یہاں چار سڑکوں کے سنگم پہ
بجلی کے کھمبوں سے لتکے ہوئے مردہ تن
اپنی بے نور ٓآنکھوں سے ہر آتے جاتے ہوئے مرد و زن کو
یہ تنبیہہ کرتے ہوئے جھولتے ہیں
ـ بچو  ان درندوں سے، گر تم میں ہمت ہے
بھاگو یہاں سے

یہاں بے زباں باقیات زمانہ
ہمارے پر اسرار ماضی کی سب بے بدل یادگاریں
زمیں بوس ملبے کے ڈھیروں میں اوندھی پڑی ہیں۔۔

یہ کیا ہو رہا ہے؟

یہاں چین سے آمدہ وائرس نے
ہر اک سمت دنیا میں لاکھوں ، کروڑوں
بڑے بوڑھوں، بچوں ، جواں مرد و زن کو
فقط دو ہی برسوں میں مرگ آشنا کر دیاہے۔

Advertisements
merkit.pk

مجھے اب نہ روکو
کہ یہ نظم لکھ کر
میں لقوہ زدہ وقت کے ٹیڑھے منہ پر
بہت زور سے تھوکنا چاہتا ہوں!

  • merkit.pk
  • merkit.pk

ستیہ پال آنند
شاعر، مصنف اور دھرتی کا سچا بیٹا

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply