محمد نصیرزندہ کی رثائی رباعیات

قطرہ قطرہ ہُوا پیادہ ترا غم
دریا کا سفر بحر کا جادہ ترا غم
پُر اشک ہے آبگینہء چشم ِ حباب
کم ہے ظرف ِ سبو زیادہ ترا غم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ذرے تھے قمرضیا کشی ایسی تھی
ششدر تھا فلک شمس گری ایسی تھی
تھرا گیا آفتاب ِ محشر کا چراغ
نیزے کی انی پہ روشنی ایسی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آئینہء خواب ناک ہو جاتی ہے
ایسی تصویر ِ خاک ہو جاتی ہے
اللہ اللہ کربلا ہے وہ مقام
یہ موت جہاں ہلاک ہو جاتی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خود تک سفر ِ انا کا پھیر آتا ہے
اس راہ میں انتہا کا پھیر آتا ہے
یہ موت و حیات عشق کے ہیں دو گام
اور عشق میں کربلا کا پھیر آتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سورج کا لہو شفق کا لشکارا ہے
شب خون افق سے شام نے مارا ہے
یہ زیست کا پیرہن ہوا ہے تبدیل
مٹی کا بشر موت سے کب ہارا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سامان کِیا بے سرو سامانی کو
رکھا ٹھوکر میں تاج ِ سلطانی کو
زینب نے حرف کو دی خنجر کی زباں
کم زور کیا ز ور ِ ستم رانی کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مزدور کو جورِکربلا دیتا ہے
افلاس ضمیر کو سزا دیتا ہے
سرمائے کی تلوار میں پیاسا ہے یزید
یہ دور حسین ؑ کو صدا دیتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دریا کو بے کرانی دیتا ہے حسینؑ
قطرے کو جاودانی دیتا ہے حسینؑ
گرداب شکن ہے موجِ دجلہ کا خروش
موج ِ دجلہ کو پانی دیتا ہے حسینؑ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملک ِ ارم آباد کا سلطاں ہے حسینؑ
ہے فخر ِ زماں رشک ِ سلیماں ہے حسینؑ
قدرت کو ہے انسان کی عظمت پر ناز
دستار ِ سر ِ عظمت ِ انساں ہے حسینؑ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قلزم اذن ِ گہر فشانی مانگے
موجِ دریا تاب ِ روانی مانگے
مقتل میں رقص ِ آرزو جاری ہے
موت اصغر ِ بے شِیر سے پانی مانگے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شب نور کا در ہوتی ہے جس سے وہ حسین ؑ
وا چشم ِ سحر ہوتی ہے جس سے وہ حسینؑ
مغرور زمانے اسے دیتے ہیں خراج
تکمیل ِ بشر ہوتی ہے جس سے وہ حسینؑ
محمد نصیر زندہ

  • merkit.pk
  • merkit.pk

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply