کسی سے بدلہ نہیں لیا جائے گا: طالبان

طالبان ترجمان خالد سہیل نے بی بی سی کو انٹریو دیتے ہوے کہا ہے کہ افغان عوام طالبان کے ہاتھوں میں محفوط ہیں اور کسی کو گھبرانے کی ضرورت نہیں۔

خالد سہیل نے بی بی سی کو فون انٹریو دیتے ہوے کہا کہ ہم کابل کے دروازوں پہ موجود ہیں اور کسی قسم کی لڑائی نہیں چاہتے۔ ہم حکومت کے ساتھ پرامن انتقال اقتدار کیلئیے مذاکرات کر رہے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ کسی کو افغانستان چھوڑنے کی ضرورت نہیں۔ ہم یوین دہانی کراتے ہیں کہ کسی سے بدلہ نہیں لیا جائے گا اور ہم ایک نئے باب کا آغاز کرنا چاہتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ کابل میں موجود غیر ملکی خود کو محفوظ تصور کریں۔ مزید ازاں جو لوگ بین الاقوامی اداروں کے ساتھ کام کر رہے ہیں وہ اپنا کام جاری رکھیں۔

tripako tours pakistan

ترجمان نے مزید کہا کہ اس سے قبل ہم اقوام متحدہ سے جنگ کی حالت میں تھے اور اب ہم ان سے تعاون کے باب کا آغاز کرنا چاہتے ہیں۔

Advertisements
merkit.pk

انھھوں نے کہا کہ رشید دوستم سمیت جو بھی طالبان اقتدار کو قبول کرے گا وہ واپس آ سکتا ہے اور ہمارے نظام کا حصہ بن سکتا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اسلامی نظام فقط طالبان کا نہیں بلکہ تمام امت مسلمہ کا مشترکہ ہے اور یہی نظام افغانستان کا مستقبل ہو گا۔

  • merkit.pk
  • merkit.pk

مکالمہ
مباحثوں، الزامات و دشنام، نفرت اور دوری کے اس ماحول میں ضرورت ہے کہ ہم ایک دوسرے سے بات کریں، ایک دوسرے کی سنیں، سمجھنے کی کوشش کریں، اختلاف کریں مگر احترام سے۔ بس اسی خواہش کا نام ”مکالمہ“ ہے۔

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

Leave a Reply